Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / اقامتی اسکولس اسٹاف کا عنقریب تقررات

اقامتی اسکولس اسٹاف کا عنقریب تقررات

ٹیچرس، نرسیس، فزیکل ایجوکیشن ، آرٹ انسٹرکٹرس اور سینئر اسسٹنٹس کی جائیدادیں شامل : سید عمر جلیل

حیدرآباد۔/13مارچ، ( سیاست نیوز) تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ اندرون دو ماہ اقلیتی اقامتی اسکولس کے 1960 افراد پر مشتمل اسٹاف کے تقررات کا عمل مکمل کرلیا جائے گا۔ محکمہ اقلیتی بہبود میں اسٹاف کی تفصیلات کے ساتھ فائیل محکمہ فینانس کو روانہ کی ہے اور اس کی منظوری کے ساتھ ہی پبلک سرویس کمیشن کو تقررات کیلئے لکھا جائے گا۔ سکریٹری اقلیتی بہبود عمر جلیل نے بتایا کہ تین مرحلوں میں یہ تقررات مکمل کئے جائیں گے اور تقررات کا عمل روسٹر سسٹم کے تحت رہے گا۔ پہلے مرحلہ میں 700 جائیدادوں پر تقررات ہوں گے جن میں پرنسپالس کے 70، ٹی جی ٹی 350، اسٹاف نرس 70، فزیکل ایجوکیشن ٹیچر 70 ، آرٹ اینڈ میوزک انسٹرکٹر 70اور سینئر اسسٹنٹس کی 70جائیدادیں شامل ہوں گی۔ اس کے علاوہ آؤٹ سورسنگ کی بنیاد پر پہلے سال 140 افراد کا تقرر ہوگا جن میں 70 جونیر اسسٹنٹ اور 70 سب آرڈینیٹ ہوں گے۔حکومت نے 120اقامتی اسکولس کیلئے 4500کروڑ کا تخمینہ مقرر کیا ہے اور پہلے مرحلہ میں 2000کروڑ سے 70انگلش میڈیم اقامتی مدارس قائم کئے جائیں گے جن میں 37 بوائز اور 33 گرلز کیلئے ہوں گے۔ تمام اقامتی اسکولس میں ذریعہ تعلیم انگریزی ہوگا جبکہ اردو اور تلگو لازمی مضمون کے طور پر شامل ہوں گے۔ پانچویں تا انٹر میڈیٹ تک مفت تعلیم کا انتظام رہے گا اور جون سے پانچویں تا ساتویں کلاسیس شروع کی جائیں گی۔ پہلے مرحلہ میں 50 کرایہ کی عمارتوں کا انتخاب کرلیا گیا ہے جبکہ ایک سال میں پختہ عمارتیں تعمیر کرلی جائیں گی۔ ہر اسکول میں طلبہ کی تعداد 240رہے گی اور ہر کلاس میں 40پر مبنی دو سیکشن ہوں گے۔ زائد درخواستوں کی صورت میں اسکریننگ ٹسٹ رکھا جائے گا۔ انگریزی میں کمزور طلبہ کیلئے برج کورس کے آغاز کی تجویز ہے۔ لڑکیوں کیلئے ضلع اور منڈل مستقر پر عمارتوں کی تعمیر کا منصوبہ ہے۔ ہر اسکول 5 ایکر اراضی پر مشتمل ہوگا اور ہر اسکول میں 75 فیصد طلبہ کی تعداد اقلیت سے ہوگی جبکہ باقی 25فیصد مختلف دیگر طبقات کے طلبہ ہوں گے۔ اسکول میں اخلاقیات کا مضمون بھی شامل رہے گا۔اسکولوں میں طلبہ کی درکار تعداد کو یقینی بنانے اور اقلیتوں میں شعور بیداری کیلئے ڈائرکٹر جنرل اینٹی کرپشن اے کے خاں نے جمعہ کو کمشنر آفس پرانی حویلی میں مسلم مذہبی قائدین اور ماہرین تعلیم کا اجلاس طلب کیا ہے۔ حکومت نے اقامتی اسکولس کیلئے تلنگانہ میناریٹیز ریسیڈنشیل ایجوکیشنل انسٹی ٹیوشنس سوسائٹی قائم کی گئی ہے جس کے سرپرست اعلیٰ ڈپٹی چیف منسٹر محمود علی ہیں جبکہ صدرنشین ڈپٹی چیف منسٹر کڈیم سری ہوں گے۔ اے کے خاں کو سوسائٹی کا نائب صدرنشین مقرر کیا گیا ہے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے بتایا کہ مکہ مسجد کی تزئین نو اور چھت کی مرمت کیلئے چیف منسٹر نے مکمل منصوبہ تیار کرنے کی ہدایت دی ہے۔ گنبدان قطب شاہی کی تزئین نو کرنے والے شرت چندرا کو یہ ذمہ داری دی گئی ہے۔ منصوبہ کی تیاری کے بعد جلد سے جلد پراجکٹ پر عمل کیا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ مکہ مسجد کے تمام سی سی ٹی وی کیمرے غیر کارکرد ہوچکے ہیں جنہیں تبدیل کرنے کیلئے تخمینہ تیار کیا جارہا ہے۔ مکہ مسجد کے امام اور دیگر ملازمین کی تنخواہوں میں اضافہ کی تجویز حکومت کو روانہ کی گئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT