Saturday , October 20 2018
Home / شہر کی خبریں / انشورنس سرمایہ کاری بل سے دستبرداری کا مطالبہ

انشورنس سرمایہ کاری بل سے دستبرداری کا مطالبہ

نئی قانون سازی سے معیشت پر منفی اثر ، آل انڈیا انشورنس ایمپلائز اسوسی ایشن کا بیان

نئی قانون سازی سے معیشت پر منفی اثر ، آل انڈیا انشورنس ایمپلائز اسوسی ایشن کا بیان
حیدرآباد ۔ 20 ۔ نومبر : ( سیاست نیوز ) : مرکزی حکومت کو چاہئے کہ وہ انشورنس شعبہ میں بیرونی راست سرمایہ کاری میں 26 فیصد سے بڑھا کر 49 فیصد کرنے اور حکومت کے زیر انتظام جنرل انشورنس کمپنی میں 49 فیصد سرمایہ بیرونی اداروں کو فروخت کئے جانے سے متعلق پارلیمنٹ میں پیش کی جانے والی بل سے فوری دستبرداری اختیار کرلے بصورت دیگر جنرل انشورنس اسوسی ایشن کی جانب سے ملک گیر سطح پر دھرنا اور راستہ روکو احتجاجی پروگرام منظم کئے جائیں گے ۔ اسبات کا اعلان آج یہاں جنرل سکریٹری آل انڈیا انشورنس ایمپلائز اسوسی ایشن مسٹر وی رمیش اور سکریٹری آل انڈیا جنرل انشورنس اسٹانڈنگ کمیٹی مسٹر کے وی وی ایس این راجو نے منعقدہ پریس کانفرنس کے دوران کیا ۔ انہوں نے بتایا کہ مرکزی حکومت کی جانب سے انشورنس شعبہ میں بیرونی راست سرمایہ کاری میں 26 فیصد سے 49 فیصد کے اضافے کے علاوہ حکومت کے زیر انتظام جنرل انشورنس کمپنی میں 49 فیصد سرمایہ کو بیرونی اداروں کو فروخت کرنے سے متعلق قانون مدون کئے جانے کی تجویز ملک کی معیشت پر اثر اور انشورنس کمپنیوں کے ملازمین کے لیے بھی مصیبت کا باعث بن سکتی ہے اور ساتھ ہی ساتھ ملک کے عوام کے مفادات پر بھی اس کے برے اثرات مرتب ہوں گے اور مذکورہ قانون کے لاگو ہونے پر ملک میں خانگی کمپنیوں کو استحکام ملے گا جب کہ مرکزی حکومت یہ توقع رکھی ہوئی ہے کہ اس بل کی منظوری سے ہندوستان کو فائدہ ہوگا لیکن ایسا ہرگز نہیں ہوگا بلکہ نقصان ہی ہوگا ۔ انہوں نے بتایا کہ آئی آر ڈی اے کی رپورٹ کے تحت 31 مارچ 2013 تک 23 پرائیوٹ انشورنس کمپنیوں میں آنے والے بیرون سرمایہ کاری صرف 6045.91 کروڑ ہی ہے اور 22 جنرل انشورنس کمپنیوں کو 31 مارچ 2013 تک آنے والی رقم صرف 1,586.63 کروڑ ہی ہے جب کہ حکومت کی جانب سے بیرونی سرمایہ میں 49 فیصد کے اضافہ سے کوئی فائدہ حاصل نہیں ہوگا ۔ انہوں نے بتایا کہ حکومت کے زیر انتظام چلائے جانے والے جنرل انشورنس کمپنیاں پرائیوٹ کمپنیوں سے مقابلہ کرتے ہوئے آمدنی کے اضافہ میں سبقت لے جارہے ہیں اور عوام کو بہتر سے بہتر سہولتیں مہیا کررہے ہیں اور حکومت کے زیر اہتمام چلائے جانے والی جنرل انشورنس کمپنیاں پرائیوٹ کمپنیوں کی بہ نسبت زیادہ نفع بخش رہی ہیں اس کے باوجود مرکزی حکومت پرائیوٹ کمپنیوں کو وسعت دینے کی غرض سے متذکرہ تجاویز پر مشتمل بل کو پارلیمنٹ میں منظور کرنے کی کوشش کررہی ہے جو ایک انتہائی نا مناسب امر ہے ۔ حکومت کو فوری طور پر اپنے فیصلہ سے دستبرداری اختیار کرلینے کی اشد ضرورت ہے ۔ اس موقع پر نائب صدر جنرل انشورنس ایمپلائز اسوسی ایشن مسٹر ایس راجو اور مسٹر راج شیکھر بھی موجود تھے ۔۔

Top Stories

TOPPOPULARRECENT