Thursday , November 23 2017
Home / دنیا / امریکی ریاست فلوریڈا کے اہم علاقوں میں سمندری طوفان اِرما سے تباہی

امریکی ریاست فلوریڈا کے اہم علاقوں میں سمندری طوفان اِرما سے تباہی

طوفان سے بچ جانے والے 400 افراد کی کیریبین علاقہ سے فرانس اور نیدرلینڈز میں آمد
میامی۔ 12 ستمبر (سیاست ڈاٹ کام) فلوریڈا کے لاکھوں ساکن آج برقی سربراہی سے محروم رہے اور انہیں شدید نقصان کا سامنا کرنا پڑا جو فلوریڈا کے اہم علاقوں میں آیا ہوا ہے، لیکن ریاست کے بیشتر علاقوں میں چمکیلی دھوپ پھیلی ہوئی تھی ۔ دریں اثناء صدر فرانس ایمانیول میکرون نے فیصلہ کیا ہے کہ وہ طوفان سے متاثرہ علاقوں کا دورہ کریں گے۔ وہ اپنے طیارہ میں پانی ، غذائی اشیاء ،کئی ٹن ادویہ اور ہنگامی آلات لے جارہے ہیں۔ فلوریڈا سمندری طوفان کی بدترین تباہ کاری سے بچ گیا جس نے کیریبین علاقہ میں تباہی مچائی ہے۔ ہلاکتوں کی جملہ تعداد 40 ہوگئی۔ جبکہ کیوبا میں ہفتہ کے دن ارما کی وجہ سے مزید 10 افراد ہلاک ہونے کی اطلاع ملی۔ کیریبین کا علاقہ بدترین متاثرہ علاقہ ہے اور یہاں کے عوام اپنے پیروں پر دوبارہ کھڑے ہونے کی جدوجہد میں مصروف ہیں۔ برطانیہ، فرانس، نیدرلینڈز اور امریکہ میں راحت رسانی کی کوششیں ان کی سمندر پار سرزمینوں کیلئے جاری ہیں۔ فلوریڈا کے شہریوں نے ایک بے چین رات گذاری۔ مکانوں تک محدود رہے۔ کسی نے بھی تباہ کاریاں کا جائزہ لینے کیلئے باہر نکلنے کی کوشش نہیں کی۔ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ وہ انتہائی خوفزدہ تھے۔ 65 لاکھ سے زیادہ فلوریڈا کے گاہک برقی سربراہی سے محروم رہے، تاہم گورنر رِک اسکارٹ نے کہا کہ جنوبی مجمع الجزائر کہا جاتا ہے اور جو فلوریڈا کے اہم علاقوں میں شامل ہے۔ بہت زیادہ تباہی برداشت کرچکے ہیں۔ اسکارٹ نے ساحلی محافظین کے ساتھ فضائی معائنہ کے بعد کہا کہ انہیں امید ہے کہ ہر شخص اس تباہی سے جس کا مشاہدہ ہم کرتے ہیں، بچ چکا ہے۔

پانی، برقی سربراہی اور ڈرینیج کے نظام تمام غیرکارکرد تھے۔ تمام چمن ویران ہوچکے تھے۔ بیشتر اہم علاقوں میں ساکن افراد ازخود تخلیہ کے احکام کی پابندی کررہے تھے، لیکن بعض افراد تہہ خانوں میں پناہ لئے ہوئے تھے جبکہ طوفان ارما نشیبی علاقوں کے سیاحوں کو دہلا رہا تھا جو ماہی گیری اِسکوبا ڈائیونگ اور کشتی رانی کے لئے شہرت رکھتے ہیں، جمع تھے۔ اہم گراسی جزیدہ کی جھلکیاں جن کی تصویرکشی خبر رساں چیانل ’’این بی سی‘‘ نے کی تھی، ٹوٹی ہوئی برقی لائینس، جڑوں سے اکھڑے ہوئے درختوں اور سڑکوں پر ملبہ اور گاڑیوں کے ڈھیر دکھا رہا تھا۔ سمندری طوفان ارما کی شدت میں کمی واقع ہوچکی ہے اور ایسا معلوم ہوتا ہے کہ صرف تیز رفتار ہوا چل رہی ہے۔ اس کے زمرے میں کمی کرکے اسے استوائی طوفان قرار دیا گیا ہے، لیکن پیش قیاسیوں کے بموجب یہ اب بھی مہلک طوفان ہے۔ تیز رفتار ہوائیں اور بگولوں کے طوفان کا خطرہ برقرار ہے۔ اتوار کے دن اہم علاقوں میں سمندری طوفان ارما گرج رہا تھا اور اس کی شدت سے کشتیاں ٹکڑے ٹکڑے ہوگئی تھیں۔ کھجور کے درخت جڑوں سے اکھڑ گئے تھے۔ برقی سربراہی لائینس ٹوٹ گئی تھیں اور جزائر کیریبین میں ہر طرف تباہی کی داستان نظر آتا تھی۔ پیرس سے موصولہ اطلاع کے بموجب تقریباً 400 تھکے ماندے اور خوف زدہ افراد جو سمندری طوفان ارما میں اپنی جان بچانے میں کامیاب ہوئے، گزشتہ ہفتہ فرانس اور نیدرلینڈز پہونچے۔ وہ فوجی تیاریوں کے ذریعہ یہاں منتقل کئے گئے تھے۔ 278 مسافروں کا طیارہ پیرس پہونچا جبکہ 100 مسافر پوائنٹ اے پیٹر سے جنوبی نیدرلینڈز پہونچے۔ فرانس اور نیدرلینڈز کی حکومتوں پر بحران پر تاخیر سے ردعمل ظاہر کرنے کی بناء پر شدید تنقید جاری ہے۔ حالانکہ سینٹ بارتھلیمی اور سینٹ مارٹن میں لوٹ مار شروع ہوگئی ہے۔ دونوں ممالک نے ہیلپ لائن کے فون نمبرس دیئے تھے لیکن یہ فون کام نہیں کررہے ہیں۔ سماجی ذرائع ابلاغ اور یکجہتی تنظیموں کے فون کارکرد ہیں۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT