Sunday , December 17 2017
Home / دنیا / امریکہ کی ایران کیساتھ نیوکلیئر معاہدہ پالیسی میں بڑی تبدیلی

امریکہ کی ایران کیساتھ نیوکلیئر معاہدہ پالیسی میں بڑی تبدیلی

وزیراعظم اسرائیل نیتن یاہو نے ستائش کی ، سابق امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے کی تنقید
واشنگٹن۔14اکتوبر(سیاست ڈاٹ کام)امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے 2015میں ہونے والے نیوکلیئر سمجھوتے اور دنیا کی دوسری طاقتوں کو نظر انداز کر نے کے سلسلہ میں ایرا ن کی زبردست تنقید کی۔انہوں نے کہا کہ ایران اس معاہدہ پر پوری طرح عمل نہیں کررہاہے اور وہ بالآخراسے ختم کرسکتے ہیں۔ڈونالڈ ٹرمپ نے اپنی تقریر میں امریکی پالیسی میں تبدیلی کا اعلان کیا جس میں انہوں نے نیوکلیائی اور بیالسٹک میزائل پروگراموں اور مشرق وسطیٰ کے شدت پسند گروپوں کو حمایت کرنے کیلئے ایران کے خلاف جارحانہ رویہ کو اختیار کیا ہے ۔انہوں نے ایران پر نیوکلیئر معاہدہ کی روح کوبرقرار نہ رکھنے کا الزام لگایا اور کہا کہ ان کا ہدف ہے کہ ایران کبھی بھی نیوکلیائی ہتھیار حاصل نہیں کرسکے ۔ٹرمپ نے کہاکہ ہم ایسے راستہ پر نہیں چلیں گے جس کا نتیجہ زیادہ تشدد اور دہشت گردی ہو اور یقینی طور سے ایران کے نیوکلیائی تجربہ کا خطرہ موجود ہے ۔ دریں اثناء اسرائیل کے وزیر اعظم بنجامن نتن یاہو نے آج ایران کے خلاف کی گئی تقریر کے لئے امریکی صدر ڈونالڈ ٹومپ کومبارکباد دی۔نتن یاہو نے فیس بک پر ایک ویڈیو کے ذریعہ کہا کہ انہوں نے (ٹرمپ) حوصلہ مندانہ ایران کی دہشت گردانہ حکمرانی کا سامنا کیا اور اسے جارحیت سے ہٹنے اور دہشت گردی کی حمایت جاری رکھنا بند کرنے کے لئے موقع دیا ہے ۔دوسری طرف سابق امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے امریکی صدر ٹرمپ کی جانب سے کی گئی تقریر کو ’’بین الاقوامی بحران‘‘ پیدا کرنے کی کوشش سے تعبیر کیا کیونکہ جس طرح انہوں نے ایران کے ساتھ نیوکلیئر معاہدہ کی پالیسی میں بڑی تبدیلی کی ہے، وہ خطرناک ثابت ہوسکتی ہے۔ اس سے امریکہ کے قومی سلامتی مفاد کو نقصان ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT