Friday , December 15 2017
Home / دنیا / امریکہ پر مناسب ویزاپالیسی کیلئے وزیرفینانس کا زور

امریکہ پر مناسب ویزاپالیسی کیلئے وزیرفینانس کا زور

واشنگٹن ۔15اکٹوبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ہندوستانی اطلاعات ٹکنالوجی ماہرین جو پر امریکہ آتے ہیں اور غیرقانونی تارکین وطن نہیں ہیں‘ مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی نے کہا کہ امریکہ کو اپنی ویزا پالیسی پر فیصلہ کرنے سے پہلے مناسب طور پر اس کا فیصلہ کرنا چاہیئے ۔ H1-Bویزا ایک غیرتارکین وطن ویزا ہے جس کے تحت امریکی کمپنیوں کو اجازت ہے کہ ان غیر ملکی کارکنوں کو واضح طور پر ملازمت کیلئے مقرر کریں ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستانی اطلاعاتی ٹکنالوجی کے ماہرین کی امریکہ میں بہت زیادہ طلب ہے ۔ جیٹلی نے کہا کہ انہوں نے یہ مسئلہ وزیر خزانہ اسٹیون موچن اور وزیر تجارت ویلوراس کے ساتھ اٹھا چکے ہیں ۔ ہندوستانی اطلاعاتی ٹکنالوجی ماہرین مختلف سلوک کے مستحق ہیں ۔ وہ بین الاقوامی مالیتی فنڈ اور عالمی بینک کے سالانہ اجلاسوں میں شرکت کیلئے امریکہ آئے ہوئے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ فوری طور پر بین الاقوامی مالیتی فنڈ کی حرکیاتی ابھرتی ہوئی معیشت کے حق میں کوٹہ پر فوری نظرثانی کرنا ضروری ہے‘ تاکہ اس سے دنیا کے حقائق کی عکاسی ہوسکے ۔ وہ بین الاقوامی مالیتی فنڈ اور عالمی بینک کے سالانہ اجلاس سے خطاب کررہے تھے ۔ مرکزی وزیر فینانس ارون جیٹلی نے اُمید ظاہر کی کہ یہاں کی یہ بینک کی شاخیں 15ویں کوٹہ نظرثانی کے ذریعہ دنیا بھر میں قائم کی جاسکتی ہیں ۔ ارون جیٹلی نے کہا کہ ایران کے ساتھ بیشتر زیرالتواء مسائل کی بہت جلد یکسوئی ضروری ہے ۔ جیٹلی نے کہا کہ وہ ایک ہفتہ طویل دورہ امریکہ پر ہے تاکہ بین الاقوامی مالیتی فنڈ اور عالمی بینک کے سالانہ اجلاسوں میں شرکت کرسکیں ۔ انہوں نے وزیر فینانس ایران مسعود کرہاسیان سے ملاقات کے بعد کہا کہ ایران کے ساتھ کئی مسائل زیرالتواء ہے ۔ان میں سے سب سے زیادہ اہم تیل کی قیمت کی ادائیگی ہے ۔ ان میں سے بیشتر مسائل کی یکسوئی عنقریب کرلی جائے گی ۔ وہ بین الاقوامی مالیتی فنڈ اور عالمی بینک کے اجلاس سے خطاب کے بعد ایک پریس کانفرنس سے خطاب کررہے تھے ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان ایران کے تیل کا دوسرا سب سے بڑا خریدار ہے ۔ پہلا سب سے بڑا خریدار چین ہے اور ہندوستان مغربی ممالک کی ایران کے خلاف تحدیدات کے باوجود ایران سے تیل درآمد کرتا رہا ہے۔

TOPPOPULARRECENT