Saturday , December 16 2017
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اقامتی اسکولس میں مخلوعہ نشستوں پر داخلوں کی مساعی

اقلیتی اقامتی اسکولس میں مخلوعہ نشستوں پر داخلوں کی مساعی

اسپاٹ داخلے جاری ، لڑکیوں کے تحفظ کے لیے خصوصی توجہ
حیدرآباد ۔ 13 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : اقلیتی اقامتی اسکولس میں 4000 نشستیں مخلوعہ ہیں ۔ داخلوں کے لیے عہدیداروں کی جانب سے اقدامات کئے جارہے ہیں ۔ لڑکیوں کے اسکولس میں سخت سیکوریٹی کے سخت انتظامات کئے جارہے ہیں ۔ ریاست تلنگانہ میں اقلیتی اقامتی اسکولس کی مخلوعہ جائیدادوں پر تقررات کرنے کے لیے تلنگانہ مینارٹیز ایجوکیشنل سوسائٹی کی جانب سے بڑے پیمانے پر اقدامات کئے جارہے ہیں ۔ گذشتہ جون کو 204 اقلیتی اقامتی اسکولس کے 53 ہزار نشستوں کے لیے ایک لاکھ درخواستیں وصول ہوئی تھیں ۔ ان درخواستوں کا جائزہ لینے کے بعد عہدیداروں نے اہل طلبہ کو داخلے دئیے تھے ۔ مزید 4000 نشستیں مخلوعہ پائی جاتی ہیں ۔ جن اسکولس میں نشستیں مخلوعہ ہیں عہدیداروں کی جانب سے اسپاٹ داخلے دئیے جارہے ہیں ۔ گذشتہ سال 71 اقلیتی اقامتی اسکولس میں 5 ، 6 ، 7 ، 8 جماعتوں میں داخلے دئیے گئے تھے ۔ جاریہ تعلیمی سال 5 ، 6 ، 7 جماعتوں میں داخلے دئیے گئے ہیں ۔ محکمہ تعلیم سے تلنگانہ مینارٹیز ایجوکیشنل سوسائٹی کو منتقل کئے گئے ۔ 12 اقلیتی تعلیمی ادارے بشمول 2 جونیر کالجس کے تمام نشستوں پر داخلے ہوگئے ہیں ۔ اضلاع عادل آباد ، محبوب نگر ، جگتیال ، ورنگل ، نلگنڈہ میں اقلیتی اقامتی اسکولس میں عوام کا زبردست ردعمل حاصل ہوا ہے ۔ جب کہ ضلع رنگاریڈی میں تمام نشستیں پر ہوگئی ہیں ۔ اقلیتی اقامتی اسکولس میں 50 فیصد اسکولس لڑکیوں کے لیے مختص کئے گئے ہیں ۔ گرلز اسکولس میں سیکوریٹی کے خصوصی اقدامات کئے جارہے ہیں ۔ سیکوریٹی گارڈس ، سی سی ٹی وی کیمرے کے ساتھ گرلز اسکولس میں خاتون عملہ کا ہی تقرر کیا گیا ہے ۔ سوائے حیدرآباد کے تمام اضلاع میں گرلز اقلیتی اقامتی اسکولس میں عوام کا مثبت ردعمل ہے ۔ چند اضلاع کے گرلز میناریٹی ریزیڈنشیل اسکولس میں بھی نشستیں مخلوعہ ہیں ۔ چند مقامات پر لڑکوں کے اسکولس میں 5 تا 10 فیصد نشستیں مخلوعہ ہیں ۔ عہدیداروں نے بتایا کہ شہر حیدرآباد کے گرلز اقامتی اسکولس میں توقع کے مطابق عوامی ردعمل حاصل نہیں ہورہا ہے ۔ ہر سال 53 ہزار طلبہ ان اقلیتی اقامتی اسکولس سے اپنی تعلیم مکمل کررہے ہیں ۔۔

TOPPOPULARRECENT