Tuesday , September 25 2018
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اداروں کی تقسیم پر حکومت تلنگانہ کی توجہ مرکوز

اقلیتی اداروں کی تقسیم پر حکومت تلنگانہ کی توجہ مرکوز

اردو اکیڈیمی اور فینانس کارپوریشن کی تقسیم میں تیز رفتاری، ریمنڈ پیٹر اوراحمد ندیم کے علحدہ اجلاس

اردو اکیڈیمی اور فینانس کارپوریشن کی تقسیم میں تیز رفتاری، ریمنڈ پیٹر اوراحمد ندیم کے علحدہ اجلاس
حیدرآباد۔15۔ڈسمبر (سیاست نیوز) تلنگانہ حکومت نے اقلیتی اداروں کی تقسیم پر توجہ مرکوز کی ہے تاکہ ان اداروں کی کارکردگی کو بہتر بنایا جاسکے۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن اور اردو اکیڈیمی کی تقسیم کا عمل تیز کردیا گیا ہے۔ اس سلسلہ میں پرنسپل سکریٹری سماجی بھلائی ریمنڈ پیٹر اور سکریٹری اقلیتی بہبود احمد ندیم نے آج علحدہ علحدہ طورپر جائزہ اجلاس منعقد کیا ۔ ان عہدیداروں نے اقلیتی اداروں کی تقسیم میں موجود تکنیکی دشواریوں کے خاتمہ پر تجاویز حاصل کیں۔ بتایا جاتا ہے کہ ان اداروں کی تقسیم کے سلسلہ میں حکومت کو ضروری کارروائی کیلئے رپورٹ پیش کی جائے گی۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن کی تقسیم میں اہم رکاوٹ کمپنیز ایکٹ ہے۔ فینانس کارپوریشن کمپنیز ایکٹ کے تحت آتا ہے اور اس کی تقسیم سے قبل تلنگانہ حکومت کی جانب سے تلنگانہ اقلیتی فینانس کارپوریشن کا کمپنیز ایکٹ کے تحت رجسٹریشن لازمی ہوگا۔ اسی طرح اردو اکیڈیمی سوسائٹیز ایکٹ کے تحت آتی ہے۔ دونوں ریاستوں میں حج کمیٹی کا سوسائٹیز ایکٹ کے تحت رجسٹریشن کرانا پڑے گا۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے اس سلسلہ میں ایک رپورٹ حکومت کو روانہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ ان دونوں اہم اداروں کی تقسیم کا عمل قواعد کے مطابق شروع کیا جاسکے۔ حج کمیٹی کو عملاً تقسیم کردیا گیا اور تلنگانہ حج کمیٹی قائم کی جاچکی ہے۔ تاہم آندھراپردیش میں علحدہ حج کمیٹی کے قیام تک موجودہ حج کمیٹی آندھراپردیش کے امور کی نگرانی کرے گی۔ آندھراپردیش حکومت کی جانب سے حج کمیٹی کی تشکیل میں کسی تاخیر کی صورت میں وہ تلنگانہ حج کمیٹی سے یادداشت مفاہمت پر دستخط کرے گی تاکہ حج 2015 ء کیلئے تلنگانہ حج کمیٹی انتظامات کرے۔ اقلیتی اداروں کے ملازمین اور اثاثہ جات کی تقسیم کرتے ہوئے حکومت کو رپورٹ روانہ کی گئی ہے۔ اقلیتی اداروں میں ملازمین کی تعداد کافی کم ہے اور تقسیم کی صورت میں دونوں ریاستوں میں اداروں کو چلانے کیلئے عہدیداروں اور ملازمین کی قلت کا سامنا کرنا پڑے گا۔ اسی دوران اقلیتی اداروں میں تقررات کیلئے سرکاری حلقوں میں پیروی تیز ہوچکی ہے۔ بعض مذہبی شخصیتوں کو چیف منسٹر اور ڈپٹی چیف منسٹر کے پاس نمائندگی کرتے دیکھا گیا ، جو حج کمیٹی کی صدارت میں دلچسپی رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ اردو اکیڈیمی کی صدارت کیلئے بعض ٹی آر ایس قائدین دوڑ دھوپ کر رہے ہیں ۔ چیف منسٹر کے دفتر کے ذرائع کا کہنا ہے کہ اداروں کی تقسیم کی تکمیل کے بعد ہی تقررات پر غور کیا جائے گا ۔ تاہم چیف منسٹر نے موزوں شخصیتوں کے بارے میں پارٹی کے سینئر قائدین سے تفصیلات حاصل کرلی ہیں۔

TOPPOPULARRECENT