Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اداروں کی کارکردگی بہتر بنانے جائزہ اجلاس

اقلیتی اداروں کی کارکردگی بہتر بنانے جائزہ اجلاس

منگل کو اقامتی اسکولوں کی کارکردگی کا جائزہ: ڈپٹی چیف منسٹر محمود علی
حیدرآباد۔/7 اکٹوبر، ( سیاست نیوز) اقلیتی اداروںکی کارکردگی بہتر بنانے کیلئے ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی نے آئندہ ہفتہ اقلیتی اداروں کا جائزہ اجلاس طلب کیا ہے۔ منگل 10اکٹوبر کو اقلیتی اقامتی اسکول سوسائٹی کا جائزہ اجلاس منعقد ہوگا جس میں تلنگانہ میں قائم کردہ 204 اقلیتی اقامتی اسکولس اور 2 اقامتی جونیر کالجس کی کارکردگی کا جائزہ لیا جائے گا۔ حکومت کے مشیر و صدرنشین اقامتی اسکول کمیٹی اے کے خاں اور سکریٹری بی شفیع اللہ کے علاوہ دیگر عہدیدار اجلاس میں شرکت کریں گے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ اقلیتوں کی تعلیمی پسماندگی دور کرنے کیلئے چیف منسٹر نے اقامتی اسکولس قائم کئے ہیں جو ملک بھر میں اپنی نوعیت کی منفرد اسکیم ہے۔ ان اسکولوں میں ہزاروں کی تعداد میں اقلیتی طلبہ معیاری تعلیم حاصل کررہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کارکردگی کے سلسلہ میں جو بھی کمیاں یا خامیاں ہیں انہیں دور کیا جائے گا۔ انہوں نے بتایا کہ اسکولوں میں مخلوعہ نشستوں پر داخلوں کیلئے رضاکارانہ تنظیموں کے ذریعہ مہم چلائی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ اقلیتوں کو اس سہولت سے بھرپور استفادہ کرنا چاہیئے۔ اسکولوں میں کارپوریٹ طرز کی بنیادی سہولتیں فراہم کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہر طالب علم پر حکومت کی جانب سے سالانہ 80 ہزار روپئے خرچ کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ آنے والے دنوں میں اسکولوں کی کارکردگی مزید بہتر ہوگی۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ 12 اکٹوبر کو وقف بورڈ کی کارکردگی سے متعلق جائزہ اجلاس طلب کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ کی آمدنی میں اضافہ اور جائیدادوں کے تحفظ کے سلسلہ میں حکمت عملی تیار کی جائے گی۔ محمود علی نے کہا کہ جاریہ اراضی سروے میں اوقافی اراضیات کے تحفظ کیلئے ضلع کلکٹرس کو ہدایات جاری کی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ وقف بورڈ کی جانب سے ریونیو عہدیداروں کو وقف ریکارڈ حوالے کرنے کا کام شروع ہوچکا ہے۔ محمود علی نے بتایا کہ اقلیتی فینانس کارپوریشن کی اسکیمات پر موثر عمل آوری کیلئے جائزہ اجلاس میں اہم فیصلے کئے جاسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ کارپوریشن کے ذریعہ بعض نئی اسکیمات کے آغاز کی تجویز ہے۔ انہوں نے کہا کہ غریب اقلیتوں کی معاشی پسماندگی کے خاتمہ کیلئے کارپوریشن کی اسکیمات معاون ثابت ہوسکتی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ سکریٹری اقلیتی بہبود سے خواہش کی گئی ہے کہ اقلیتی اداروں کی کارکردگی پر رپورٹ اور اپنی تجاویز پیش کریں۔

TOPPOPULARRECENT