Thursday , October 18 2018
Home / اضلاع کی خبریں / اقلیتی اقامتی اسکولس ، مسلمانوں کو کے سی آر کا تحفہ : عامر علی خاں

اقلیتی اقامتی اسکولس ، مسلمانوں کو کے سی آر کا تحفہ : عامر علی خاں

مسلمانوں کی معاشی پسماندگی 12 فیصد تحفظات سے ہی ممکن ، جگتیال میں اساتذہ و طالبات سے خطاب

جگتیال ۔ /14 نومبر (سیاست ڈسٹرکٹ نیوز) تلنگانہ کے شہر و اضلاع میں اقلیتی اقامتی اسکولس کا قیام اور مفت تعلیم کی فراہمی ،چیف منسٹر چندرا شیکھر راؤ کی جانب سے مسلمانوں کیلئے ایک تحفہ کے مانند ہے اور یہ ٹی آر ایس حکومت کا اہم کارنامہ ہے ، چونکہ تعلیمی سہولتوں سے مسلمان یکسر محروم تھے اور اس جانب سابق کی حکومتوں نے کوئی توجہ نہیں دی تھی ، اب یہ طلبہ کی ذمہ داری ہے کہ حکومت کی ان سہولتوں سے استفادہ کرتے ہوئے سخت جدوجہد اور عزم و حوصلہ کے ساتھ زندگی کا ایک مقصد حیات بناتے ہوئے تعلیم حاصل کریں اوراپنے ماں باپ ، خاندان کے بشمول ملک و ریاست کا نام روشن کریں ۔ مسلمانوں کی تعلیمی پسماندگی کے خاتمہ کیلئے ٹی آر ایس حکومت کا یہ اقدام قابل ستائش ہے ۔ لیکن ریاستی مسلمانوں کی معاشی پسماندگی کا خاتمہ بھی نہایت ضروری ہے جو 12 فیصد تحفظات کی فراہمی کے بغیر ناممکن ہے ۔ مسلمانوں کی معاشی پسماندگی کے سبھی معترف ہیں ۔ لیکن عملی طور پر مسلمانوں کی ترقی کیلئے انہیں جب تک 12 فیصد تحفظات فراہم نہیں ہوں گے ، اس وقت تک ان کی پسماندگی کا خاتمہ ممکن نہیں ہے ۔ اس تعلق سے آخری حد تک ہماری کوشش اور تحریک جاری رہے گی ۔ اگر مسلمانوں کو 12 فیصد تحفظات فراہم ہوجائیں تو وہ نہ صرف تعلیم بلکہ ہر شعبہ میں آگے بڑھ سکتے ہیں ۔ ان خیالات کا اظہار روزنامہ سیاست نیوز ایڈیٹر جناب عامر علی خان نے آج جگتیال کے اقلیتی اقامتی گرلز اسکول کا تفصیلی معائنہ کرنے کے بعد طالبات و اساتذہ کو مخاطب کرتے ہوئے کیا ۔ جناب عامر علی خان کا مدرسہ میں طالبات نے بیانڈ باجے اور پریڈ کے ذریعہ زبردست استقبال کیا ۔ بعد ازاں پرنسپل لکشمن چاری اور اقلیتی بہبود سپرنٹنڈنٹ محمود علی افسر نے عامر علی خان کو مدرسہ کا تفصیلی دورہ کرواتے ہوئے تمام سہولیات سے واقف کروایا ۔ جس سے عامر علی خان کافی متاثر ہوئے ۔ بعدازاں طالبات کے ساتھ منعقدہ پروگرام کو انہوں نے بحیثیت مہمان خصوصی مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی جانب سے اتنے بڑے پیمانے پر مختلف سہولیات کے ساتھ مفت تعلیم کی فراہمی قابل ستائش ہے ، طلباء کو چاہئیے کہ وہ اس سے بھرپور استفادہ کرتے ہوئے سچی لگن اور سخت محنت کے ساتھ اچھی تعلیم حاصل کرتے ہوئے ڈسپلن کے ذریعہ نہ صرف اپنا نام بلکہ والدین اور اساتذہ کے ساتھ ساتھ اپنے شہر اور ریاست کا نام روشن کریں اور اپنے مستقبل کو سنوارنے کی خواہش کی ۔ انہوں نے طالبات سے کہا کہ آپ کافی خوش قسمت ہیں کہ تعلیم فراہمی کیلئے اتنی سہولتیں فراہم کی جارہی ہیں جس کی سابق میں نظیر نہیں ملتی ۔ طالبات تعلیم کیساتھ اسپورٹس کو بھی اہمیت دیں ۔ اور انگلش میڈیم میں تعلیم سے آراستہ کیا جارہا ہے ۔ انہوں نے طلباء اور اساتذہ کی حوصلہ افزائی کیلئے امتیازی کامیابی حاصل کرنے والی طالبات کو جماعت واری پہلا ، دوسرا اور تیسرا انعام ہر سال ادارہ سیاست کی جانب سے دینے کا اعلان کیا اور ٹیچر کو بھی مضمون کے لحاظ سے انعام کا اعلان کیا ۔ انہوں نے اقلیتی اقامتی اسکول میں زیرتعلیم طالبات کو ہنر سے آراستہ کرنے کیلئے ادارہ سیاست کی جانب سے چاکلیٹ بنانے کی ترکیب مفت سکھانے (تربیت) کی فراہمی کا اعلان کیا ۔ انہوں نے طالبات سے خواہش کی کہ وہ اچھی تعلیم اور ڈسپلن کا خیال رکھیں اور ٹیچر کو ماں کا درجہ دیں اور جلد سونا جلد اٹھنے کی عادت بنانے کی خواہش کے یوم اطفال (چلڈرنس ڈے) کے موقع پر طالبہ نے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور دیگر طالبات نے نعت اور ترانہ پیش کیا ۔ اس موقع پر لکشمن چاری پرنسپل نے اسکول کی تفصیلی رپورٹ پیش کی ۔ محمود علی افسر سپرنٹنڈنٹ نے عامر علی خاں کا خیرمقدم کیا اور اقلیتی اقامتی مدرسہ کا پہلا دورہ جگتیال پر انہیں اظہار تشکر پیش کیا ۔ اس موقع پر حافظ عبدالحمید عابد نامہ نگار سہارا نے بھی مخاطب کرتے ہوئے ادارہ سیاست کی خدمات کی ستائش اور دیگر تجاویز پیش کئے ۔ اس موقع پر شیخ محی الدین منیجر سیاست حیدرآباد اور سینئر صحافی نعیم وجاہت کے علاوہ اسکول اسٹاف زبیر ، امام غوری کے علاوہ عمران دفعدار اردو دنیا کے علاوہ دیگر موجود تھے ۔

TOPPOPULARRECENT