Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / اسرائیل ۔ فلسطین تشدد افسوسناک

اسرائیل ۔ فلسطین تشدد افسوسناک

تنازعات کی پرامن یکسوئی کیلئے زور، صدرجمہوریہ پرنب مکرجی کا خطاب

یروشلم ۔ 14 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) مشرق وسطیٰ میں جاری تشدد پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے ہندوستان نے کہا کہ فلسطین ۔ اسرائیل کو پرامن بقائے باہم پر توجہ دینا چاہئے۔ صدرجمہوریہ پرنب مکرجی نے آج وزیراعظم اسرائیل بنجامن نتن یاہو سے کہا کہ تمام تنازعات کی پرامن یکسوئی کیلئے کوشش کی جانی چاہئے۔ اس پر بنجامن نتن یاہو نے جواب دیا کہ ان کا ملک عرب ممالک کے ساتھ باہمی تعاون کا خواہاں ہے لیکن دہشت گردی کے خلاف جنگ کیلئے بھی وہ مضبوطی سے کھڑا رہے گا۔ پرنب مکرجی نے جو اسرائیل کا دورہ کرنے والے پہلے ہندوستانی صدرجمہوریہ ہیں۔ اس خطہ میں جاریہ تشدد کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ اس خطہ میں فلسطینیوں اور اسرائیلیوں کی کثیر اموات کے نتیجہ میں بدامنی پیدا ہورہی ہے۔ پرنب مکرجی کا یہاں پر ان کے اسرائیلی ہم منصب ریوان ریولن نے خیرمقدم کیا۔ انہوں نے کہا کہ ہمیں مشرق وسطیٰ میں جاری حالیہ تشدد کے واقعات پر تشویش ہے۔ ہندوستان اس بات پر غمگین ہے کہ مشرق وسطیٰ میں امن کی بحالی کیلئے کوشش نہیں کی جارہی ہے۔ تمام تنازعات کی پرامن یکسوئی کی بھی انہوں نے وکالت کی۔

اس کے جواب میں صدر اسرائیل ریولن نے کہا کہ ہندوستان اور اسرائیل مختلف شعبوں میں مل جل کر کام کرتے ہوئے تاریخ بنا رہے ہیں۔ ہم اپنے عوام کو دہشت گردی کا سامنا کرنے سے روکنے کیلئے محفوظ مقام بنانے کوشاں ہے۔ دہشت گردی اور بنیاد پرستی اصل خطرہ ہے۔ پرنب مکرجی جن پر اسرائیلی میڈیا نے ان کے دورہ فلسطین کے دوران فلسطینیوں کو دہشت گرد قرار نہ دینے پر تنقید کی تھی۔ بعدازاں اسرائیلی پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان کا ایقان ہیکہ پرامن مذاکرات اور بات چیت کے ذریعہ ہی تمام مسائل کی یکسوئی کے سواء کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے۔ اسرائیلی پارلیمنٹ میں ہندوستانی لیڈر کے خطاب کے بعد نتن یاہو نے کہا کہ ہندوستان اور اسرائیل دہشت گردی سے متاثر ہیں۔ دونوں ملکوں کو مل جل کر کام کرنا چاہئے۔ انہوں نے دولت اسلامیہ کی جانب سے خاص کر اسلام پسند گروپوں کے پیدا کردہ چیلنجس پر کہا کہ ہم داعش جیسے گروپوں کو انتباہ دیتے ہیں کہ اب ان کی کارروائیاں شدت اختیار کرتی جارہی ہے۔ اب بہت ہوچکا انہیں شکست دی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT