Thursday , December 14 2017
Home / شہر کی خبریں / انسداد عدم روا داری کے لیے دلت و پسماندہ طبقات کو متحد ہونے کا مشورہ

انسداد عدم روا داری کے لیے دلت و پسماندہ طبقات کو متحد ہونے کا مشورہ

ملک کے موجودہ حالات کے پیش نظر درکار سیاسی حکمت عملی پر کانفرنس ، غدر و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔7اپریل(سیاست نیوز)ملک گیر سطح پر بڑھتی عدم رواداری اور فرقہ پرستانہ واقعات کی روک تھام کے لئے دلت پچھڑے اور پسماندہ طبقات کو ایک پلیٹ فارم پر جمع ہونے کا مشورہ دیتے ہوئے انقلابی گلوکا ر غدر نے کہاکہ مرکز میںنریندر مودی حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد ہندوستانی عوام کو فراہم کئے گئے دستور ی حقوق کو سلب کرنے کا تیزی کے ساتھ کام کیاجارہا ہے ۔ ادارہ سیاست کے گولڈن جوبلی ہال میں ایس سی ‘ ایس ٹی‘ بی سی ‘ مسلم فرنٹ کے زیر اہتمام ’’ملک کے موجودہ حالات کے پیش نظر درکار سیاسی حکمت عملی‘‘ کے عنوان پر منعقدہ گول میز کانفرنس سے مہمانِ خصوصی کی حیثیت سے خطاب کرتے ہوئے غدر نے کہاکہ ہندوبرہمن فسطائیت کے خلاف میں بڑھتی عدم رواداری اور فرقہ پرستی سے متاثرہ افراد کا متحدہ پلیٹ فارم تشکیل دینے کی ضرورت ہے ۔ انہوں نے کہاکہ مرکز میں بی جے پی کی مودی حکومت کے اقتدار میں آنے کے بعد اظہار خیال کی آزادی‘کھانے پینے کی آزادی ‘ بولنے سننے کی آزادی کو سلب کردیا جارہا ہے ۔ انقلابی گلوکار غدر نے موجودہ دور میں قومی یونیورسٹیز کو نشانہ بنانے کے واقعات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہاکہ ہندو او رمسلمان کے نام پر قومی تعلیمی اداروں میں فساد برپا کرنے کی سازشیں کی جارہی ہیں اور ملک دشمن عناصر اپنی سونچ کے مطابق قوم پرستی کی سند دے رہے ہیں۔ غدر نے کہاکہ انیس سال قبل آج ہی کے دن جمہوری حقوق کے متعلق عوام میںشعور بیداری مہم چلانے والے انقلابی گلوکار غدر کو جان سے مارنے کی کوشش کی گئی ۔ انہوں نے کہاکہ پانچ گولیاں غدر کے جسم میںداغ دی گئی جس میں سے ایک گولی ثبوت کے طور پر آج بھی غدر کی ریڑھ کی ہڈی میںپیوست ہے۔غدر نے کہاکہ ان پر جان لیوا حملہ کرنے والے انیس سال بعد بھی آزاد گھوم رہے ہیں۔ مولانا حامد حسین شطاری کارگذار صدر سنی علماء بورڈ نے گول میز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مرکزی او رریاستی حکومتوں کو ایس سی ‘ ایس ٹی‘ بی سی ‘ اقلیتی طبقات کی پسماندگی کا ذمہ دار ٹھرایا۔ انہوں نے کہاکہ جہاں مسلمانوں کو اوقافی جائیدادوں کی تباہی کے ذریعہ پسماندہ بنایاگیا وہیںپر ایس سی ‘ ایس ٹی طبقات کو جل جنگل اور زمین سے محروم کرکے انہیں دربدر کی ٹھوکریں کھانے کے لئے مجبور کیا گیا۔ پروفیسر پی ایل ویشویشو ار رائو نے کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ایس سی ‘ ایس ٹی ‘ بی سی اور مسلم اتحادکو وقت کی اہم ضرورت قراردیا۔ کنونیر فرنٹ پی یادگیری نے کانفرنس کی کاروائی چلائی جبکہ پروفیسر انور خان ‘ چیف کنونیر فرنٹ ثناء اللہ خان‘سی ایل یادگیری‘ خالد رسول خان ‘ نمرتا جیسوال‘ رشید خان آزاد ‘ محمد علی‘ جہانگیر گوڑ‘ اسلم عبدالرحمن کے بشمول دیگر نے بھی گول میز کانفرنس سے خطاب کیا۔

TOPPOPULARRECENT