Wednesday , June 20 2018
Home / دنیا / امریکی فوج کی آئی ایس سے لڑنے عراق واپسی کا امکان

امریکی فوج کی آئی ایس سے لڑنے عراق واپسی کا امکان

لندن۔ 18ستمبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکہ کے اعلیٰ ترین فوجی جنرلوں نے پہلی مرتبہ یہ اعتراف کیا ہے کہ امریکی فوج دولت اسلامیہ سے لڑنے کیلئے دوبارہ عراق بھیجی جاسکتی ہے،جنرل مارٹن ڈمپسی نے عراق میں امریکی شراکت اور مداخلت میں اضافے کا امکان ظاہر کیا ہے ۔ جنرل ڈمپسی کے اس بیان سے عراق میں بری فوج استعمال نہ کرنے کے حوالے سے وائٹ ہاؤس کی

لندن۔ 18ستمبر ۔ ( سیاست ڈاٹ کام ) امریکہ کے اعلیٰ ترین فوجی جنرلوں نے پہلی مرتبہ یہ اعتراف کیا ہے کہ امریکی فوج دولت اسلامیہ سے لڑنے کیلئے دوبارہ عراق بھیجی جاسکتی ہے،جنرل مارٹن ڈمپسی نے عراق میں امریکی شراکت اور مداخلت میں اضافے کا امکان ظاہر کیا ہے ۔ جنرل ڈمپسی کے اس بیان سے عراق میں بری فوج استعمال نہ کرنے کے حوالے سے وائٹ ہاؤس کی جانب سے کئے گئے وعدے مشکوک ہوگئے ہیں اور اس طرح اس بیان کے بعد جنرل ڈمپسی تنازعہ کا محور بن گئے ہیں۔ جنرل ڈمپسی نے اپنے بیان میں کہاہے کہ امریکی فوجی جہادیوں ان کے زیر قبضہ علاقے آزاد کرانے کے مشن کے دوران یا پیچیدہ فضائی حملوں کے دوران امریکی فضائیہ کی رہنمائی کرنے کیلئے عراقی افواج کے مشیر کی حیثیت سے بھیجے جاسکتے ہیں۔انھوں نے کہا کہ اگر ہم نے محسوس کیا کہ دولت اسلامیہ کے مخصوص اہداف پر حملوں کیلئے ہمارے مشیروں کو عراقی افواج کے ساتھ ہونا چاہئے تو میں صدر اوباما سے فوجی بھیجنے کی سفارش کروں گا۔جنرل ڈمپسی کے اس بیان سے یہ خدشات جنم لے رہے ہیں کہ امریکی فوج کو ایک مرتبہ پھر ایک غیر ملکی تنازع میں گھسیٹا جارہا ہے اور اس سے امریکی عوام بھی پریشان ہوجائیں گے جو امریکی فوجیوں کو دوبارہ مشرق وسطیٰ بھیجنے کے مخالف ہیں۔یہ بیان صدر براک اوباما کے اس بیان کی بھی نفی ہے جس میں انھوں نے کہا تھا کہ دولت اسلامیہ کے خلاف مہم امریکی فوجی کو غیر ملکی سرزمین پر لڑائی میں شریک نہیں کیاجائے گا۔

TOPPOPULARRECENT