Wednesday , May 23 2018
Home / شہر کی خبریں / ارکان پارلیمان اسمبلی وکونسل کے خلاف مقدمات کیلئے خصوصی عدالت کا قیام

ارکان پارلیمان اسمبلی وکونسل کے خلاف مقدمات کیلئے خصوصی عدالت کا قیام

سپریم کورٹ کی ہدایت پر عمل ، حکومت تلنگانہ سے جی او کی اجرائی
حیدرآباد /2 مارچ ( سیاست نیوز ) ریاستی حکومت نے آج ایک جی او جاری کیا جس میں ارکان پارلیمنٹ اور ارکان قانون ساز اسمبلی کے خلاف فوجداری مقدمات چلانے کیلئے خصوصی کورٹ قائم کرنے کے احکامات جاری کئے ۔ تفصیلات کے بموجب خصوصی کورٹ کے جج کا رتبہ کا ہوگا اور اس عدالت کیلئے 30 جائیدادیں بھی قائم کی گئیں ۔ بتایا جاتا ہے کہ سپریم کورٹ کے احکامات کے بموجب ہر ریاست میں عوامی نمائندوں کے خلاف زیر التواء مقدمات چلانے کیلئے فاسٹ ٹراک کورٹ یا خصوصی کورٹ قائم کرنے کا حکم دیا گیا تھا ۔ بعض ریاستوں نے اس پر عمل کرتے ہوئے فاسٹ ٹراک کورٹ قائم کئے ہیں ۔ حالیہ دنوں ریاستی وزارت داخلہ کی جانب سے حکومت کو ایک خصوصی درخواست کے ذریعہ عوامی نمائندوں کے خلاف فوجداری مقدمات چلانے کیلئے خصوصی کورٹ قائم کرنے کی اجازت طلب کی گئی تھی ۔ فورم فار گُڈ گاورننس کے سکریٹری ایم پدمنابھا ریڈی نے بتایا کہ ریاست کے مختلف عوامی نمائندوں کے خلاف تعزرات ہند کے دفعہ 171 کے تحت 30 مقدمات زیر التواء ہیں جبکہ حیدرآباد سے تعلق رکھنے والے ایک رکن اسمبلی کے خلاف 18 مقدمات زیر التواء ہیں ۔ خصوصی عدالت کے قیام کے نتیجہ میں مقدمات کی سماعت فی الفور ممکن ہے جبکہ خاطی عوامی نمائندوں کو سزا اور بے قصور عوامی نمائندوں کو بری کیا جاسکتا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT