Thursday , November 23 2017
Home / ہندوستان / اسکولی طالبات کیلئے موبائیل فون کا استعمال ممنوعہ گجرات میں ایک گا ؤں کی پنچایت کا فیصلہ

اسکولی طالبات کیلئے موبائیل فون کا استعمال ممنوعہ گجرات میں ایک گا ؤں کی پنچایت کا فیصلہ

احمد آباد ۔ 22 ۔ فروری (سیاست ڈاٹ کام) گجرات میں ضلع مہاسانہ کے ایک گاؤں میں نابالغ لڑکیوں کے موبائیل فونس کے استعمال پر پابندی عائد کردی گئی اور یہ ادعا کیا گیا کہ یہ مواصلاتی آلہ انہیں تعلیم سے دور کردیا ہے ۔ کڈی تعلقہ کے موضع سورد کی پنچایت نے حال ہی میں یہ پابندی نافذ کردی کہ اگر کوئی لڑکی سیل فون استعمال کرتے ہوئے پائی گئی تو 2100 روپئے کا جرمانہ عائد کیا جائے گا  اور انہیں مکان میں والدین کی موجو دگی میں موبائیل فون کے ا ستعمال کی اجازت رہے گی۔ گاؤں کے سرپنچ ویوش ور نگر نے بتایا کہ پابندی کا فے صلہ پنچا یت نے اتفاق رائے سے کیا ہے کیونکہ دیہاتیوں کی اکثریت کا یہ احساس ہے کہ موبائیل فون کا استعمال نو عمر طالبات اور ان کے والدین کیلئے مسائل پیدا کررہے ہیں۔ پنچایت کے علم میں یہ بات بھی آئی ہے کہ موبائیل ، چوری چوری چپکے چپکے ، عاشقی کیلئے استعمال کیا جارہا ہے ۔ مسٹر وانکر نے بتایا کہ تمام دیہاتیوں نے 18 سال سے کم عمر کی طالبات کی جانب سے سیل فون کے استعمال پر پابندی سے اتفاق کرلیا ہے ۔ تحدیدات کی خلاف ورزی پر 2100 روپئے جرمانہ وصول کیا جائے گا۔ تاہم لڑکیوں کو یہ اجازت رہے گی کہ اپنے مکان میں والدین ک زیر نگرانی موبائیل فون استعمال کرسکتی ہیں لیکن گاؤں میں سیل فون ہاتھ میں لیکر گھوم نہیں سکتیں اگرچیکہ یہ امتناع صرف اسکولی طالبات پر عائد نہیں ہیں۔ کالج جانے والی خواتین کو استثنیٰ دیا گیا ہے ۔ نابالغ لڑکیوں پر پابندی کی مدافعت کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ٹکنالوجی کی تباہی سے بچانے کیلئے یہ اقدامات ضروری تھا۔

TOPPOPULARRECENT