Thursday , May 24 2018
Home / ہندوستان / امریکی فیصلے کیخلاف ووٹ: محبوبہ مفتی نے ’فخریہ‘ ، عمر عبداللہ نے ’غیرمتوقع‘قرار دیا

امریکی فیصلے کیخلاف ووٹ: محبوبہ مفتی نے ’فخریہ‘ ، عمر عبداللہ نے ’غیرمتوقع‘قرار دیا

سرینگر، 22دسمبر(سیاست ڈاٹ کام) جموں وکشمیر کی وزیر اعلیٰ محبوبہ مفتی نے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں منظور کردہ قرارداد جس میں امریکہ سے کہا گیا ہے کہ وہ مقبوضہ بیت المقدس (یروشلم) کو اسرائیل کا دارالحکومت تسلیم کرنے کا اعلان واپس لے ، کے حق میں ووٹ دینے کے بھارتی اقدام پر اپنی مسرت کا اظہار کیا ہے ۔ سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے بھارتی اقدام کو غیرمتوقع قرار دیا ہے ۔ محترمہ مفتی نے جمعہ کی صبح مائیکرو بلاگنگ کی ویب سائٹ ٹویٹر پر ایک ٹویٹ میں کہا ‘یہ دیکھ کر بڑا فخر ہوا کہ بھارت نے دیگر ممالک کے ساتھ مل کر یروشلم کو اسرائیلی دارالحکومت بنانے کے فیصلے کے خلاف اقوام متحدہ میں ووٹ دیا۔ اس ووٹ نے فلسطین کی حمایت سے متعلق ہمارے موقف کو مزید مضبوط کیا’۔ سابق وزیر اعلیٰ اور نیشنل کانفرنس کارگذار صدر عمر عبداللہ نے بھارتی اقدام کا خیرمقدم کرتے ہوئے ایک ٹویٹ میں لکھا ‘میں نے صبح کے وقت اسی ناممکن قرار دیا تھا۔ 35 ممالک کی طرح غیرحاضر نہ رہنے کے وزارت خارجہ کے اقدام کی سراہنا کرتا ہوں۔ ٹرمپ کے خطرے کو شاندار طریقے سے الٹا دیا گیا ہے ‘۔ اس سے قبل مسٹر عبداللہ نے صحافی سوہاسنی حیدر کی ٹویٹ کہ ‘یروشلم کے معاملے پر بھارت کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں آج حقیقی ٹیسٹ ہے ‘ کے ردعمل میں لکھا تھا ‘میرا ماننا ہے کہ بھارت سردرد سے بچنے کے لئے ووٹنگ میں حصہ لینے سے دور رہے گا۔ وہ آسان اور محفوظ آپشن کا استعمال کرے گا’۔ قابل ذکر ہے کہ جنرل اسمبلی میں منظور کردہ قرار داد کے حق میں بھارت سمیت 128 ممالک نے ووٹ دیا ہے ۔ 35 ممالک نے ووٹنگ میں حصہ نہیں لیا جبکہ محض 9 ممالک نے اس قرارداد کی مخالف کی۔ مذکورہ قرارداد میں کہا گیا ہے کہ امریکی صدر ڈونالڈ ٹرمپ کا حالیہ فیصلہ ‘باطل’ ہے اور اسے واپس لیا جائے ۔ امریکی صدر نے دھمکی دی تھی کہ قرارداد کے حق میں ووٹ ڈالنے والے ممالک کی مالی مدد بند کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT