Wednesday , November 22 2017
Home / ہندوستان / اسکولوں میں بھگوت گیتا کی تعلیم کو لازمی قرار دینے لوک سبھا میں بل

اسکولوں میں بھگوت گیتا کی تعلیم کو لازمی قرار دینے لوک سبھا میں بل

نئی دہلی ۔ 10 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) لوک سبھا میں آج پیش کردہ 103 خانگی ارکان کے بلوں کے درمیان تعلیمی اداروں میں اخلاقی تعلیم موضوع پر بھگوت گیتا کی تعلیم دینے کو لازمی قرار دینے والا بل بھی پیش کیا گیا ہے۔ ایک خانگی رکن کے بل کو بی جے پی رکن رمیش بدھوری نے پیش کیا۔ ایک اور بی جے پی رکن مہیش گری نے دیکھ بھال اور صاف ستھرائی بل 2016ء کو متعارف کروایا جس کے ذریعہ عوامی مقامات پر پیشاب کرنے، تھوکنے اور کچرا ڈالنے پر پابندی عائد کی جائے گی۔ اس بل کے ذریعہ عوامی مقامات کے اطراف صحتمند اور صاف ستھرا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ بی جے پی کے رشی کانت دوبے نے ملک میں نوجوانوں کی مجموعی ترقی کیلئے جامع پالیسی فراہم کرنے کا ایک بل متعارف کرایا۔ ایم سی پی پی کے سپریا سولے نے خواتین بل 2016 کے خلاف مقدمات کی سماعت کیلئے خصوصی عدالتوں کے قیام کا مطالبہ کیا۔ کانگریس کے رنجیت رنجن نے شادیوں کو سادگی سے انجام دینے اور بیجا مصارف کو روکنے کیلئے ایک قانون پاس کرنے پر زور دی اور اس سلسلہ میں بل پیش کیا۔

TOPPOPULARRECENT