Tuesday , September 25 2018
Home / Top Stories / اقتدار ’قاتل‘ کے حوالے نہ کریں

اقتدار ’قاتل‘ کے حوالے نہ کریں

نئی دہلی ؍ غازی آباد ۔ 9 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سماج وادی پارٹی لیڈر اعظم خان کے اس ریمارک پر آج ایک تنازعہ کھڑا ہوگیا کہ کارگل کی جنگ دراصل مسلم سپاہیوں نے جیتی تھی۔ سیاسی جماعتوں نے اس ریمارک پر شدید تنقید کی اور الیکشن کمیشن سے کارروائی کا مطالبہ کیا۔ چنانچہ الیکشن کمیشن نے سماج وادی پارٹی لیڈر اور اترپردیش کے وزیر اعظم خان کو کارگ

نئی دہلی ؍ غازی آباد ۔ 9 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) سماج وادی پارٹی لیڈر اعظم خان کے اس ریمارک پر آج ایک تنازعہ کھڑا ہوگیا کہ کارگل کی جنگ دراصل مسلم سپاہیوں نے جیتی تھی۔ سیاسی جماعتوں نے اس ریمارک پر شدید تنقید کی اور الیکشن کمیشن سے کارروائی کا مطالبہ کیا۔ چنانچہ الیکشن کمیشن نے سماج وادی پارٹی لیڈر اور اترپردیش کے وزیر اعظم خان کو کارگل تنازعہ اور نریندر مودی کے خلاف متنازعہ ریمارکس پر نوٹس وجہ نمائی جاری کی ہے۔ کمیشن نے کہا کہ بادی النظر میں اعظم خان نے انتخابی ضابطہ اخلاق کی خلاف ورزی کی ہے۔

انہیں 11 اپریل تک اس بات کا جواب دینے کی ہدایت دی گئی کہ متنازعہ ریمارکس پر ان کے خلاف کارروائی کیوں نہ کی جائے۔ اعظم خان نے 7 اپریل کو غازی آباد میں یہ کہتے ہوئے تنازعہ کھڑا کردیا تھا کہ مسلم سپاہیوں نے 1999ء کارگل جنگ میں پاکستان کے خلاف ہندوستان کی کامیابی کو یقینی بنایا۔ انہوں نے 5 اپریل کو رام پور میں ریالی سے خطاب کے دوران مبینہ طور پر انتخابی مشنری کے خلاف دھمکی آمیز لہجہ اختیار کیا۔ اس کے علاوہ 2 اپریل کو انہوں نے مودی کے خلاف مبینہ طور پر تضحیک آمیز زبان استعمال کی تھی۔ سیاسی جماعتوں بشمول بی جے پی، کانگریس، جنتادل (یو) نے اعظم خان کے ریمارک پر تنقید کرتے ہوئے الیکشن کمیشن سے کارروائی کا مطالبہ کیا تھا۔ اعظم خان نے انتخابی ریالی میں کارگل لڑائی کا ذکر چھیڑتے ہوئے یہ بھی کہا تھا کہ کامیابی کیلئے یہ جنگ کرنے والے ہندو سپاہی نہیں تھے۔ درحقیقت مسلم سپاہیوں نے لڑائی میں ہمیں کامیابی دلائی۔

اس دوران اعظم خان نے آج سمبھل (اترپردیش) میں پارٹی امیدوار کی انتخابی مہم کے دوران رائے دہندوں سے خواہش کی کہ وہ عنان اقتدار ’’قاتل‘‘ کے حوالے نہ کریں۔ انہوں نے کہا کہ ملک کو ایک قاتل کے ہاتھوں میں نہیں دیا جانا چاہئے۔ مظفرنگر کے قاتلوں کا بدلہ بٹن دبا کر لیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ ہم کسی ایسے شخص کو ہندوستان کا بادشاہ بننے نہیں دے سکتے جس کے کردار پر داغ لگا ہوا ہو۔ ان کا اشارہ بی جے پی وزارت عظمیٰ امیدوار نریندر مودی کی طرف تھا۔ اعظم خان نے کہا کہ نریندر مودی ملک کے بادشاہ بننے کا خواب دیکھ رہے ہیں لیکن ان کی سوچ بہت ہی چھوٹی ہے۔ وہ معمولی باتوں جیسے ان کے بھینسوں کی چوری اور بازیابی کا بھی انتخابی تقریروں میں ذکر کرتے ہیں۔ اس سے ان کی سیاسی غیرسنجیدگی کا اندازہ ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ درحقیقت نریندر مودی ایک معمولی سطح کے آدمی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT