Monday , May 21 2018
Home / شہر کی خبریں / اردو کمپیوٹر سنٹرس میں آلات کی تنصیب میں بے قاعدگی پر رپورٹ کی طلبی

اردو کمپیوٹر سنٹرس میں آلات کی تنصیب میں بے قاعدگی پر رپورٹ کی طلبی

ایم ڈی اقلیتی کارپوریشن کی سکریٹری اقلیتی بہبود سے وضاحت، چیف منسٹر دفتر کو شکایت وصولی پر چوکس
حیدرآباد۔/9ڈسمبر، ( سیاست نیوز) اقلیتی فینانس کارپوریشن کے تحت اردو کمپیوٹر سنٹرس میں عصری کمپیوٹرس اور دیگر آلات کی تنصیب کے سلسلہ میں طلب کئے گئے ٹنڈرس میں مبینہ بے قاعدگیوں پر چیف منسٹر کے دفتر نے رپورٹ طلب کی ہے۔ اردو اکیڈیمی کے تحت چلنے والے کمپیوٹر سنٹرس اور لائبریریز کو اقلیتی فینانس کارپوریشن کے تحت کیا گیا ہے اور حکومت نے کمپیوٹر سنٹرس کو کارکرد اور عصری کورسیس سے آراستہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ ہر کمپیوٹر سنٹر میں عصری کمپیوٹرس اور دیگر ضروری سہولتوں اور مشنری کی سربراہی کے سلسلہ میں ٹنڈرس طلب کئے گئے تھے۔ بتایا جاتا ہے کہ منیجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن بی شفیع اللہ نے شفافیت کے ساتھ ٹنڈر کی کشادگی کے سلسلہ میں کمیٹی تشکیل دی۔ حکومت کے قواعد کے مطابق کمیٹی میں کارپوریشن سے ہٹ کر اداروں کے عہدیداروں کو شامل کیا گیا۔ ٹنڈر کشادگی کے موقع پر بتایا جاتا ہے کہ ایک ٹنڈر گذار نے سیاسی دباؤ کا استعمال کرتے ہوئے اسے الاٹ کرنے پر اصرار کیا لیکن کمیٹی نے سب سے کم لاگت کا پیشکش کرنے والے ٹنڈرگذار کے حق میں فیصلہ لیا۔ اس مرحلہ کی تکمیل کے بعد صدرنشین کارپوریشن سید اکبر حسین اور دوسروں نے چیف منسٹر کے دفتر سے ٹنڈر معاملہ میں بے قاعدگیوں کی شکایت کی۔ حکومت کے مشیر اے کے خاں سے بھی شکایت کی گئی۔ بتایا جاتا ہے کہ اے کے خاں اور سکریٹری اقلیتی بہبود عمر جلیل نے تفصیلات حاصل کرتے ہوئے ٹنڈر کی منظوری کے طریقہ کار پر اطمینان کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ مکمل شفافیت کے ساتھ یہ کام انجام دیا گیا ہے۔ اسی دوران چیف منسٹر کے دفتر سے اس معاملہ میں رپورٹ طلب کئے جانے کے بعد منیجنگ ڈائرکٹر کارپوریشن بی شفیع اللہ نے چیف منسٹر کے سکریٹری اور اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں سے ملاقات کرتے ہوئے اپنے موقف کی وضاحت کی۔ انہوں نے کارپوریشن کے کام کاج میں بیجا مداخلت پر ناراضگی جتائی اور محکمہ اقلیتی بہبود میں خدمات جاری رکھنے کے بجائے دوبارہ متعلقہ محکمہ جنگلات کو واپسی میں دلچسپی ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ موجودہ حالات میں وہ کام نہیں کرسکتے کیونکہ ہر معاملہ میں قواعد کی خلاف ورزی کرنے کیلئے دباؤ بنایا جارہا ہے۔ چیف منسٹر کے دفتر کے عہدیداروں اور اقلیتی بہبود کے مشیر اور سکریٹری نے شفیع اللہ کی خدمات پر مکمل اعتماد کا اظہار کیا اور انہیں اس عہدہ پر بدستور قائم رہنے کی صلاح دی۔ بتایا جاتا ہے کہ اس معاملہ کو چیف منسٹر سے رجوع کیا جارہا ہے تاکہ عہدیداروں کے کام کاج میں سیاسی مداخلت کو روکا جاسکے۔ ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے بھی شفیع اللہ کی کارکردگی پر اطمینان کا اظہار کیا اور اردو کمپیوٹر سنٹرس کو عصری بنانے کی کوششوں کی تائید کی۔ میڈیا کے بعض گوشوں نے ٹنڈر میں بے قاعدگیوں سے متعلق رپورٹ شائع کی لہذا محکمہ نے تمام تفصیلات کے ساتھ چیف منسٹر کو رپورٹ پیش کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ رپورٹ کے ساتھ ٹنڈر دستاویزات ، ٹنڈر گذار کی اہلیت کے علاوہ ٹنڈر گذاروں کی جانب سے پیش کردہ بولی کی تفصیلات بھی پیش کی جائیں گی۔

TOPPOPULARRECENT