Sunday , November 19 2017
Home / شہر کی خبریں / انجن باؤلی کے قریب سر عام شراب خانہ سے عوام کو تکالیف

انجن باؤلی کے قریب سر عام شراب خانہ سے عوام کو تکالیف

شرابیوں کی آئے دن ہنگامہ آرائی، خواتین خوف و ہراسانی کا شکار
حیدرآباد۔15جنوری(سیاست نیوز) پرانے شہر میں انجن باؤلی کے قریب واقع شراب کی دکان عوام کیلئے انتہائی تکلیف دہ بنی ہوئی ہے اور اس کے متعلق متعدد مرتبہ شکایات کے باوجود کوئی کاروائی نہیں کئے جانے کے سبب آئے دن اس شراب کی دکان کے قرب ہنگامہ آرائی کے واقعات پیش آتے رہتے ہیں۔شمشیر گنج انجن باؤلی سڑک پر موجود اس شراب کی دکان کے قریب شادی خانوں کی موجودگی کے سبب اس سڑک پر خواتین کا گذر ہوتا ہے لیکن شراب کی دکان کے بازو میں موجود پرمٹ روم اور اس کے باہر شراب پینے والے سڑک پر ہنگامہ آرائی کرتے ہیں یا پھر شراب کی دکان کے روبرو واقع کھلی اراضی پر رفع حاجت کرنے لگتے ہیں جس کے سبب اس مصروف سڑک سے خواتین کا گذرنا محال ہو گیا ہے۔ شام ہوتے ہی اس شراب کی دکان کے قریب آوارہ قسم کے لوگوں کی مجمع ہونے لگا ہے جو راہگیروں کیلئے تکلیف کا سبب بنتا جا رہا ہے۔ اسی طرح اس شراب کی دکان کے سبب اطراف تلن اور دیگر اشیاء کی ٹھیلہ بنڈیا لگائی گئی ہیں جو کہ ٹریفک میں بھی خلل کا باعث بن رہی ہیں۔ مقامی عوام کی جانب سے اس شراب کی دکان کو بند کروانے کے لئے متعدد مرتبہ شکایت کی گئی ہے لیکن اس کا کوئی اثر متعلقہ عہدیداروں پر نہیں ہو رہا ہے اور نہ ہی وہ اس سنگین مسئلہ پرکوئی دلچسپی کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔ مقامی عوام نے اس بات کی بھی شکایت کی ہے کہ رات دیر گئے شرابی اس دکان سے شراب پی کر اطراف کے علاقوں کی گلیوں میں رات بھر پڑے رہنے لگے ہیں جو کے مقامی عوام کے لئے انتہائی تکلیف دہ ہے۔ اطراف کے شادی خانو ں میں ہونے والی تقاریب میں شرکت کے لئے پہنچنے والوں نے بھی متعدد مرتبہ اس بات کی شکایت کی ہے کہ اس شراب کی دکان کے قرب سے گذرنا ان کے لئے انتہائی تکلیف دہ ہوتا جا رہا ہے کیونکہ سڑک کے کنارے شراب نوشی اس جگہ پر معمول بن چکی ہے ۔ دونوں شہروں میں کئی مقامات پر اس طرح کی شکایات ہیں لیکن اس شراب کی دکان کے متعلق متعدد شکایات کے باوجود اس کے خلاف کوئی کاروائی نہ کئے جانے سے اس مقام پر سڑک پر برسر عام نشہ میں ہنگامہ آرائی اور شراب نوشی کے ساتھ ساتھ خواتین سے چھیڑ چھاڑ کے واقعات میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ پرانے شہر کے علاقہ میں موجود اس شراب کی دکان سے ہونے والی تکالیف اور شرابیوں کی جانب سے کی جانے والی ہنگامہ آرائی کی شکایات منتخبہ عوامی نمائندوں سے بھی کی جا چکی ہیں لیکن اس کے باوجود بھی مسئلہ کا حل دریافت نہیں کیا گیا بلکہ ان شکایات کو نظر انداز کردیا گیا ۔

TOPPOPULARRECENT