Wednesday , January 17 2018
Home / دنیا / امریکہ میں پولیس کی گولی کا نشانہ بننے والا بچہ فوت

امریکہ میں پولیس کی گولی کا نشانہ بننے والا بچہ فوت

نقلی بندوق سے ’مسلح‘ لڑکے پر مہلک وار ، واقعہ کی تحقیقات شروع

نقلی بندوق سے ’مسلح‘ لڑکے پر مہلک وار ، واقعہ کی تحقیقات شروع
کلیولینڈ (امریکہ) ، 24 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکی ریاست اوہایو کے شہر کلیولینڈ میں کھیل کے میدان میں نقلی بندوق لے کر آنے والے ایک 12 سالہ بچے کو پولیس نے گولی مار کر ہلاک ہی کرڈالا، جس کے ساتھ ہی انکوائری شروع ہوگئی ہے اور ایک لیجسلیٹر نے مطالبہ کیا ہے کہ اس طرح کے ہتھیاروں کو چمک دار رنگ میں بنایا جائے یا کوئی خصوصی نشانات ثبت کئے جائیں۔ پولیس کے مطابق جب بچے نے ہاتھ بلند کرنے کے احکامات کو نہیں مانا تو پولیس افسر نے دو گولیاں چلائیں جن سے بچہ ہلاک ہو گیا۔ ایک شخص نے پولیس کو فون پر خبر دی تھی کہ مذکورہ بچہ ہاتھ میں بندوق لئے ہوئے ہے اور لوگوں کو ڈرا رہا ہے۔ تاہم فون کرنے والے نے کہا تھا کہ اسے یہ نہیں پتہ تھا کہ بچے کے ہاتھ میں موجود بندوق اصلی ہے یا نقلی۔ واقعہ کے مقام پر پہنچنے والی پولیس اہلکاروں میں سے ایک کی نوکری کا یہ پہلا سال ہے جبکہ دوسرے افسر کے پاس 10 سال سے زیادہ کا تجربہ ہے۔ مقامی طبی معائنہ کار نے مرنے والے بچے کا نام تمیر رائس بتایا ہے۔ کلیولینڈ پولیس کے نائب سربراہ ایڈ ٹومبا نے کہا کہ بچے کو پتلون میں پھنسائی گئی بندوق نکالنے پر دو بار گولی ماری گئی اور وہ بعد ازاں اسپتال میں جانبر نہ ہو سکا۔ ٹومبا نے بتایا کہ بچے نے نہ کسی کو کوئی دھمکی دی تھی اور نہ ہی پولیس افسران کی طرف بندوق تانی تھی۔ پولیس کے مطابق بچے کے پاس نقلی ’ایئرسوفٹ‘ بندوق تھی جو کہ ایک نیم خودکار پستول کی مانند دکھائی دے رہی تھی۔ اگرچہ اس لڑکے کی موجودگی کی اطلاع دینے والے شخص نے بندوق کے اصل یا نقل ہونے سے لاعلمی ظاہر کی تھی لیکن کلیولینڈ پولیس اسوسی ایشن کے صدر جیف فولمر کے مطابق جائے وقوع پر بھیجے گئے پولیس اہلکاروں کو یہ نہیں بتایا گیا تھا کہ پولیس کو اس بارے میں نہیں بتایا گیا تھا۔ ادھر اس معاملے کی تحقیقات شروع کر دی گئی ہیں اور دونوں پولیس افسران کو فی الحال چھٹی پر بھیج دیا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT