Saturday , April 21 2018
Home / Top Stories / الیکٹرانک ووٹنگ مشین سے گجرات کے مسلم ووٹرس پریشان

الیکٹرانک ووٹنگ مشین سے گجرات کے مسلم ووٹرس پریشان

ای وی ایم میں چھیڑ چھاڑ کی شکایات کی سوشیل میڈیا پر گشت

چھوٹا اُدئے پور 12 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) گجرات میں کئی مسلم ووٹرس کے لئے آنے والے اسمبلی انتخابات میں کسی فکر و پریشانی کا اگر کوئی سب سے بڑا مسئلہ ہے تو وہ … ’الیکٹرانک ووٹنگ مشین‘ (ای وی ایم) ہے۔ ایک پریشان حال مسلم ووٹر نے ای وی ایم … کو ’شیطان‘ قرار دیا اور یہ بات مقامی افراد میں گپ شپ کا ایک گرما گرم موضوع بن گئی۔ تاہم ان لوگوں نے کہاکہ فکر و تشویش کے باوجود وہ اس ریاست میں 14 ڈسمبر کو ہونے والے انتخابات میں اپنا ووٹ ڈالیں گے۔ سوشیل میڈیا پر یہ مسیجس گشت کررہے ہیں کہ ای وی ایمس میں توڑ جوڑ اور چھیڑ چھاڑ کی گئی ہے۔ سرحدی ضلع چھوٹا اُدے پور میں کئی افراد ان اندیشوں پر خوفزدہ ہیں کہ ان کے ووٹ دیگر امیدواروں کو منتقل کردیئے جائیں گے۔ ایک مقامی چھوٹے تعمیراتی گتہ دار 57 سالہ سید مالا نے کہاکہ ’ہمارا ووٹ ہی ہماری سب سے بڑی طاقت ہے جو ہمارے پاس ہے اور اس کو بھی اگر کوئی بدل دیتا ہے تو جمہوریت میں ہمارے پاس باقی کیا رہ جائے گا‘‘۔ مالا نے کہاکہ الیکٹرانک ووٹنگ مشینوں پر کوئی بھروسہ نہیں ہے۔ بیلٹ پیپرس زیادہ قابل اعتبار تھے۔ مالا کے یہ ایسے جذبات تھے جنھیں اس ضلع کے دیگر کئی افراد نے بھی ظاہر کیا تھا۔ ضلع چھوٹا اُدے پور میں تین اسمبلی حلقے ہیں بالخصوص چند پڑھے لکھے افراد جنھیں واٹس اپ اور فیس بُک جیسے سوشیل میڈیا سائٹس تک رسائی حاصل ہے ای وی ایمس کے بارے میں دوسروں سے کہیں زیادہ فکرمند اور پریشان ہیں۔ کالول کالج کے ایک طالب علم سلطان حسین نے کہا ’’میں جانتا ہوں کہ اپنا ووٹ کس کو دوں گا۔ لیکن مجھے یقین نہیں ہے کہ اس (ووٹ) کی گنتی میرے پسند کے مطابق ڈالے گئے ووٹوں کے ساتھ ہی ہوگی۔ لیکن ایک بیلٹ پیپرس پر میرا ووٹ تبدیل نہیں کیا جاسکتا‘‘۔ ایک اور ووٹر نے کہاکہ اس کو ووٹر کی توثیق سے متعلق دی جانے والی پرچی وی وی پی اے ٹی پر کوئی بھروسہ نہیں ہے۔ موضع تملا کے فاروق سید نے ای وی ایمس کا شیطان سے تقابل کیا اور کہاکہ ’’ای وی ایمس چھیڑ چھاڑ کی کئی ویڈیوز سوشیل میڈیا پر موجود ہیں۔ میرا ووٹ بھی بدلا جاسکتا ہے‘‘۔ تاہم مشینوں کے بارے میں ایسی پریشانی مقامی ہندو ووٹرس میں نہیں دیکھی گئی۔ 38 سالہ نریندر سنہہ باری جس کی ایک موبائیل شاپ ہے کہاکہ کسی بھی طریقہ پر شکوک و شبہات پیدا ہوسکتے ہیں۔ ’ہمیں مشینوں پر بھروسہ کرنا چاہئے‘۔

TOPPOPULARRECENT