اسمبلی بجٹ اجلاس میں ہنگامہ ، اندرون 11 منٹ اجلاس ملتوی

تلنگانہ ارکان اسمبلی ٹی آر ایس ، تلگو دیشم اور کانگریس کی نعرہ بازی ، تلنگانہ بل کو مسترد کرنے پر احتجاج

تلنگانہ ارکان اسمبلی ٹی آر ایس ، تلگو دیشم اور کانگریس کی نعرہ بازی ، تلنگانہ بل کو مسترد کرنے پر احتجاج
حیدرآباد ۔ 10 ۔ فروری : ( سیاست نیوز) : متحدہ ریاست آندھرا پردیش میں ریاستی قانون ساز اسمبلی کے امکانی آخری مختصر مدتی بجٹ سیشن کا آغاز ہونے کے اندرون 11 منٹ میں ہی تلنگانہ ارکان اسمبلی ٹی آر ایس ، تلگو دیشم پارٹی اور کانگریس ارکان کے شورشرابہ ، احتجاجی نعرہ بازی گڑبڑ و ہنگامہ آرائی کے دوران ہی 12 فروری بروز چہارشنبہ صبح دس بجے تک کے لیے ملتوی کردیا گیا ۔ ایوان کی کارروائی کا آغاز ہونے کے ساتھ ٹی آر ایس ارکان اسمبلی نے اپنی نشستوں سے اٹھ کھڑے ہو کر اسپیکر ریاستی اسمبلی اور چیف منسٹر کے ایوان میں کچھ دن قبل تلنگانہ مسودہ بل ( آندھرا پردیش تنظیم جدید مسودہ بل 2013 ) کو مسترد کر کے قرار داد منظوری کے لیے اختیار کردہ رویہ کے خلاف سخت احتجاج کیا اور جئے تلنگانہ کے فلک شگاف نعرے بلند کرنا شروع کردیا ۔ اسی دوران اسپیکر اسمبلی مسٹر این منوہر نے ریاستی وزیر فینانس مسٹر اے رام نارائن ریڈی سے بجٹ کی پیشکشی کے لیے اپنی تقریر شروع کرنے کی خواہش کی ۔ جس کے ساتھ ہی مسٹر اے رام نارائن ریڈی وزیر فینانس نے سال 2014-15 کے لیے اپنے ووٹ آن اکاونٹ بجٹ کو ایوان میں پیش کرتے ہوئے اپنی تقریر کا آغاز کیا ۔ اس دوران تلنگانہ مسودہ بل کے تعلق سے اور کچھ دن قبل دہلی میں تلنگانہ سے تعلق رکھنے والی خاتون ریاستی وزراء کے ساتھ پیش آئے ہتک و اہانت آمیز واقعہ کے خلاف تمام تلنگانہ وزراء ماسوا ڈپٹی چیف منسٹر مسٹر دامودر راج نرسمہا اور وزیر پنچایت راج مسٹر کے جانا ریڈی دیگر تمام ریاستی وزراء تلنگانہ نے اپنی نشستوں کے پاس اٹھ کھڑے ہو کر سخت احتجاج کیا جب کہ تلنگانہ راشٹرا سمیتی کے ارکان اسمبلی مسٹر ٹی ہریش راؤ کی قیادت میں ایوان کے وسط میں آکر اسپیکر پوڈیم کے قریب پہونچ کر اپنے سخت احتجاج کو درج کروایا ۔ ٹی آر ایس ارکان اسمبلی نے سیاہ بیاچس لگا کر سخت احتجاج کیا ۔ اسی دوران تلنگانہ تلگو دیشم پارٹی فورم کے ارکان اسمبلی نے بھی اپنے ہاتھوں میں پلے کارڈز تھام کر سخت احتجاج کیا اور زبردست نعرہ بازی کرتے رہے جب کہ ایوان میں جاری اس ہنگامہ آرائی کے دوران ہی تلنگانہ کانگریس پارٹی سے تعلق رکھنے والے چند ارکان اسمبلی نے بھی مسٹر جی وینکٹ رمنا ریڈی گورنمنٹ چیف وہپ کی قیادت میں ایوان کے وسط میں آکر احتجاج کا آغاز کیا ۔ اس دوران مسٹر کے جانا ریڈی نے کچھ اظہار خیال کا موقعہ فراہم کرنے کی خواہش کرتے ہوئے اسپیکر اسمبلی کو اشارہ کیا لیکن اسپیکر نے اس اشارہ کو نظر انداز کردیا ۔ اس تمام ہنگامہ آرائی ، شور و غل گڑبڑ ، احتجاجی نعرہ بازی کے دوران وزیر فینانس مسٹر اے رام نارائن ریڈی نے اپنے ووٹ آن اکاونٹ ( علی الحساب ) بجٹ پیش کرتے ہوئے اپنی مختصر سی بجٹ تقریر ختم کی ۔ لیکن اس دوران ہی تلنگانہ راشٹرا سمیتی کے ارکان اسمبلی نے بطور احتجاج ایوان سے واک آوٹ کردیا ۔ اسی طرح تلگو دیشم پارٹی ارکان اسمبلی علاقہ تلنگانہ نے بھی جو کہ پوڈیم کے قریب پہونچ کر اپنا احتجاج جاری رکھے ہوئے تھے ۔ ایوان سے واک آوٹ کیا اسی طرح تلنگانہ کانگریس پارٹی کے چند ارکان اسمبلی نے بھی بجٹ تقریر سے واک آوٹ کردیا اور اس طرح وزیر فینانس نے اندرون دس منٹ ہی اپنی بجٹ تقریر ختم کی اور ایوان سے اس پیش کردہ علی الحساب بجٹ کی منظوری دینے کی پر زور خواہش کی ۔ جس کے ساتھ ہی اسپیکر اسمبلی مسٹر این منوہر نے ایوان کی کارروائی کو 12 فروری بروز چہارشنبہ صبح دس بجے تک کے لیے ملتوی کرنے کا اعلان کیا اور کہا کہ بزنس اڈوائزری کمیٹی کا اجلاس منعقد کرنے کا اظہار کرتے ہوئے تمام فلور لیڈرس سے شرکت کرنے کی خواہش کی ۔۔

TOPPOPULARRECENT