Wednesday , November 22 2017
Home / کھیل کی خبریں / اقلیتی ریسیڈنشیل اسکولس کے طلبہ کو تعلیم کیساتھ اسپورٹس کی خصوصی تربیت

اقلیتی ریسیڈنشیل اسکولس کے طلبہ کو تعلیم کیساتھ اسپورٹس کی خصوصی تربیت

۔53 اقلیتی طالبات کا انتخاب ،بھونگیر قلعہ میں کوہ پیمائی کے ٹریننگ کیمپ کا آغاز،دارجلنگ میں دوسرے مرحلے کا منصوبہ

حیدرآباد۔ 20 اگست (سیاست نیوز) حکومت تلنگانہ نے اقلیتی ریسیڈنشیل اسکولس کے طلباء و طالبات میں تعلیم کے ساتھ ساتھ کھیل کود کے میدان میں بھی اپنی قابلیت کا لوہا منوانے کیلئے تربیت کا آغاز کیا ہے۔ اس ضمن میں سیکریٹری اقلیتی ریسیڈنشیل ایجوکیشنل انسٹیٹیوشن سوسائٹی جناب شفیع اللہ اور مشیر حکومت تلنگانہ برائے اقلیتی اُمور جناب اے کے خاں کی ہدایت پر تلنگانہ میں قائم کردہ 205 اقلیتی اقامتی اسکولس سے ہر اسکول سے دو طلبہ کو منتخب کرتے ہوئے انہیں پانچ یومی تربیت کا بھونگیر قلعہ میں آغاز کیا ہے۔ ابتداء میں 53 طالبات کو 205 اسکولس سے خصوصی طور پر منتخب کیا گیا ہے۔ اس کے پہلے بیاچ کی تربیت کا آغاز 20 اگست سے بھونگیر قلعہ میں ہوا۔ راک کلائمبنگ (کوہ پیمائی) کی تربیت ڈاکٹر سومیشور اسپورٹس آفیسر تلنگانہ مائناریٹی ریسیڈنشیل ایجوکیشنل انسٹیٹیوشن سوسائٹی کی نگرانی میں شروع کی گئی ہے جبکہ جناب محمد علی احمد اسسٹنٹ اسپورٹس آفیسر مائناریٹی ریسیڈنشیل ایجوکیشنل انسٹیٹیوشن سوسائٹی کو راک کلائمبنگ ٹریننگ کیلئے خصوصی طور پر تعینات کیا گیا ہے۔

یہ ٹریننگ بیاچس کی شکل میں 6 ستمبر 2017ء تک جاری رہے گی۔ دوسرے بیاچ (بوائز) کا آغاز 28 اگست کو ہوگا اور یکم ستمبر تک جاری رہے گا جبکہ تیسرے اور آخری بیاچ میں بھی بوائز کو شامل کیا گیا ہے جو 2 تا 6 ستمبر تک جاری رہے گی۔ راک کلائمبنگ ٹریننگ کے دوران طالبات کی تربیت محتاط طریقہ سے دی جارہی ہے۔ 205 اسکولس سے منتخب طالبات کو ہمالیائی چوٹی پر چڑھنے کا طریقہ، احتیاطی تدابیر، صحت کا خیال اور دیگر اُمور پر خصوصی توجہ دی جارہی ہے۔ ایڈونچر کلائمبنگ اینڈ لاکنگ، بلرولنگ کی نگرانی شیکھر بابو کوچ (ایڈونچر ٹرینر) دے رہے ہیں۔ منتخبہ طالبات کو آلور ریسیڈنشیل اسکول (گرلز) بھونگیر میں قیام و طعام اور سکیورٹی کے خصوصی انتظامات کے ساتھ رکھا گیا ہے جہاں کے پرنسپل جناب محمد علیم الدین تمام تر سہولتیں فراہم کررہے ہیں جبکہ بھکشاپتی پرنسپل بوائز ریسیڈنشیل اسکول فار مائناریٹی بھونگیر بھی اس میں تعاون کررہے ہیں۔ محمد علی احمد اسسٹنٹ اسپورٹس آفیسر نے بتایا کہ تین بیاچس میں تربیت کے بعد ان بیاچس سے طلباء و طالبات کو علیحدہ علیحدہ منتخب کرکے دارجلنگ میں تربیت فراہم کی جائے گی۔ اس کے بعد ہمالیہ پر چڑھنے کے عزم اور حوصلے بڑھائے جائیں گے۔ طالبات کے پہلے بیاچ کی تربیت میں اساتذہ کے علاوہ شیخ سلیم، محمد غوث اور دیگر کا بھرپور تعاون بھی حاصل ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ حکومت کی جانب سے طلباء و طالبات میں اسپورٹس کا فروغ اور ہمالیہ کی اونچائی کے عزم کے ذریعہ بچوں کے حوصلوں میں بھی مثبت تبدیلی آئے گی۔

TOPPOPULARRECENT