Saturday , December 16 2017
Home / Top Stories / اسٹاکہوم کے ایک ڈپارٹمنٹ اسٹور پر ٹرک حملہ، 3 ہلاک

اسٹاکہوم کے ایک ڈپارٹمنٹ اسٹور پر ٹرک حملہ، 3 ہلاک

A police officer in a gas mask attends the scene after a truck crashed into a department store injuring several people in central Stockholm, Sweden, Friday April 7, 2017. (Noella Gow TT News Agency via AP)

’’یہ دہشت گرد حملے ہے‘‘ سویڈن کے وزیراعظم کادعویٰ، عوام میں سنسنی، اغوا شدہ ٹرک کا استعمال
اسٹاکہوم ۔ 7 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سویڈن کے دارالحکومت اسٹاکہوم کے وسطی علاقہ کے ایک بڑے ڈپارٹمنٹ اسٹور پر کئے گئے حملے میں حملہ آور نے تیز رفتاری کے ساتھ اپنی ٹرک کو اس اسٹور میں گھسا دیا جس کے نتیجہ میں کم سے کم تین افراد ہلاک اور دیگر کئی زخمی ہوئے ہیں۔ وزیراعظم اسٹیفان لاف وین نے کہا ہیکہ تمام اشاروں سے شبہ ہوتا ہیکہ یہ دہشت گرد حملہ تھا۔ حملہ کے بعد مصروف علاقہ میں پریشان حال افراد خوف و سنسنی میں اپنے بچاؤ کیلئے دوڑنے لگے۔ سویڈن کی انٹلیجنس ایجنسی نے کہا ہیکہ تین افرادکی ہلاکت کے علاوہ ایک کثیر تعداد زخمی بھی ہوئی ہے۔ وزیراعظم لاف وین نے کہا کہ ’’سویڈن پر حملہ کیا گیا ہے‘‘۔ جس سے اشارہ ملتا ہیکہ یہ دہشت گرد حملہ تھا‘‘۔ سویڈن کے سرکاری نشریاتی ادارہ ایس وی ٹی نے کہا کہ اس مقام پر چند گولیاں بھی چلائی گئی تھیں، لیکن واضح نہیں ہوسکا کہ کس نے گولی چلائی تھی۔ پولیس نے کہا کہ وہ بھی اس کی توثیق نہیںکرسکتے۔ رواں ٹیلیویژن فٹیج میں دکھایا گیا کہ ڈورٹننگاٹن اسٹریٹ پر واقع اہلینس ڈپارٹمنٹ اسٹور سے دھواں اٹھ رہا تھا۔ اس ڈپارٹمنٹ اسٹور کا سویڈن میں وسیع نٹ ورک ہے۔ اس عمارت میں روزمرہ کے استعمال کی ضروری اشیاء کے متعدد اسٹورس ہیں۔ مقام واقعہ کے تناظر پر مبنی تصاویر میں دکھایا گیا کہ بیر کا ایک لڑکی اسٹور سے ٹکرا رہا ہے۔ مقامی روزنامہ نے خبر دی ہیکہ بیر بنانے والے ادارہ اسپنڈرپس کے ایک ٹرک کا گذشتہ روز اغواء کیا گیا تھا۔ اسٹاکہوم میں آج کا یہ واقعہ اس مقام سے بہت قریب پیش آیا جہاں ڈسمبر 2010ء میں تیمور عبدالوہاب نے جو برطانیہ میں مقیم سویڈن کا شہری تھا، ایک خودکش بمبار دھماکہ کیا گیا جس میں وہ ہلاک اور دیگر دو زخمی ہوئے تھے۔ عبدالوہاب نے اس امید کے ساتھ کار بم دھماکہ کیا تھا کہ اس سے ڈرو ٹننکائن کی مصروف سڑک پر کئی افراد ہلاک ہوں گے۔ کسی نے بھی اس حملہ کی تاحال کوئی ذمہ داری قبول نہیں کی ہے لیکن یوروپ میں ہوئے حالیہ انتہاء پسند حملوں میں موٹر کار یا ٹرک ہی استعمال کئے گئے تھے۔ فرانس کے شہر نائیس میں گذشتہ سال جولائی کے دوران ٹرک حملہ میں 86 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ بعدازاں برلن کے ایک کرسمس مارکٹ میں ٹرک دہشت گرد حملے میں دیگر 12 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ وزیراعظم نریندر مودی نے اس حملہ کی مذمت کی۔

TOPPOPULARRECENT