Tuesday , January 16 2018
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اسکیمات پر موثر عمل آوری اور بجٹ کو خرچ کرنے کا مشورہ

اقلیتی اسکیمات پر موثر عمل آوری اور بجٹ کو خرچ کرنے کا مشورہ

حیدرآباد ۔ 3 ۔ فروری (سیاست نیوز) چیف سکریٹری ڈاکٹر پی کے موہنتی نے آج محکمہ اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اقلیتی اداروں کی کارکردگی اور اسکیمات پر عمل آوری کا جائزہ لیا۔ انہوں نے محکمہ کی کارکردگی کی ستائش کرتے ہوئے اسکیمات پر موثر عمل آوری اور الاٹ کردہ بجٹ کو مکمل خرچ کرنے کا مشورہ دیا ۔ اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود

حیدرآباد ۔ 3 ۔ فروری (سیاست نیوز) چیف سکریٹری ڈاکٹر پی کے موہنتی نے آج محکمہ اقلیتی بہبود کے اعلیٰ عہدیداروں کے ساتھ اقلیتی اداروں کی کارکردگی اور اسکیمات پر عمل آوری کا جائزہ لیا۔ انہوں نے محکمہ کی کارکردگی کی ستائش کرتے ہوئے اسکیمات پر موثر عمل آوری اور الاٹ کردہ بجٹ کو مکمل خرچ کرنے کا مشورہ دیا ۔ اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود سید عمر جلیل، مینجنگ ڈائرکٹر اقلیتی فینانس کارپوریشن پروفیسر ایس اے شکور، اگزیکیٹیو آفیسر حج کمیٹی ایم اے حمید اور وقف سروے کمشنر حسن علی بیگ اور دیگر عہدیدار جائزہ اجلاس میں موجود تھے۔ بعد میں اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود نے بتایا کہ حکومت نے جاریہ مالیاتی سال اقلیتی بہبود کیلئے 1027 کروڑ روپئے مختص کئے ہیں جس میں سے ابھی تک 674 کروڑ 11 لاکھ روپئے جاری کئے گئے اور محکمہ کے مختلف اداروں کی اسکیمات پر 419 کروڑ 15 لاکھ روپئے خرچ کئے گئے ہیں ۔ انہوں نے بتایا کہ چیف سکریٹری نے اسکیمات پر عمل آوری اور حقیقی مستحقین تک اس کے فوائد کو پہنچانے پر توجہ دینے کا مشورہ دیا ۔ چیف سکریٹری کو بتایا گیا کہ حکومت نے اسکالرشپ کیلئے 310 کروڑ 16 لاکھ روپئے مختص کئے ہیں، جس میں 72 کروڑ 45 لاکھ روپئے جاری کردیئے گئے جبکہ فیس بازادائیگی اسکیم کے تحت 320 کروڑ روپئے مختص کئے گئے تھے جس میں گزشتہ سال کے بقایہ جات کے ساتھ جملہ 340 کروڑ 45 لاکھ روپئے جاری کئے گئے ہیں ۔ سید عمر جلیل نے بتایا کہ اسکالرشپ کیلئے جملہ ایک لاکھ 85 ہزار امیدواروں نے درخواست داخل کی جن میں ایک لاکھ 66 ہزار امیدواروں کو رقم جاری کردی گئی ۔

اگر تمام امیدواروں کو بھی اسکالرشپ جاری کردیا جائے تو 100 کروڑ روپئے ہی خرچ ہوں گے ۔ اس طرح 200 کروڑ روپئے فاضل رہ جائیں گے۔ جناب عمر جلیل نے کہا کہ 31 مارچ تک بھی اگر اقلیتیں درخواستیں داخل کریں تو انہیں اسکالرشپ کی رقم جاری کردی جائیں گی۔ انہوں نے اسکالرشپ کیلئے کم درخواستوں کے حصول پر حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ معاشی پسماندگی کے باوجود اقلیتیں اس اسکیم سے خاطر خواہ طور پر استفادہ نہیں کر رہی ہیں۔ اقلیتوں کو چاہئے کہ وہ اس اسکیم سے استفادہ کیلئے طلباء میں شعور بیدار کریں۔ اسپیشل سکریٹری اقلیتی بہبود نے چیف سکریٹری کو تجویز پیش کی کہ 200 کروڑ روپئے ریاست میں اقلیتی طلباء کے ہاسٹلس اور اقامتی مدارس کی تعمیر پر خرچ کرنے کی اجازت دی جائے ۔ انہوں نے بتایا کہ تعمیر کے سلسلہ میں اراضی حاصل کرلی گئی ہے۔ چیف سکریٹری نے اس تجویز سے اتفاق کرتے ہوئے بہت جلد اجازت دینے کا تیقن دیا۔ عمر جلیل نے اقلیتی اداروں میں اسٹاف کی کمی کا تذ کرہ کرتے ہوئے کہا کہ بیشتر عہدیدار و ملازمین یا تو ڈیپیوٹیشن پر خدمات انجام دے رہے ہیں یا پھر آؤٹ سورسنگ پر ہیں۔ چیف سکریٹری نے محکمہ اقلیتی بہبود میں اسٹاف کی کمی دور کرنے کیلئے مناسب تعداد میں اسٹاف الاٹمنٹ سے اتفاق کیا ہے ۔ سید عمر جلیل نے خود روزگار اسکیم سے استفادہ کی تاریخ میں توسیع کی بھی سفارش کی۔ انہوں نے وقف سروے کمشنریٹ میں اسٹاف کی تعداد میں اضافے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ وقف جائیدادوں کے سروے کا کام جلد مکمل کیا جاسکے۔ چیف سکریٹری نے اوقافی جائیدادوں کے ریکارڈ کو عاجلانہ طور پر کمپیوٹرائز کرنے کا مشورہ دیا۔ سید عمر جلیل نے اقلیتی کمیشن کے بجٹ میں اضافہ کی ضرورت ظاہر کی اور کہا کہ حکومت نے صرف 11 لاکھ 90 ہزار روپئے مختص کئے ہیں جبکہ کمیشن نے 41 کروڑ روپئے کی مانگ کی ہے۔

TOPPOPULARRECENT