Tuesday , January 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اسمبلی میں وقفہ سوالات

اسمبلی میں وقفہ سوالات

اسمبلی میں وقفہ سوالات l شہر میں پولیس کو عصری بنانے 312کروڑ کی منظوری lحیدرآباد میں سینما سٹی کی تعمیر l ممتاز شخصیتوں پر مشتمل اسٹیٹ اڈوائزری کونسل

اسمبلی میں وقفہ سوالات
l شہر میں پولیس کو عصری بنانے 312کروڑ کی منظوری
lحیدرآباد میں سینما سٹی کی تعمیر
l ممتاز شخصیتوں پر مشتمل اسٹیٹ اڈوائزری کونسل
حیدرآباد۔/11نومبر، ( سیاست نیوز) وزیر داخلہ این نرسمہا ریڈی نے کہا کہ حیدرآباد میں پولیس کو عصری بنانے کیلئے 312 کروڑ 74لاکھ 91ہزار روپئے منظور کئے گئے۔ اسمبلی میں بی گنیش اور ایم سدھیر ریڈی کے سوال پر وزیر داخلہ نے کہا کہ حیدرآباد میں پولیس کو نیویارک اور لندن پولیس کی طرح عصری سہولتوں سے آراستہ کرنے اور عوام کے جان و مال کے تحفظ کو یقینی بنانے کیلئے نیا پولیسنگ سسٹم متعارف کیا جارہا ہے۔ وزیر داخلہ نے بتایا کہ آئندہ تین تا چار برسوں میں ویمنس پولیس اسٹیشنوں کی تعداد کو بتدریج اضافہ کرتے ہوئے 80تک کرنے کی تجویز ہے اور ہر سب ڈیویژن میں ایک ویمن پولیس اسٹیشن ہوگا۔ ہر پولیس اسٹیشن میں شکایات کی وصولی کیلئے ہیلپ ڈیسک کے قیام کی تجویز ہے۔ انہوں نے بتایا کہ پولیس اسٹیشن کے اسٹاف کو عوام سے بہتر سلوک اور خاص طور پر خواتین اور کمزور طبقات سے اچھے برتاؤ کے سلسلہ میں تہذیب اور اخلاق پر مشتمل کونسلنگ دی جائے گی۔ آئندہ چھ ماہ میں ہر پولیس اسٹیشن، سرکل آفس، سب ڈیویژن پولیس آفس میں کیمرے نصب کئے جائیں گے جو 24گھنٹے ریکارڈنگ کریں گے۔ اس طرح پولیس کی کارکردگی میں شفافیت کو یقینی بنانے میں مدد ملے گی اور عوام میں پولیس سے خوف اور اندیشے دور کئے جاسکتے ہیں۔
ll چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے ریاستی اسمبلی کو بتایا کہ حکومت حیدرآباد میں فلم انڈسٹری کے فروغ اور اس کے تحفظ کا فیصلہ کرچکی ہے۔ ٹی آر ایس رکن آر بالکشن کے سوال پر چیف منسٹر نے کہا کہ ہالی ووڈ کی طرز پر حیدرآباد کے مضافات میں 2000ایکر پر مشتمل سینما سٹی کی تعمیر کی تجویز زیر غور ہے۔
ll وزیر فینانس ای راجندر نے بتایا کہ حکومت نے مختلف شعبوں میں ماہرین پر مشتمل اسٹیٹ اڈوائزری کونسل کی تشکیل کا فیصلہ کیا ہے۔ ایس رام لنگا ریڈی کے سوال پر وزیر فینانس نے کہا کہ اسٹیٹ اڈوائزری کونسل میں ماہرین، ممتاز شخصیتیں، دانشور، ایڈیٹرس اور صحافی موجود ہوں گے۔ چیف منسٹر کی صدارت میں یہ کونسل قائم کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ معیشت، پبلک اڈمنسٹریشن، گورنننس، ہیومن رائٹس، تعلیم، عوامی صحت، ثقافت، اسپورٹس اور صحافت کے شعبوں سے تعلق رکھنے والے ماہرین اور اہم شخصیتوں کو شامل کیا جائے گا جو اہم اُمور پر حکومت کو تجاویز پیش کریں گے۔ وزیر فینانس نے کہا کہ ضلع واری سطح پر اڈوائزری کمیٹیوں کے قیام کی کوئی تجویز نہیں ہے۔

TOPPOPULARRECENT