Friday , January 19 2018
Home / شہر کی خبریں / اسمبلی بجٹ اجلاس میں حکومت کو نشانہ بنانے سی ایل پی کا فیصلہ

اسمبلی بجٹ اجلاس میں حکومت کو نشانہ بنانے سی ایل پی کا فیصلہ

کسانوں کی خودکشی، سوائن فلو، برقی شرحوں میں اضافہ، سکریٹریٹ کی منتقلی کے مسائل اٹھائے جائینگے

کسانوں کی خودکشی، سوائن فلو، برقی شرحوں میں اضافہ، سکریٹریٹ کی منتقلی کے مسائل اٹھائے جائینگے
حیدرآباد /6 مارچ (سیاست نیوز) تلنگانہ کانگریس لیجسلیچر پارٹی نے کسانوں کی خودکشی، سوائن فلو، برقی شرحوں میں اضافہ، سکریٹریٹ اور چیسٹ ہاسپٹل کی منتقلی، کے جی تا پی جی مفت تعلیم، لاء اینڈ آرڈر اور دیگر 27 مسائل پر بجٹ سیشن کے دوران حکومت کو گھیرنے اور اپوزیشن کا تعمیری رول ادا کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ واضح رہے کہ اسمبلی کے کانفرنس ہال میں آج کانگریس ارکان اسمبلی اور ارکان قانون ساز کونسل کا ایک اجلاس منعقد ہوا، جس میں قائد اپوزیشن اسمبلی کے جانا ریڈی، قائد اپوزیشن کونسل ڈی سرینواس، صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اتم کمار ریڈی، ورکنگ پریسیڈنٹ ملو بٹی وکرا مارک، ڈپٹی فلور لیڈر کونسل محمد علی شبیر، رکن قانون ساز کونسل محمد فاروق حسین اور دیگر قائدین نے شرکت کی۔ اجلاس میں عوامی مسائل کو حل کرنے کے لئے چیف منسٹر پر دباؤ ڈالنے کے علاوہ آبپاشی پراجکٹس کے زیر التوا کاموں، گریٹر حیدرآباد میونسپل کارپوریشن کے انتخابات، حیدرآباد کو دریائے گوداوری سے تیسرے مرحلہ کا پانی حاصل کرنے، تلنگانہ کے لئے خصوصی موقف، مشن کاکتیہ اور تالابوں کا احیاء، مرکزی حکومت کے حصول اراضیات بل، مکانات اور آسرا اسکیم سے استفادہ کے لئے دوبارہ سروے کرانے، تلنگانہ میں لاء اینڈ آرڈر کی صورت حال، کے جی تا پی جی مفت تعلیم، سرکاری جائدادوں پر تقررات، کانگریس سے وفاداری تبدیل کرنے والے ارکان اسمبلی و قانون ساز کونسل کے خلاف کارروائی، سرکاری اراضیات اور دیگر اثاثہ جات کی فروختگی، ایس سی و ایس ٹی طبقات میں تین ایکڑ اراضی کی تقسیم، چیسٹ ہاسپٹل کی منتقلی اور سکریٹریٹ کی نئی عمارت کی تعمیر، برقی شرحوں میں امکانی اضافہ، سوائن فلو اور دیگر متعدی بیماریاں، کسانوں کی خودکشی، ہائیکورٹ کی تقسیم، واٹر گرڈ پراجکٹ، نصابی تعلیم کی تبدیلی، میٹرو ٹرین، اضلاع اور منڈلوں کی ازسرنو تبدیلی، جی او 58 اور 59، اسمارٹ ویلجس اینڈ سنٹر کا قیام، غیر قانونی مائننگ کارروائیوں اور دیگر مسائل کو موضوع بحث بنانے کا فیصلہ کیا گیا۔ دریں اثناء کے جانا ریڈی نے تمام ارکان اسمبلی و قانون ساز کونسل کو روزانہ بپابندی اسمبلی و کونسل میں حاضر رہنے، وقفہ سوالات کے علاوہ دیگر مباحث میں بڑھ چڑھ کر حصہ لینے اور عوامی مسائل کو ثبوت و شواہد اور اعداد و شمار کے ساتھ موضوع بحث بنانے کا مشورہ دیا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT