Sunday , August 19 2018
Home / شہر کی خبریں / اردو یونیورسٹی میں سماجی تحریکات پر میرا سَنگا مترا کا لکچر

اردو یونیورسٹی میں سماجی تحریکات پر میرا سَنگا مترا کا لکچر

حیدرآباد، 21؍ فروری (پریس نوٹ) شعبہ سوشل ورک، مولاناآزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کی جانب سے ’’معاصر ہندوستان میں سماجی تحریکات ‘‘کے موضوع پر کل لکچر کا انعقاد کیا گیا۔ لکچرکا بنیادی مقصد طلبہ اور ریسرچ اسکالرز کو سوشل ورک کے عملی میدان میں سماجی اور سیاسی تحریکوں کی اہمیت سے روشنا س کرانا ہے تاکہ وہ اس ابھرتے ہوئے موضوع کو اپنے مستقبل میں زیر بحث لا سکیں۔ اس موقع پر سماجی کارکن اور ماہر انسانی حقوق محترمہ میرا سنگامترا نے طلبہ سے عالمانہ گفتگو کی۔ محترمہ میرا کا وطن حیدرآباد ہے اور جنسی اعتبار سے وہ تیسری جنس سے تعلق رکھتی ہیں۔ انہوں نے نرمدا بچاؤ تحریک اور ملک کی مختلف عوامی تحریکوں کے ساتھ لمبے عرصے تک کام کیا ہے اور ساتھ ہی ساتھ عدالتی ایکٹیو ازم میں سرگرم ہیں۔جناب ابو اسامہ نے مہمان کا مختصر تعارف پیش کرتے ہوئے سوشل ورک کے میدان میں سماجی و سیاسی تحریکوں کی معنویت کا ذکر کیا۔لکچر کے دوسرے پہلو میں حکومت کے انتظامیہ اور سرمایہ دار طبقے کے باہمی مفاد کے چلتے ملک کے ماحول، معاشی نظام، سماجی و تعلیمی نظام پر پڑنے والے برے اثرات و نتائج پر سیر حاصل گفتگو کی- انہوں نے ملک میں ہونے والی سیاسی ، معاشی اور سیاسی تبدیلی کی طرف دھیان دلاتے ہوئے طلبہ سے کہا کہ ہم ایک مشکل وقت میں جی رہے ہیں جہاں ہر قسم کے اقلیتوں کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اس لیے ایسی صورت حال میں عوامی تحریکوں کی وجہ سے ہی پسماندہ طبقات کو سماجی تحفظات ملیں گے اور ملک کا قانون بچ پائے گا۔ لکچر کے اختتام پر صدر شعبہ ڈاکٹر محمد شاہد رضا نے صدارتی کلمات میں طلبہ کو ملک کے سماجی اور سیاسی مسائل اور موجودہ تحریکوں کی اہمیت کو بتایا۔ ڈاکٹر رضا نے سال آخر کے طلبہ کو مشورہ دیا کہ انہیں اس موضوع پر کام کرنے والی تنظیموں اور اداروں سے جڑنا چاہیے۔جناب محمد فاروق اعظم نے شکریہ کے کلمات ادا کیے۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT