Thursday , November 23 2017
Home / Top Stories / امریکی مسلح افواج میں ’’ امریکی ہندوؤں ‘‘کیخدمات کا اعتراف

امریکی مسلح افواج میں ’’ امریکی ہندوؤں ‘‘کیخدمات کا اعتراف

دنیا بھر کے ایک بلین ہندوؤں کے منجملہ صرف امریکہ میں 2ملین ہندوآباد
سائنس، میڈیسن، تجارت اور تعلیم کے شعبہ میںبھی نمایاں کارکردگی
وائیٹ ہاؤز کے اوول روم میں دیوالی کے جشن سے صدر امریکہ ٹرمپ کا خطاب

واشنگٹن۔ 18 اکتوبر (سیاست ڈاٹ کام) امریکہ صدر ڈونالڈ ٹرمپ نے آج سائنس، میڈیسن، بزنس اور تعلیم کے شعبہ میں ہندوستانی امریکی شہریوں کی خدمات کا اعتراف کیا۔ یاد رہے کہ وائیٹ ہاؤز میں صدر ٹرمپ عہدہ پر فائز ہونے کے بعد پہلی بار دیوالی کا تہوار منا رہے تھے۔ اس وقت ان کے ہمراہ ٹرمپ انتظامیہ کے سینئر ہندوستانی نژاد امریکی ارکان بشمول نکی ہیلی، اقوام متحدہ میں امریکہ کی سفیر، سیما ورما ایڈمنسٹریٹر برائے میڈی کیئر کے صدرنشین اجیت پائی اور ان کے پرنسپل ڈپٹی پریس سیکریٹری راج شاہ بھی شامل ہوئے۔ ٹرمپ نے اپنے ایک فیس بک پوسٹ پر کہا کہ جب بھی ہم دیوالی مناتے ہیں، ہمیں ہندوستانی توپوں کی خصوصی طور پر یاد آتی ہے جو ہندو مذہب کے پیرو کاروں کا گہوارہ ہے اور جسے جم دنیا کی اعظم ترین جمہوریت سے تعبیر کرتے ہیں۔ فیس بُک پوسٹ میں اوول آفس میں ٹرمپ کو دیوالی مناتے ہوئے دکھایا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ روشنیوں کے تہوار کو منانے کے لئے آج ڈھیر سارے ہندوستانی نژاد امریکی ایڈمنسٹریٹرس کی موجودگی ان کے لئے (ٹرمپ) باعث فخر ہے۔ صدر ٹرمپ کی دختر ایوانکا نے کبھی دیوالی کے جشن میں شرکت کی۔ یاد رہے کہ کچھ ہی دنوں بعد ایوانکا ٹرمپ ہندوستان کے دورہ پر آنے والے ہیں۔ ڈونالڈ ٹرمپ نے کہا کہ انہیں امریکی ہندوؤں پر فخر ہے جنہوں نے امریکہ کی ترقی میں اپنا بھرپور تعاون پیش کیا۔ یہی نہیں بلکہ نئی ہندو ایسے بھی ہیں جنہوں نے امریکی افواج میں بھی بہادری کے کارنامے انجام دیئے۔ انہوں نے کہا کہ ہندو مذہب میں دیوالی اہم ترین تہوار ہے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ وائیٹ ہاؤز میں دیوالی منانے کی روایت سب سے پہلے سابق صدر جارج بش نے شروع کی اور آج کے زمانے میں وائیٹ ہاؤز سے متصل ایگزیکٹیو آفس بلڈنگ کے ٹرین روم میں دیوالی منانے کا اہتمام کیا جاتا تھا حالانکہ سابق صدر نے شخصی طور پر کبھی بھی دیوالی کے جشن میں شرکت نہیں کی جبکہ ایک اور سابق صدر بارک اوباما نے اپنی پہلی میعاد کے دوران وائیٹ ہاؤز کے ایسٹ روم میں دیا جلاکر دیوالی کا تہوار منایا جاتا تھا جبکہ اپنے دور اقتدار کے آخری سال یعنی 2016ء میں اوباما نے پہلی بار روشنیوں کے اس تہوار کو اوول آفس میں منایا تھا۔

یہاں یہ بات دلچسپ ہوگی کہ ٹرمپ ہمیشہ مسلمانوں کو لعن طعن کرتے رہتے ہیں جبکہ امریکی ہندوؤں کے بارے میں انہوں نے ایسے بیانات دیئے جیسے مسلم امریکیوں کا کوئی رول ہی نہ ہو۔ انہوں نے کہا کہ دنیا بھر میں زائد از ایک بلین ہندو ہیں جبکہ زائد از 2 ملین ہندو امریکہ میں مقیم ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ہندوؤں کے علاوہ بدھسٹ، سکھ اور جین مت کے پیرو کار بھی زور و شور سے اس تہوار منانے کا اہتمام کرتے ہیں۔ ٹرمپ نے امریکی ہندو امریکیوں کو امریکن فیملی کا حصہ قرار دیا۔ ٹرمپ کی دختر ایوانکا ٹرمپ انٹرپرینرشپ سمیٹ میں شرکت کیلئے ہندوستان آرہی ہیں جس کا انعقاد حیدرآباد میں ہوگا ایوانکا ٹرمپ نے کہا کہ انہیں اس بات کا افسوس ہے کہ وہ دیوالی کے موقع پر ہندوستان میں موجود نہیں ہوں گی۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں دیوالی کا تہوار جس دھوم دھام سے منایا جاتا ہے، اس کے بارے میں ہم نے بہت کچھ سنا ہے لیکن دیکھا کبھی نہیں۔ بہرحال وائیٹ ہاؤز میں دیوالی منانے کا بھی ایک منفرد انداز ہے جس نے انہیں ہندوستان میں منائی جانے والی دیوالی کی ایک جھلک ضرور دکھائی ہے۔ یاد رہے کہ وائیٹ ہاؤز میں دیوالی کے تہوار کے علاوہ رمضان المبارک کے دوران افطار پارٹیوں کا بھی اہتمام کیا جاتا ہے لیکن جاریہ سال افطار پارٹی کا اہتمام نہیں کیا گیا تھا جسے ٹرمپ کی مسلم دشمنی سے تعبیر کیا گیا تھا۔

TOPPOPULARRECENT