Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / امریکہ میں کمسن لڑکی سے بدسلوکی کے الزام پر کشمیری ایتھلیٹ تنویر حسین گرفتار

امریکہ میں کمسن لڑکی سے بدسلوکی کے الزام پر کشمیری ایتھلیٹ تنویر حسین گرفتار

ہندوستانی اسپورٹسمین بے قصور ہے، وکیل کا دعویٰ، ملزم کا تحقیقاتی افسران سے تعاون، پیر کو آئندہ پیشی

نیویارک 3 مارچ (سیاست ڈاٹ کام) ایک 24 سالہ ہندوستانی اسپورٹس مین کو یہاں ایک کمسن لڑکی کو جنسی طور پر ہراساں کرنے کے الزام کے تحت گرفتار کرلیا گیا۔ یہ ہندوستانی اسپورٹسمین تنویر حسین ریاست نیویارک کے ایک چھوٹے گاؤں ساراناک لیک میں ورلڈ اسنو شو چمپئن شپ مقابلوں میں شرکت کے لئے چند دن قبل کشمیر سے پہونچا تھا۔ حسین کو ابتداء میں امریکی ویزا دینے سے ہی انکار کردیا گیا تھا لیکن چند امریکی سنیٹری اور جہدکاروں کی تائیدی مہم کے بعد اُس کو ویزا دیا گیا تھا۔ پولیس نے کہاکہ اس پر سنگین نوعیت کی جنسی دست درازی میں ملوث ہوتے ہوئے کمسن لڑکی کے لئے خطرہ پیدا کرنے کے الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ پولیس نے اپنے ایک بیان میں کہاکہ تنویر حسین پر یہاں ایک 12 سالہ لڑکی کا جذباتی انداز میں بوسہ لینے اور لڑکی کے لباس میں ڈھپے ہوئے نازک حصوں کو چھونے کے الزامات بھی عائد کئے گئے ہیں۔ لیکن ان پر جنسی زور زبردستی کا کوئی الزام نہیں ہے۔ باور کیا جاتا ہے کہ اس اسپورٹسمین اور لڑکی کی عمر میں بہت زیادہ فرق ہونے کے نتیجہ میں شائد ایسے الزامات عائد کئے گئے ہیں۔ ان کے سوائے تنویر حسین کے خلاف مزید کوئی دوسرے الزام نہیں ہیں۔ پولیس سرجنٹ کیسزی ایئرڈن نے کہاکہ اس لڑکی اور اس کے والدین نے پولیس میں یہ شکایت درج کروائی ہے جس کے بعد پولیس نے تنویر حسین کی شناخت کی۔ وہ (تنویر) تحقیقات میں پولیس سے تعاون کررہے ہیں۔ تنویر حسین کے اس چمپئن شپ میں حصہ لینے کے لئے امریکہ میں پہونچنے سے قبل ہی کافی شہرت حاصل ہوچکی تھی کیوں کہ اُنھیں اور ایک دوسرے ایتھلیٹ عابد خاں کو نئی دہلی میں واقع امریکی سفارت خانہ نے ویزا دینے سے انکار کردیا تھا

اور یہ فیصلہ عین اُس وقت کیا گیا تھا جب امریکہ کے صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے سات مسلم ممالک کے شہریوں کے سفر امریکہ پر امتناع عائد کرنے کے لئے صدارتی حکمنامہ جاری یا تھا۔ ہندوستان اگرچہ ان سات مسلم ممالک کی فہرست میں شامل نہیں تھا لیکن ہندوستان کے دو مسلم ایتھلیٹس کی امریکی ویزا سے محرومی کو بھی صدر ٹرمپ کے حکمنامہ سے ہی مربوط کیا جارہا تھا۔ نیویارک کے علاقہ اینڈریو ڈاکس کے رہنے والے امریکی شہریوں، مقامی عہدیداروں اور امریکی سنیٹرس کرسٹن گیلی برانڈ اور چارلس شومر نے تنویر حسین اور عابد خاں کو امریکی ویزا دلانے کے لئے مہم چلائی تھی۔ اس دوران تنویر حسین کے وکیل نے کہا ہے کہ ان کے موکل بے قصور ہیں۔ اُنھوں نے کوئی غلطی نہیں کی ہے۔ قانون کی نظر میں بھی وہ بے قصور ہیں۔ عدالت میں پیشکشی پر تنویر حسین نے جن کے ہاتھوں میں ہتھکڑیاں تھیں اور وہ ورلڈ اسنو شو چمپئن شپ کے لئے مخصوص نارنجی کیاپ پہنے ہوئے تھے، جج سے کہہ رہے تھے کہ ’’صاحب، برائے مہربانی میری مدد کیجئے‘‘ (میں بے قصور ہوں)۔ تاہم جج نے ان کی درخواست پر توجہ نہ دی اور کہاکہ شائد وہ اپنے خلاف عائد ازامات کو ٹھیک طرح سے سمجھ نہیں سکے ہیں۔ برین بیرٹ ان کی پیروی کررہے ہیں۔ مقدمہ کی آئندہ سماعت پیر کو مقرر کی گئی ہے۔ تنویر حسین کو لیوس میں واقع ایسکس کاؤنٹر جیل میں رکھا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT