Tuesday , September 25 2018
Home / شہر کی خبریں / اقلیتی اقامتی اسکولوں میں 2200 مستقل اساتذہ کا تقرر

اقلیتی اقامتی اسکولوں میں 2200 مستقل اساتذہ کا تقرر

اندرون ایک ہفتہ منتخب امیدواروں کی فہرست کی اجرائی: شفیع اللہ

حیدرآباد۔10 ۔ جنوری (سیاست نیوز) تلنگانہ کے اقلیتی اقامتی اسکولوں میں 2200 اساتذہ کی جائیدادوں پر تقررات کیلئے اندرون ایک ہفتہ منتخب امیدواروں کی فہرست جاری کردی جائے گی ۔ سکریٹری اقامتی اسکول سوسائٹی بی شفیع اللہ آئی ایف ایس نے بتایا کہ تلنگانہ پبلک سرویس کمیشن کے ذریعہ اساتذہ کی جائیدادوں پر تقررات کا عمل مکمل ہوچکا ہے۔ 2200 باقاعدہ اساتذہ کا تقرر کیا جارہا ہے جن میں ٹی جی ٹی، پی جی ٹی، اسٹاف نرس ، پی ای ٹی اور دیگر زمرہ جات کا اسٹاف شامل رہے گا۔ انہوں نے کہا کہ اسکولوں کے قیام کے بعد عارضی اور آوٹ سورسنگ اسٹاف کے ذریعہ کام لیا جارہا تھا۔ مستقل اساتذہ کے تقرر کے بعد آوٹ سورسنگ اسٹاف کی خدمات ختم ہوجائیں گی اور تمام اسکولوں میں بہتر اور معیاری تعلیم کو یقینی بنانے پر توجہ دی جائے گی۔ شفیع اللہ نے کہا کہ پبلک سرویس کمیشن سے منتخب اساتذہ کی فہرست کی اجرائی کے بعد 21 روزہ ٹریننگ پروگرام کے انعقاد کی تجویز ہے۔ اس ٹریننگ پروگرام میں اساتذہ کو بہتر تعلیم کے طریقوں ، کلاس روم مینجمنٹ ، ڈسپلن ، طلبہ میں اعتماد سازی اور طلبہ اور اساتذہ میں بہتر روابط جیسے امور کی ٹریننگ دی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ماہرین کے ذریعہ اس ٹریننگ کا اہتمام کیا جائے گا۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ مستقل اساتذہ کے تقررات سے اقامتی اسکولوں میں معیاری تعلیم کے نئے دورکا آغاز ہوگا۔ شفیع اللہ نے کہا کہ اقلیتوں کی تعلیمی پسماندگی کے خاتمہ کیلئے چیف منسٹر کی خصوصی مساعی سے 204 اقامتی اسکول قائم کئے جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ تمام اسکولوں میں معیاری تعلیم کو یقینی بنانا سوسائٹی کی اولین ترجیح ہے۔ سوسائٹی کے صدرنشین اے کے خاں کی رہنمائی میں کارپوریٹ تعلیمی اداروں کی طرح اقلیتی طلبہ کو سہولتیں فراہم کی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اقامتی اسکولوں کی کامیابی سے تلنگانہ میں اقلیتوں کی تعلیمی ترقی ممکن ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ مستقل اساتذہ کے تقررات سے طلبہ کو بہتر تعلیم کی فراہمی میں مدد مل سکتی ہے کیونکہ یہ اساتذہ قابلیت کے ساتھ ٹرینڈ رہیں گے ۔ انہوں نے کہا کہ اسکولوں میں داخلہ کے سلسلہ میں اقلیتوں میں کافی جوش و خروش پایا جاتا ہے۔ طلبہ کے علاوہ طالبات کو بھی شریک کرانے میں والدین دلچسپی دکھا رہے ہیں۔ شفیع اللہ نے امید ظاہر کی کہ آئندہ تعلیمی سال سے اقامتی اسکولوں میں داخلوں کے رجحان میں مزید اضافہ ہوگا۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT