ارکان کو انحراف کے لیے اکسانا غیر دستوری و غیر اصولی

اسمبلی میں مباحث سے حکومت کی راہ فراری ، بی جے پی فلور لیڈر ڈاکٹر لکشمن

اسمبلی میں مباحث سے حکومت کی راہ فراری ، بی جے پی فلور لیڈر ڈاکٹر لکشمن
حیدرآباد۔17۔نومبر (سیاست نیوز) بی جے پی نے ٹی آر ایس حکومت کی جانب سے دیگر جماعتوں کے ارکان کو انحراف کیلئے حوصلہ افزائی کرنے کی مذمت کی ۔ پارٹی کے فلور لیڈر ڈاکٹر لکشمن اور رکن اسمبلی سی ایچ رام چندرا ریڈی نے اسمبلی میں اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ دیگر جماعتوں کے ارکان کو انحراف کیلئے اکسانا غیر دستوری اور غیر اصولی طریقہ کار ہے۔ انہوں نے حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ کانگریس کے ارکان کے انحراف کے مسئلہ پر اسمبلی میں مباحث سے راہ فرار اختیار کر رہی ہے۔ ڈاکٹر لکشمن نے ایک پارٹی سے منتخب ہوکر دوسری پارٹی میں انحراف کو غیر اخلاقی قرار دیا اور کہا کہ ایسے ارکان کو چاہئے کہ وہ اسمبلی کی رکنیت سے مستعفی ہوکر دوسری پارٹی میں شامل ہوں۔ انہوں نے الزام عائد کیا کہ چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ پارٹی کو مضبوط کرنے کیلئے دیگر پارٹیوں سے ارکان کو شامل کر رہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ اسمبلی میں ان کی پارٹی نے سرکاری ملازمین کی وظیفہ پر سبکدوشی کی عمر میں اضافہ کرتے ہوئے 58 سے 60 برس کرنے تحریک التواء پیش کی تھی، جسے مباحث کیلئے قبول نہیں کیا گیا۔ انہوں نے کہا کہ حکومت ایک طرف انحراف کی حوصلہ افزائی کر رہی ہے تو دوسری طرف ایوان میں ریاستی وزراء کے ٹی راما راؤ اور ہریش راؤ انحراف کی تائید کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وزراء کیلئے یہ مناسب نہیں کہ وہ غیر دستوری اور اقدامات کی ایوان میں تائید کریں۔ لکشمن نے کہا کہ اس مسئلہ پر اپوزیشن کو اظہار خیال کا موقع نہیں دیا گیا جبکہ وزراء نے تین مرتبہ مداخلت کرتے ہوئے کانگریسی ارکان کی ٹی آر ایس میں شمولیت کی تائید کی ۔ ڈاکٹر لکشمن نے ٹی آر ایس کے اس استدلال کو نامنظور کردیا کہ وائی ایس راج شیکھر ریڈی نے بھی ٹی آر ایس ارکان کے انحراف کی تائید کی تھی۔ انہوں نے کہا کہ اگر کانگریس پارٹی نے غلطی کی ہے تو اس کی سزا عوام نے اسے دیدی ۔ ٹی آر ایس کو کانگریس کی غلطی دہرانے کا کوئی اخلاقی جواز نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت انحراف کے مسئلہ پر جواب دینے کے بحجائے اس کی تائید کر رہی ہے۔ ڈاکٹر لکشمن نے حکومت پر الزام عائد کیا کہ وہ اپوزیشن کی آواز دبانے کیلئے یکطرفہ طور پر کارروائی چلا رہی ہے۔ انہوں نے اسپیکر سے مطالبہ کیا کہ وہ ارکان کے اختیارات کا تحفظ کریں۔

TOPPOPULARRECENT