Friday , August 17 2018
Home / شہر کی خبریں / امریکہ میں حصول اعلیٰ تعلیم کیلئے ہندوستانی طلبہ کا ریکارڈ اضافہ

امریکہ میں حصول اعلیٰ تعلیم کیلئے ہندوستانی طلبہ کا ریکارڈ اضافہ

جملہ 10 لاکھ 8 ہزار بیرونی طلبہ کے داخلے ، امریکی ادارہ ڈورس سے 2017 رپورٹ کی اجرائی
حیدرآباد۔13نومبر(سیاست نیوز) اعلی تعلیم کے حصول کے لئے امریکہ روانہ ہونے والے ہندستانی طلبہ کی تعداد میں خاطر خواہ اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے جبکہ امریکی طلبہ میں یوروپی ممالک میں اعلی تعلیم کے حصول کا رجحان بڑھتا جا رہا ہے۔ امریکی ادارہ اوپن ڈورس سے سال 2017کی رپورٹ جاری کردی گئی ہے۔ اس رپورٹ کے مطابق جاریہ سال امریکہ میں 10لاکھ 8ہزار بیرونی طلبہ نے داخلہ حاصل کیا ہے اور ان میں بڑی تعداد چین‘ ہندستان اور سعودی عرب کے طلبہ کی ہے۔امریکہ میں تعلیم حاصل کررہے ہندستانی طلبہ کی تعداد میں گذشتہ سال سے 12فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے اور ہندستانی طلبہ کی تعداد 1لاکھ 86ہزار تک پہنچ چکی ہے۔ اوپن ڈورس کے مطابق اعلی تعلیم کے حصول کے لئے امریکہ کا رخ کرنے والے طلبہ کی تعداد میں اضافہ کا یہ ریکارڈ دنیا کے کسی بھی ملک سے زیادہ تیزی سے ہونے والا اضافہ کے طور پر دیکھا جا رہاہے۔ سال 2017 کے دوران 21ہزار ہندستانی طلبہ نے امریکی جامعات و کالجس میں داخلہ حاصل کیا ہے اور امریکہ میں گذشتہ 10برسوں کے دوران ہندستانی طلبہ کی تعداد دگنی ہو چکی ہے ۔ اس تیز رفتار اضافہ کے باوجود امریکہ میں تعلیم حاصل کر رہے ہندستانی طلبہ بہ اعتبار تعداد دوسرے نمبر پر ہیں جبکہ امریکی طلبہ میں جملہ 17.3فیصد بیرونی طلبہ زیرتعلیم ہیں۔ 56فیصد ہندستانی طلبہ جو امریکہ میں زیر تعلیم ہیں وہ امریکہ جامعات و کالجس میں گریجویشن میں ہیں ۔ امریکہ میں چین اور ہندستان کے بعد سب سے بڑی تعداد بیرونی طلبہ کی جنوبی کوریا سے تعلق رکھتی ہے جبکہ چوتھے نمبر پر سعودی عرب اور پانچویں نمبر پر کناڈا سے تعلق رکھنے والے طلبہ ہیں۔ اس کے علاوہ جن ممالک کے طلبہ امریکہ میں تعلیم حاصل کررہے ہیں ان میں ویتنام‘ تائیوان ‘ جاپان‘ برازیل سے تعلق رکھنے والے بھی شامل ہیں جن کی تعداد علی الترتیب 3 فیصد میں شمار کی جارہی ہے۔ سال 2016-17 کے دوران چین اور سعودی عرب کے علاوہ جنوبی کوریا کے طلبہ سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی تعداد میں بھاری گراوٹ ریکارڈ کی گئی ہے لیکن اس کے باوجود ان ممالک نے سرفہرست ممالک میں اپنا مقام برقرار رکھا ہے۔سعودی عرب سے تعلق رکھنے والے طلبہ کی تعداد میں 14.2فیصد کی گراوٹ ریکارڈ کی گئی ہے جبکہ جنوبی کوریا کے طلبہ کی تعداد میں 3.8فیصد گراوٹ ریکارڈ کی گئی ہے اس کے برعکس ہندستانی طلبہ کی تعداد میں 12فیصد کا اضافہ ریکارڈ کیا گیا ہے جوکہ غیر معمولی اضافہ قرار دیا جا رہاہے۔سال 2016 کے دوران بیرون ملک سے تعلق رکھنے والے طلبہ نے امریکی معیشت میں 39 بلین ڈالر کا حصہ ادا کیا ہے اور اس سے قبل کے اعداد و شمار کے مطابق بیرونی طلبہ سے امریکی معیشت کو 35بلین ڈالر کا فائدہ ہوا ہے۔

TOPPOPULARRECENT