Wednesday , April 25 2018
Home / شہر کی خبریں / انسداد فرقہ پرستی کیلئے دستور ہند سے عوام کو واقف کروانے کی ضرورت

انسداد فرقہ پرستی کیلئے دستور ہند سے عوام کو واقف کروانے کی ضرورت

ملک کے موجودہ حالات میں دلتوں اور اقلیتوں پر حملہ پر گول میز کانفرنس ، انقلابی گلوکار غدر و دیگر کا خطاب
حیدرآباد۔15جنوری(سیاست نیوز) انقلابی گلوکار غدر نے کہاکہ ہمیں دستور ہند کے متعلق عوام میںشعور بیداری مہم شروع کرنا چاہئے۔کیونکہ آج ہندوستان میںمکمل آزادی کے ساتھ جو ہم زندگی گذار رہے ہیں وہ دستور ہند کی دین ہے اور یہ کارنامہ ڈاکٹر بھیم رائو امبیڈکر نے انجام دیاہے ۔ ہمیں دستور ہند سے ملنے والی آزادی سے عوام کو روشناس کرانے کی ضرورت ہے تاکہ فرقہ پرستی کے بڑھتے زہر کو روکنے کا آسانی کے ساتھ کام کیاجاسکے۔ وہ آج یہاں میڈیاپلس میںایس سی ‘ایس ٹی‘ بی سی ‘ مسلم فرنٹ کے زیراہتمام ’’ ملک کے موجودہ حالات میں ‘ دلتوں اور اقلیتوں پر حملہ‘‘ کے عنوان پر منعقد ہ گول میز کانفرنس سے مخاطب تھے۔ چیف کنونیر فرنٹ ثناء اللہ خان کی زیرنگرانی منعقدہ اس گول میز کانفرنس سے سینئر ایڈوکیٹ ہائی کورٹ عثمان شہید‘ مولانا سید طارق قادری‘ مولاناحسین شہید‘ ایڈوکیٹ جیا وندیالیہ‘ مسٹر سی ایل یادگیری‘ حیات حسین حبیب ٹی آر ایس لیڈر‘ نعیم اللہ شریف‘ باسیف کے بشمول ایس سی ‘ ایس ٹی او راوبی سی سماج کی فلاح وبہبود کے لئے سرگرداں شخصیتوں نے بھی اس گول میز کانفرنس سے خطاب کیا۔مسٹر غدر نے کہاکہ مساجد میں دستور ہند کی کتابیں لے کر جائواو رہر مسلمان تک اس کے متعلق معلومات فراہم کرو۔ انہو ںنے کہاکہ دستور ہند کی کتاب کوعام کرنے سے روکنے کے لئے ہی فسطائی طاقتیں نفرت پھیلانے کاکام کررہے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہمیں آج یہ بتانے کی ضرورت ہے جس ووٹ کی طاقت کے ذریعہ و ہ آج ایوان میںپہنچے ہیں‘ وہ صرف دستور ہند ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایوان پہنچنے کے بعد دستور بدلنے کی کوششیں کی جارہی ہیں۔ مسٹر غدر نے کہاکہ اس ملک پر 8 سو سالوں تک مسلمانوں نے حکومت کی اگر وہ چاہتے تو سارے ملک کو مسلمان بنالیتے ‘ انسانیت سے یہ کام نہیں ہوتا تو زور زبردستی کے ذریعہ سب کو مسلمان بنالیتے مگر مسلمانوں نے ایسا نہیںکیا اور آج صرف تین سال کے عرصہ میں یہ لوگ دستور بدلنے اور سارے ملک کوہندو بنانے کی ناکام جستجو کررہے ہیں۔ انہو ںنے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ دلتوں اورمسلمانوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے اور اس کا مقصد صرف دونوں طبقا ت کے اندر خوف کا ماحول پیدا کرنا ہے تاکہ وہ اپنے ایجنڈے کو نافذ کرسکیں اور فسطائی طاقتیں اپنے کام کو بڑی خوبی کے ساتھ انجام دے رہی ہیں۔ مسٹر غدر نے کہاکہ سامراجی طاقتیں ان کے ساتھ ہیں‘ جو خوف پید اکرنے کے لئے کی جارہی سازشوں کو انجام دینے میںان کی مدد کررہے ہیں۔ فسطائی طاقتوں کے خلاف ہمیںمتحد ہوکر جدوجہد کرنے پر ہی کامیابی حاصل ہوگی۔ دلت اور مسلمان اگر ایک ہوجاتے ہیں تو اس ملک پرحکمرانی کرنے والے دوفیصد برہمنوں کی اینٹ سے اینٹ بجادیں گے ۔ انہو ںنے کہاکہ دلت اور مسلمانوں کے درمیان میںتفرقہ پیدا کرنا اور انہیں آپس میں ایک دوسرے کے مدمقابل کرنے کاکام برسوں سے کیاجارہا ہے مگر پچھلے کچھ سالوں میںدلت سماج کے اندر اس کے متعلق شعور بیداری چلائی جانے کی وجہہ سے حالات کچھ حد تک تبدیل ہوئے ہیں۔ دیگر مقررین نے بھی دلت مسلم اتحاد کووقت کی اہم ضرورت قراردیتے ہوئے فسطائی طاقتوں کے خلاف اس اتحاد کو سب سے بڑا ہتھیار قراردیا او رکہاکہ آج اگر مسلمان فسطائی طاقتوں کے نشانے پر ہیںتو کل دلت سماج کے لوگوں کی باری ہوگی کیونکہ اونچی ذات والے کبھی بھی دلت سماج کے لوگوں کو اپنے مقابل کا نہیںسمجھتے جبکہ دلت سماج کے لوگوں کو یہ اعزاز ہندوستان میںمسلمانوں کی آمد سے ملا اور انہیںاحساس ہوا کہ وہ بھی ایک انسان ہیں۔

TOPPOPULARRECENT