Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / اسرائیلیوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش ، چار فلسطینیوں کو گولی مار دی گئی

اسرائیلیوں کو چاقو گھونپنے کی کوشش ، چار فلسطینیوں کو گولی مار دی گئی

یروشلم و مغربی کنارے میں ہولناک تشدد ، اوباما کا اظہار تشویش ، سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس

حبرون ۔ 17 اکٹوبر۔(سیاست ڈاٹ کام) مشرقی یروشلم اور مغربی کنارہ میں آج اسرائیلیوں کو چاقو گھونپنے کی کوششوں میں ملوث چار فلسطینیوں کو سکیورٹی فورسیس نے گولی مارکر ہلاک کردیا ۔ اس دوران لامتناہی تشدد میں ہولناک اضافہ پر بین الاقوامی برادری نے گہری تشویش کا اظہار کیا ہے ۔ دو ہفتوں سے جاری تشدد میں تاحال آٹھ اسرائیلی اور 43 فلسطینی ہلاک ہوچکے ہیں۔ امریکہ کے صدر براک اوباما نے اس صورتحال پر گہری تشویش ظاہر کرتے ہوئے صبر و تحمل کی ضرورت پر زور دیاہے ۔ امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے اسرائیلی وزیراعظم بنجامن نیتن یاہو سے بات چیت کی ۔ اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل نے مشرق وسطیٰ کی صورتحال کا جائزہ لینے کیلئے ہنگامی اجلاس منعقد کیا۔ فلسطینی مغربی کنارہ اور غزہ میں آج اسرائیلی فورسیس کے خلاف بڑے پیمانے پر احتجاج کیا گیا ۔ اس دوران سنگباری کے کئی واقعات پیش آئے ۔ حملہ آوروں نے یہودیوں کے مقدس مقام کو آتشیں بم حملوں کا نشانہ بنایا ۔ اسرائیلی فورسیس کی فائرنگ میں گزشتہ روز چار فلسطینی ہلاک ہوگئے تھے جن میں وہ ایک لیبر بھی شامل تھا جس نے صحیفہ نگار کے بھیس میں آگے بڑھ کر ایک اسرائیلی سپاہی کو چاقو گھونپ دیا تھا ۔ فلسطین اور اسرائیل کے درمیان بڑھتی ہوئی کشیدگی اور ہولناک تشدد پر غور و خوض کیلئے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا ایک ہنگامی اجلاس منعقد ہوا ۔ حالیہ عرصہ کے دوران فلسطینیوں نے کئی اسرائیلیوں کو چاقو زنی اور ایسے ہی حملوں کا نشانہ بنایا ۔ دوسری طرف اسرائیلی سکیورٹی فورسیس نے بھی اس تشدد سے نمٹنے کیلئے بڑے پیمانے پر کارروائی کی۔ اسرائیلی فورسیس نے کشیدگی کا گڑھ سمجھے جانے والے عرب علاقوں کی ناکہ بندی کردی ۔ یہ تشدد اُس وقت پھوٹ پڑا جب دریائے اردن اور بحرہ روم کے درمیان اراضی کی تقسیم کے ساتھ دو ریاستوں فلسطین اور اسرائیل کے قیام کے امکانات موہوم ہوگئے، جس سے کئی فلسطینی مایوس ہوگئے ہیںکیونکہ اُن کے لئے اپنی آزادی کے تمام راستہ اب بند نظر آنے لگے ہیں۔ فلسطینیوں کے ان اندیشوں سے بھی کشیدگی میں اضافہ ہوا ہے کہ مسلمانوں کے زیرکنٹرول مسجد اقصیٰ پر اسرائیل اپنے عمل دخل میں اضافہ کی کوشش کررہا ہے۔ لیکن اسرائیل نے ان اندیشوں کو مسترد کردیا ہے ۔

اقوام متحدہ کے ایک سینئر عہدیدار تائے بروک زیری ہون نے سلامتی کونسل سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ایک طویل عرصہ سے فلسطینیوں پر اسرائیلی حکمرانی اور ایک آزاد فلسطینی مملکت کے قیام کے امکانات میں مسلسل کمی نے فلسطینیوں کی دیرینہ بڑھتی ہوئی برہمی کو غضب میں تبدیل کردیا ہے ۔ زیری ہون نے خبردار کیا کہ ’’موجودہ فلسطینی بحران کو محض سکیورٹی اقدامات کے ذریعہ حل نہیں کیا جاسکتا‘‘۔ اسرائیل کے نئے سفیر ڈینی ڈینن نے فلسطینی اتھاریٹی کے صدر محمود عباس پر الزام عائد کیا کہ وہ اپنی نفرت انگیز تقاریر کے ذریعہ فلسطینیوں کو انتہائی خطرناک انداز میں اسرائیل کے خلاف اشتعال دلارہے ہیں۔ وہ (محمود عباس) یہ دعویٰ بھی کررہے ہیں اسرائیل بیت المقدس کے احاطہ میں واقع گنبد صخرا کے جوں کے توں موقف کو تبدیل کرنے کی کوشش کررہا ہے ۔ گزشتہ ایک ماہ کے دوران فلسطینی حملوں میں کم سے کم آٹھ اسرائیلی ہلاک ہوگئے ان میں اکثر چاقو زنی کا نشانہ بنائے گئے تھے ۔ اس مدت کے دوران اسرائیلی سکیورٹی فورسیس نے 36 فلسطینیوں کو ہلاک کردیا جن میں 15 کو حملہ آور بتایا گیا ۔ ماباقی فلسطینی سنگباری کے دوران اسرائیلی فورسیس کی فائرنگ اور تصادم کے دیگر واقعات میں ہلاک ہوئے ۔

TOPPOPULARRECENT