Wednesday , December 19 2018

اسلامی اصولوں اور پردہ کے اہتمام کے ساتھ مسلم خواتین کی محنت

ٹیکسی چلاتے ہوئے خاندان کی مدد کا جذبہ ، خود اعتمادی سے ترقی کا عزم
حیدرآباد /20 ڈسمبر ( سیاست نیوز ) اسلامی اصولوں کی پابندی اور مکمل پردہ کا اہتمام کرتے ہوئے ٹیکسی چلانے والی مسلم خواتین نے مخالفین کو ایک کرارا جواب دیا ہے ۔ پردہ کو مذاق بناتے ہوئے اس کی حرمت پر سوالیہ نشان کا سبب بننے والی مسلم لڑکیوں اور خواتین کیلئے بھی جوگیشوری کی مسلم خواتین نے طمانچہ رسید کیا ہے ۔ کوئی معمولی ٹیکسی نہیں بلکہ اولہ اور اوبر جیسی بین الاقوامی کمپنیوں کی ٹیکسی چلاتے ہوئے اپنے افراد خاندان کی مدد کرنے والی ممبئی کی یہ دو خواتین نے ایک مثال قائم کی ہے ۔ 30 سالہ رضوانہ شیخ اور 42 سالہ مہہ جبین ممبئی کی سڑکوں پر گشت کر رہی ہیں ۔ جنہوں نے نہ صرف اپنے جذبہ کو قائم رکھا بلکہ مذہبی تعلیمات پر عمل آوری کرتے ہوئے دین حق کی زندہ مثال بھی بنی ہوئی ہیں ۔ خواتین کے حقوق کی تلافی اور قید و بند کی بے بنیاد باتیں کرنے والوں کو بھی ایک چیالنج پیش کیا ہے اور ان کے تمام الزامات اور باتوں کا منہ توڑ جواب دے رہے ہیں ۔ یہ دو خواتین جنہوں نے نہ صرف اپنے افراد خاندان کا بھروسہ قائم رکھا ہے بلکہ خود خاندان کیلئے بھروسہ بن گئیں ہیں ۔ ممبئی جیسے بڑے شہر میں ٹیکسی چلانے والی یہ خواتین بی پی ایس کے ذریعہ اپنا راستہ تلاش کرتی ہیں اور خواتین کے علاوہ مرد مسافرین کو بھی ان کی منزل تک پہونچاتی ہیں ۔ اس موقع پر رضوان شیخ نے بتایا کہ وہ گذشتہ 8 ماہ سے ممبئی کی سڑکوں پر سفر کر رہی ہیں اور مسافرین کو ان کی منزل تک پہونچا رہی ہیں ۔ رضوان پہلے بیوٹیشن کا کام کرتی تھیں جو اب ٹیکسی چلاتی ہیں جو ماہانہ 30 تا 40 ہزار روپئے بہ آسانی کمالیتی ہیں اور ان کے شوہر کے علاوہ افراد خاندان کی جانب سے ان کی بھرپور مدد کی جاتی ہے ۔ اس خاتون کا کہنا ہیکہ وہ نشہ کی حالت میں موجود افراد کی سواری کو مسترد کردیتی ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ انہیں اس وقت تعجب ہوتا ہے اور فخر محسوس ہوتا ہے کہ جس وقت لوگ کسی انجان مقام کا پتہ پوچھنے پر انہیں حیرت کی نظروں سے دیکھتے ہیں کہ کیاب ٹیکسی ایک پردہ نشین خاتون چلا رہی ہیں۔ جو پردہ اور برقعہ کا اہتمام کئے ہوئے ہیں ۔ رضوانہ کا تعلق ریاست اترپردیش کے شہر لکھنو سے بتایا گیا ہے ۔ جو اپنی شادی کے بعد ممبئی منتقل ہوگئی اور شوہر کے ہمراہ جوگیشوری علاقہ میں رہتی ہیں ان کے شوہر ایک تاجر پیشہ شخص ہیں جو ان کی مکمل مدد کرتے ہیں ۔ اس طرح 42 سالہ مہہ جبین کی بھی کہانی ہے ۔ جنہیں ٹیکسی چلاتے ہوئے 6 سال کا عرصہ گذر چکا ہے ۔ ان خواتین کے حوصلہ و خود اعتمادی کو دیکھتے ہوئے کمپنیاں بھی خواتین کو پیشکشی میں آگے آرہی ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT