Monday , November 20 2017
Home / دنیا / اسرائیل ۔ فلسطین تنازعہ کی یکسوئی، اوباما کی میعاد میں ممکن نہیں : وائٹ ہاؤز

اسرائیل ۔ فلسطین تنازعہ کی یکسوئی، اوباما کی میعاد میں ممکن نہیں : وائٹ ہاؤز

واشنگٹن۔ 20 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) وائیٹ ہاؤز نے آج ایک اہم بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ اسرائیل اور فلسطین کے تنازعہ کی یکسوئی کیلئے جو تجویز صدر امریکہ بارک اوباما نے پیش کیا ہے، اس پر صدر موصوف کی میعاد کے بچے ہوئے نو ماہ کے دوران عمل آوری ممکن نظر نہیں آتی۔ وائیٹ ہاؤز پریس سیکریٹری جوش ارنیسٹ نے کہا کہ ایک ایسی حقیقت ہے جس کا اظہار ہم پہلے بھی کرچکے ہیں اور وضاحت کردی ہے کہ صدر اوباما کی صدارت کے باقی نو ماہ میں اسرائیل۔ فلسطین تنازعہ کا کوئی حل نظر نہیں آتا۔ اپنی بات جاری رکھتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان اختلافات کچھ اتنے شدید نوعیت کے ہیں کہ آئندہ نو ماہ کے دوران ان اختلافات کو ختم کردینا ناممکن نہیں تو مشکل ضرور ہے۔ جوش ارنیسٹ نے مشرق وسطیٰ کی صورت حال پر زمینی حقائق کا برملا اظہار کیا اور کہا کہ یہ بات نوٹ کرنے کے قابل ہے کہ صدر اوباما، نائب صدر جوبیڈن اور وزیر خارجہ جان کیری سے اسرائیل اور فلسطین کے درمیان مصالحت کے لئے اپنی تمام توانائی، وقت اور وسائل کا استعمال کیا ہے۔ ماضی میں بھی امریکی صدور نے اس جانب کام ضرور کیا ہے، لیکن جتنی شدت سے اوباما انتظامیہ نے اس جانب توجہ دی ہے، اتنی شدت سے کسی بھی امریکی انتظامیہ نے نہیں دی۔ کیری اکثر و بیشر مشرق وسطیٰ کا دورہ کرتے رہے ہیں تاکہ وہ اسرائیل اور فلسطین کو مذاکرات کی میز پر لاسکیں اور یہ توقعات بھی وابستہ کر رکھی تھیں کہ اس کے مثبت نتائج سامنے آئیں گے تاہم ایسا نہیں ہوسکا۔

TOPPOPULARRECENT