Friday , January 19 2018
Home / کھیل کی خبریں / اشون کو قطعی 11 کھلاڑیوں میں شامل ہونا چاہئے: بیدی

اشون کو قطعی 11 کھلاڑیوں میں شامل ہونا چاہئے: بیدی

نئی دہلی 23 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) لارڈس کے تاریخی میدان پر ہندوستانی ٹیم کی یادگار کامیابی کی ستائش اور اِس سے متاثر نظر آنے والے ٹیم کے لیجنڈ اور سابق اسپنر بشن سنگھ بیدی نے کہا ہے کہ انگلینڈ کے دورہ پر روی چندرن اشون کو قطعی 11 کھلاڑیوں کا حصہ ہونا چاہئے۔ خبررساں ایجنسی پی ٹی آئی کو دیئے گئے ایک خصوصی انٹرویو میں بیدی نے کہاکہ ہند

نئی دہلی 23 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) لارڈس کے تاریخی میدان پر ہندوستانی ٹیم کی یادگار کامیابی کی ستائش اور اِس سے متاثر نظر آنے والے ٹیم کے لیجنڈ اور سابق اسپنر بشن سنگھ بیدی نے کہا ہے کہ انگلینڈ کے دورہ پر روی چندرن اشون کو قطعی 11 کھلاڑیوں کا حصہ ہونا چاہئے۔ خبررساں ایجنسی پی ٹی آئی کو دیئے گئے ایک خصوصی انٹرویو میں بیدی نے کہاکہ ہندوستان نے انگلینڈ کے خلاف جو ابتدائی دو مقابلے کھیلے ہیں اِس کے لئے قطعی گیارہ کھلاڑیوں میں اشون کو شامل کیا جانا چاہئے نہ کہ اسٹیورٹ بنی کو ٹیم کا حصہ بنایا جانا چاہئے تھا۔ بیدی نے مزید کہاکہ یہ اہم نہیں ہے کہ ٹیم کو کامیاب کھلاڑیوں کا اشتراک بنایا جائے بلکہ یہ ضروری ہے کہ ٹیم میں ہر رول نبھانے والا کھلاڑی موجود رہے جیسا کہ دیکھا گیا ہے اشون کو ٹیم میں شامل نہیں کیا گیا اور اِن کی بجائے مرلی وجئے سے آف اسپن بولنگ کرائی گئی ہے جوکہ ناقابل فہم فیصلہ ہے۔

انگلینڈ کے مظاہروں کے متعلق اظہار خیال کرتے ہوئے بیدی نے کہاکہ میزبان ٹیم انتہائی بے بس دکھائی دے رہی ہے۔ جیسا کہ اِس نے اپنے معیار کے مطابق مظاہرہ نہیں کیا جبکہ ہندوستانی ٹیم نے لارڈس میں غیرمعمولی مظاہرہ کرتے ہوئے تاریخ ساز کامیابی حاصل کی ہے۔ سیریز میں ہندوستانی ٹیم کے روشن امکانات کو قبول کرتے ہوئے بیدی نے کہاکہ مہندر سنگھ دھونی کی زیرقیادت ٹیم بہترین مظاہرہ کررہی ہے حالانکہ اِسے ٹاس جیتنے کا موقع بھی نہیں ملا۔ مقابلہ کے دوران کھلاڑیوں کے مظاہروں کا حوالہ دیتے ہوئے بیدی نے کہاکہ انگلش ٹیم کے سینئر کھلاڑی کپتان بشمول ایان بیل اور اسٹیورٹ ناکام ہورہے ہیں تو دوسری جانب ہندوستانی نوجوان کھلاڑیوں نے اپنے معیار کو بلند کرتے ہوئے ٹیم کی کامیابی میں اہم رول ادا کرنے والے مظاہرے کئے ہیں۔ ہندوستانی کھلاڑیوں کے لئے بہتر مظاہروں کا جہاں وقت آیا ہے وہیں انگلش کھلاڑیوں کے لئے مشکل وقت چل رہا ہے۔

مظاہروں کے عروج کا تذکرہ کرتے ہوئے بیدی نے کہاکہ انگلش کھلاڑیوں نے اپنا عروج حاصل کیا تھا اب اِن کے مظاہرے معیار کے مطابق بھی نہیں ہیں۔ دوسری جانب ہندوستانی ٹیم میں شامل نوجوان کھلاڑی ویراٹ کوہلی، اجنکیا راہنے، روہت شرما، ایشانت شرما، محمد سمیع اور بھوبنیشور کمار ابھی اپنے عروج پر نہیں پہونچے ہیں لیکن اِن کے ابتدائی بہتر مظاہروں نے بڑی تبدیلی اور فرق پیدا کردیا ہے۔ حالانکہ سینئر کھلاڑیوں کی سبکدوشی کے بعد ہندوستانی ٹیم کو بھی اپنے نشیب کا دور گزارنا پڑا تھا۔ آل راؤنڈر کے ضمن میں اظہار خیال کرتے ہوئے بیدی نے رویندر جڈیجہ اور اسٹیورٹ بنی کو معیاری آل راؤنڈر ماننے سے انکار کردیا اور کہاکہ یہ کھلاڑی آل راؤنڈر کا مقام حاصل نہیں کرسکتے۔ ماضی کا حوالہ دیتے ہوئے بنی نے کہاکہ رے لنڈ وال نے انگلینڈ کے خلاف دو ٹسٹ سنچریاں اسکور کی تھیں لیکن وہ آل راؤنڈر نہیں بلکہ ایک بولر تھے۔ آل راؤنڈرس کی فہرست میں گیری سوبرس ، عمران خان، کپل دیو، رچرڈ ہیڈلی اور ایان بوتھم ایسے نام ہیں جنھیں معیاری اور بہترین آل راؤنڈر قرار دیا جاسکتا ہے۔ انگلش کپتان الیسٹر کک پر تنقید کرتے ہوئے بیدی نے کہاکہ کپتان کو اپنے متعلق سخت فیصلہ کرنا چاہئے کیونکہ وہ آسٹریلیا، سری لنکا اور اب ہندوستان کے خلاف بھی ناکام ہوچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT