Saturday , November 18 2017
Home / شہر کی خبریں / اراضیات پر ناجائز قابضین کے خلاف کارروائی میں شدت

اراضیات پر ناجائز قابضین کے خلاف کارروائی میں شدت

15 افراد گرفتار، سرکاری افراد بھی شامل، رچہ کنڈہ پولیس کا اقدام
حیدرآباد ۔ 3 ڈسمبر (سیاست نیوز) رچہ کنڈہ پولیس نے اراضیات پر ناجائز قبضوں کے خلاف اپنی کارروائی میں شدت پیدا کردی ہے۔ ناجائز طریقہ سے اراضیات کو بڑھانے والے لینڈگرابرس اور اس کا ساتھ دینے والے سرکاری افراد کو بھی قانونی کارروائی کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ ایک ایسی کارروائی کے دوران پولیس راچہ کنڈہ نے 15 افراد کو گرفتار کرلیا جنہوں نے فرضی دستاویزات جعلی اسٹامپس اور نقلی سرکاری ریکارڈز کے ذریعہ ایک این آر آئی کی اراضی کو ہڑپنے کی کوشش کی۔ راچہ کنڈہ کمشنر پولیس مسٹر مہیش مرلی دھر بھگوت نے آج ایک پریس کانفرنس کے دوران یہ بات بتائی اور انہوں نے گرفتار افراد کو میڈیا کے روبرو پیش آیا۔ انہوں نے بتایا کہ چوٹپل پولیس اور راچہ کنٹہ اسپیشل آپریشن ٹیم نے مشترکہ کارروائی میں اس خطرناک ٹولی کو بے نقاب کرتے ہوئے کے مہیش سبایا، بالاچاری، یادگیری، شنکر، جتیندر کمار بنڈاری، بسواراج، نرسنگ، پنٹایا گوڑ، وینو گوپال چاری، سرینواس، لکشمن، ملاریڈی، پنگل ریڈی اور پرشانت کو گرفتار کرلیا جبکہ ارویند ریڈی جس نے اراضی کو اپنے نام رجسٹرڈ کروایا ہے۔ ستیم سابق ریونیو ملازم جس نے خالی پاس بک سربراہ کئے تھے، شراون جس نے اے جی بی اے تیارکیا تھا کنڈل ریڈی اور انیل کمار جنہوں نے رجسٹریشن میں گواہ کا رول ادا کیا تھا، پولیس ان کی تلاش میں مصروف ہے۔ راچہ کنڈہ کمشنر نے بتایا کہ اس اراضی کے رجسٹریشن میں درکار ضروری دستاویزات کی جانچ اور ان کی تحقیقات میں سب رجسٹرار کو بھی قصوروار پایا گیا۔ سب رجسٹرار کو اراضی رجسٹریشن کیلئے 70 لاکھ اور دستاویزات تیار کرنے والے شخص کو 30 لاکھ روپئے دیئے گئے تھے۔ انہوں نے بتایا کہ دیپک کانت ویاس جو امریکہ میں مقیم ہے، جس نے ان ہی اراضی کو گذشتہ 15 سال سے نہیں دیکھا تھا اور اس اراضی معاملت کی اصل سرغنہ رئیل اسٹیٹ تاجر کے مہیش نگرانی کررہا تھا۔ پولیس نے اس ٹولی کو بے نقاب کردیا ہے اور مفرور افراد کی تلاش میں مصروف تحقیقات ہے۔

TOPPOPULARRECENT