Wednesday , December 19 2018

اندرون پانچ ماہ تلنگانہ کی آمدنی میں 15.641 کروڑکا اضافہ

تقسیم ریاست پر نقصانات کے دعوے فضول کی باتیں ثابت

تقسیم ریاست پر نقصانات کے دعوے فضول کی باتیں ثابت
حیدرآباد ۔ 10 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : ریاست کی تقسیم کے بعد صرف پانچ ماہ میں تلنگانہ کی آمدنی میں 15.641 کروڑ روپئے کا اضافہ ہوا ہے ۔ ریاست کی تقسیم کی مخالفت کرنے والوں نے علحدہ تلنگانہ ریاست کی تشکیل پر نکسلائٹس کی سرگرمیاں بڑھ جانے دہشت گردی میں اضافہ ہونے فرقہ وارانہ فسادات بھڑک اٹھنے کے علاوہ تلنگانہ کی آمدنی گھٹ جانے کا دعویٰ کرتے ہوئے ریاست کو تقسیم نہ کرنے کا مرکزی حکومت پر دباؤ ڈالا تھا ۔ ریاست کی تقسیم کے بعد سوائے برقی مسائل کے تمام دعوے جھوٹے اور بے بنیاد ثابت ہوئے ہیں حیرت کی بات یہ ہے کہ تلنگانہ کی آمدنی میں زبردست اضافہ ہوا ہے ۔ ریاست کی تقسیم کے بعد ریاست تلنگانہ کی آمدنی میں ہر ماہ تین ہزار کروڑ روپئے کا اضافہ ہوا ہے ۔ اسٹامپ اور رجسٹریشن کے علاوہ گاڑیوں کے ٹیکس کی آمدنی توقع کے برعکس نہیںہے ۔ تاہم ویاٹ اور اکسائز کی آمدنی میں زبردست اضافہ ہوا ہے گذشتہ 5 ماہ میں تلنگانہ کی آمدنی میں 15.641 کروڑکا اضافہ ہوا ہے ۔ پہلے چار ماہ میں 12.381 کروڑ کی آمدنی ہوئی تھی تاہم گذشتہ ماہ اکٹوبر تک 3260 کروڑ روپئے کی آمدنی ہوئی ہے ۔ جب کہ ریاستی وزیر فینانس نے 5 ماہ کے دوران 25 ہزار کروڑ روپئے خرچ کرنے کا اسمبلی میں بجٹ کی پیشکشی کے بعد اعلان کیا تھا ۔ سرکاری ذرائع نے بتایا کہ 5 ماہ کے دوران ویاٹ سے 2100 تا 2400 تک اکسائز ڈپارٹمنٹ کو اکٹوبر تک 400 کروڑ روپئے ، گاڑیوں کی رجسٹریشن سے 180 کروڑ روپئے جنگلات اور دوسرے سے تقریبا 400 کروڑ روپئے کی آمدنی ہوئی ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT