Tuesday , November 13 2018
Home / عرب دنیا / اسرائیل مذہبی جنگ کی سازش میں مصروف : محمود عباس

اسرائیل مذہبی جنگ کی سازش میں مصروف : محمود عباس

رملہ۔ 12 نومبر۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس نے مشرقی یروشلم میں اسرائیلی فوج اور پولیس کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں اور مسجد اقصیٰ میں یہودیوں کی بار بار آمد کی بنیاد پر کہا ہے کہ اسرائیل مذہبی جنگ کی طرف بڑھ رہا ہے۔ عباس نے یاسر عرفات کی دسویں برسی پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیت

رملہ۔ 12 نومبر۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) فلسطینی اتھارٹی کے صدر محمود عباس نے مشرقی یروشلم میں اسرائیلی فوج اور پولیس کی بڑھتی ہوئی کارروائیوں اور مسجد اقصیٰ میں یہودیوں کی بار بار آمد کی بنیاد پر کہا ہے کہ اسرائیل مذہبی جنگ کی طرف بڑھ رہا ہے۔ عباس نے یاسر عرفات کی دسویں برسی پر منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے اسرائیلی وزیر اعظم بنیامین نیتن یاہو کے اس حالیہ بیان کا بھی نوٹس لیا جس میں یاہو نے کہا تھا، ’’ محمود عباس حالات کو زیادہ خراب کر رہے ہیں‘‘۔ یاہو نے مزید کہا تھا: ’’بجائے اس کے کہ وہ کشیدگی کو کم کرتے انہوں نے اسے بڑھاوا دینا شروع کر دیا ہے اور وہ اپنے لوگوں کو دہشت گردانہ کارروائیوں کا سبق دے رہے ہیں‘‘۔ غزہ پر اسرائیل کی طرف سے مسلط کردہ پچاس روزہ جنگ کے بعد اسرائیل نے مغربی کنارہ، مشرقی یروشلم سمیت مسجد اقصیٰ میں حالات کو کشیدہ کر دیا ہے، آئے دن فلسطینی نوجوانوں کو شہید کیا جا رہا ہے۔

اس وجہ سے فلسطینیوں میں سخت غم و غصہ ہے۔ یاہو سمجھتے ہیں کہ اسرائیلی کارروائیوں کے بعد بھی عباس کو اپنی توجہ فلسطینیوں کو ردعمل سے روکنے پر مرکوز رکھنی چاہئے۔ اس سے قبل اسرائیلی رویہ کی وجہ سے امن مذاکرات بھی معطل ہو چکے ہیں۔عباس نے یاہو کے الزامات کے جواب میں کہا، ’’ اسرائیل یروشلم کو تقسیم کرنے کیلئے کوشش کر رہا ہے اور اس اسرائیلی منصوبے میں مسجد اقصیٰ کو بھی شامل کیا گیا ہے۔ عباس نے دوٹوک انداز میں کہا کہ اسرائیل اگر یہ سمجھتا ہے کہ وہ آسانی سے مسجد اقصیٰ کے بارے میں اپنے مذموم مقاصد کو پورا کر لے گا جیسا کہ وہ مسجد ابراہیمی کے حوالے سے کر چکا ہے تو یہ اس کی غلط فہمی ہے۔ ہم انہیں خبردار کرتے ہیں کہ وہ مسجد اقصیٰ کو تقسیم کرنے کی کوشششیں کر کے ایک مذہبی جنگ کا آغاز کر رہے ہیں۔

فلسطینی نوجوان کا قاتل اسرائیلی پولیس جوان گرفتار
یروشلم ۔ 12 ۔ نومبر (سیاست ڈاٹ کام) اسرائیلی بارڈر پولیس کے ایک جوان کو فائرنگ کے شبہ میں گرفتار کرلیا گیا ہے جس سے مئی میں مغربی کنارہ میں مظاہرہ کے دوران ایک نوجوان فلسطینی کی ہلاکت ہوگئی تھی، پولیس ذرائع نے آج یہ بات کہی۔ 17 سالہ ندیم نووارا رملہ کے جنوب مغربی علاقہ بیتونیہ میں 15 مئی کو اسرائیلی فورسس اور فلسطینی احتجاجیوں کے درمیان جھڑپوں کے دوران ہلاک ہوگیا تھا۔ یہ مظاہرہ 1948 ء میں اسرائیل کے قیام کے سالانہ ایونٹ کے موقع پر ہورہا تھا۔

TOPPOPULARRECENT