Monday , November 20 2017
Home / شہر کی خبریں / اربن ہیلت سنٹرس کی خستہ حالی سے خانگی ڈاکٹرس کی من مانی

اربن ہیلت سنٹرس کی خستہ حالی سے خانگی ڈاکٹرس کی من مانی

سنٹرس کو بہتر بنانے حکومت کے سخت گیر اقدامات کی ضرورت
حیدرآباد۔9۔جنوری (سیاست نیوز) شہر کو عالمی معیار کے شہر میں تبدیل کرنے کے سرکاری ارادے کی قدر کی جانی چاہئے لیکن حکومت کی جانب سے حیدرآباد کو عالمی معیار کے شہر میں تبدیل کرنے کیلئے اعلان کے ساتھ ساتھ ضروریات پر بھی توجہ مرکوز کرنی ہوگی کیونکہ صرف وائی فائی خدمات کی فراہمی سے شہر عالمی معیار کا نہیں ہوگا بلکہ شہر میں جب تک عالمی معیار کی بنیادی سہولتیں فراہم نہیں کی جاتیں اس وقت تک شہر حیدرآباد کو عالمی معیار کا شہر قرار نہیں دیا جاسکتا۔ شہر کو مکمل وائی فائی سے مربوط کئے جانے کے بعد حیدرآباد عالمی برادری سے مربوط ہو سکتا ہے لیکن معیار میں تبدیلی نہیں کہا جا سکتا۔ دونوں شہروں میں شہریوں کومعیاری بنیادی سہولتوں کی فراہمی میں اب تک مکمل کامیابی حاصل نہیں ہوئی ہے۔ شہریوں کے لئے بنیادی سہولت وائی فائی نہیں بلکہ بہتر ماحولیات‘ معیاری طبی خدمات‘ شفاف سڑکیں اور ملازمتوں کی فراہمی ہوتی ہیں تاہم حیدرآباد بنیادی معیاری طبی خدمات کے معاملہ میں کافی نظر انداز کیا جاتا رہا ہے اور حکومت کی جانب سے چلائے جانے والے اربن ہیلت پوسٹ مراکز میں عملہ کی قلت نے ان مراکز کو کھنڈروں میں تبدیل کرنا شروع کردیا ہے اور جو مریض ان اربن ہیلت مراکز سے رجوع ہو رہے ہیں انہیں کئی مرتبہ ڈاکٹر کے بجائے دیگر طبی عملہ سے تشخیص کروانی پڑتی ہے کیونکہ ان مراکز میں ڈاکٹرس کا موجود رہنا کسی عجوبہ سے کم نہیں ہے۔ جی ایچ ایم سی حدود میں جو اربن ہیلت مراکز خدمات انجام دے رہے ہیں ان کی صورتحال کے متعلق خود عہدیداروں کا کہنا ہے کہ ان مراکز کی حالت کو سدھارنے کیلئے سخت گیر اقدامات کی ضرورت ہے۔ حیدرآباد میں شہری علاقوں میں موجود اربن ہیلت مراکز کی حالت انتہائی خستہ ہوتی جا رہی ہے جبکہ شہر کے نواحی علاقوں میں خدمات انجام دینے والے مراکز کی حالت میں بتدریج بہتری ریکارڈ کی جا رہی ہے ۔ حکومت کی جانب سے جی ایچ ایم سی کے توسط سے سلم علاقوںمیں قائم کئے جانے والے ان مراکز کی خدمات کو بہتر بنانے کیلئے ضروری ہے کہ ان مراکز میں جز وقتی عملہ کی خدمات کے بجائے مستقل عملہ کی خدمات حاصل کی جائیں اور ضروری ادویات کی موجودگی کو یقینی بنایا جائے تاکہ 150کے قریب ان اربن ہیلت مراکز سے عوام مستفید ہو سکیں اور انہیں ان مراکز سے مایوسی کا سامنا نہ کرنا پڑے۔ سلم علاقوں میں ان مراکز کی خدمات بہترنہ بنائے جانے کے سبب دونوں شہروں کے سلم علاقوں میں فرضی ڈاکٹرس کے کلینک من مانی علاج کرتے ہوئے عوام کو دھوکہ دے رہے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT