Monday , November 19 2018
Home / کھیل کی خبریں / اسمتھ اور بین کرافٹ کا سزاکیخلاف اپیل نہ کرنے کا فیصلہ

اسمتھ اور بین کرافٹ کا سزاکیخلاف اپیل نہ کرنے کا فیصلہ

This video grab taken from a footage released by AFP TV shows Australia's captain Steve Smith (R), flankled by teammate Cameron Bancroft, speaking during a press conference in Cape Town, on March 24, 2018 as he admitted to ball-tampering during the third Test against South Africa. Australia captain Steve Smith and team-mate Cameron Bancroft sensationally admitted to ball-tampering during the third Test against South Africa on March 24, 2018, plunging cricket into potentially its greatest crisis. Bancroft was caught on television cameras appearing to rub a yellow object on the ball, and later said: "I was in the wrong place at the wrong time. I want to be here (in the press conference) because I want to be accountable for my actions." / AFP PHOTO / AFP TV / STR (Photo credit should read STR/AFP/Getty Images)

میلبورن۔4 اپریل(سیاست ڈاٹ کام)معطل شدہ سابق آسٹریلیائی کپتان اسٹیون اسمتھ نے بال ٹمپرنگ معاملے میں قصوروار پائے جانے کے بعد کرکٹ آسٹریلیا (سی اے ) کی ایک برس کی پابندی کوقبول کرتے ہوئے اس کے خلاف اپیل نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔جنوبی افریقہ سیریز کے دوران تیسرے ٹسٹ کیپ ٹاؤن میں اسمتھ کو گیند کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کا قصوروار پایا گیا تھا۔ سی اے نے اس معاملے میں تحقیقات کے بعدا سمتھ اور نائب کپتان ڈیوڈ وارنر پر ایک ایک برس کی پابندی عائد کردی تھی۔بیٹسمین کیمرون بین کرافٹ پر بھی نو ماہ کی پابندی لگائی گئی ہے ۔تینوں کھلاڑیوں کے پاس اس فیصلے کے خلاف اپیل کرنے کی آخری میعاد جمعرات تک تھی۔لیکن اسمتھ نے آج واضح کردیا کہ وہ آسٹریلیائی بورڈ کے فیصلے کو قبول کرتے ہیں۔ انہوں نے ٹوئٹر پر لکھامیں اپنے ملک کی دوبارہ نمائندگی کرنے کے لئے سب کچھ کرنے کو تیار ہوں۔ بطورکپتان میں اپنے جرم کی پوری ذمہ داری لیتا ہوں۔انہوں نے کہا میں نے فیصلہ کیا ہے کہ اس پابندی کے خلاف اپیل نہیں کروں گا۔ سی اے نے یہ پابندی ایک سخت پیغام دینے کے مقصد سے لگائی ہے اور میں نے اسے قبول کر لیا ہے ۔اسمتھ کو سی اے کی پابندی کے بعد انڈین پریمیئر لیگ سے بھی باہر کر دیا گیا تھا جہاں وہ راجستھان رائلس کے کپتان تھے ۔اسمتھ اب آئندہ دو برس جبکہ وارنر آسٹریلیا کے لئے کھیلنے تک کبھی ٹیم کے کپتان نہیں بن سکیں گے ۔علاوہ ازیں بال ٹیمپرنگ کے تیسرے کردار بین کرافٹ نے بھی سزا کے خلاف اپیل نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ مذکورہ کھلاڑیوں کی جانب سے خود پر عائد بالترتیب ایک سال اور 9 ماہ کی پابندی کے خلاف اپیل نہ کرنے کے بعد یہ قیاس آرائیاں کی جارہی ہیں کہ ڈیوڈ وارنر شاید اپنی پابندی کے خلاف اپیل کریں گے۔ علاوہ ازیں آسٹریلین کرکٹ اسوسی ایشن کے صدر گریٹ ڈائر نے اظہار خیال کرتے ہوئے اپنی مایوسی ظاہر کی اور کہا کہ سخت سزا سے ایک بہتر پیغام جائے گا ۔ انہوں نے مزید کہا کہ جس طرح کی سزا کھلاڑیوں کو دی گئی ہے، وہ کافی سخت ہے حالانکہ ان پر دو ونڈے مقابلوں کی پابندی کے ساتھ مقابلے کی صد فیصد فیس کا جرمانہ عائد کیا جاسکتا تھا۔ دریں اثناء مقامی میڈیا کے بموجب آسٹریلیا نے اسمتھ کو ڈومیسٹک کرکٹ کھیلنے کی اجازت دی ہے لیکن وہ اس کے علاوہ کاؤنٹی کرکٹ جس کا 13 اپریل کو آغاز ہورہا ہے ، اس میں بھی شرکت سے گریز کریں گے۔

TOPPOPULARRECENT