Friday , February 23 2018
Home / تجارت / انٹرئیر پارک کے فرنیچر آپ کے وقار میں کرے اضافہ

انٹرئیر پارک کے فرنیچر آپ کے وقار میں کرے اضافہ

چار سو اقسام کے صوفہ سیٹ اور 200 سے زائد دوسری اشیاء خریداروں کی توجہ کا مرکز
جس طرح ملبوسات کسی انسان کی شخصیت میں غیر معمولی نکھار پیدا کرتے ہیں اسی طرح فرنیچر بھی کسی بھی گھر کی رونق اور معاشرہ میں اس گھر کے مکینوں کے وقار اور شان و شوکت میں اضافہ کا باعث بنتا ہے ۔ جولوگ صاف صفائی معطر ماحول اور زندگی کے ہر لمحہ کو یادگار بنانے کے عادی ہوتے ہیں وہ اپنے گھروں اور دفاتر میں عمدہ سے عمدہ فرنیچر استعمال کرتے ہیں اور اپنے پروقار لوگوں کے اس ذوق کی انٹرئیر پارک فرنیچر مال بنجارہ ہلز اور نامپلی تکمیل کرتا ہے ۔ دونوں شہروں حیدرآباد و سکندرآباد کے علاوہ ریاست کے دوسرے اضلاع کے معزز خاندان عمدہ اور پائیدار فرنیچر کے لیے انٹرئیر پارک فرنیچر مال کا رخ کرتے ہیں کیوں کہ وہ جانتے ہیں کہ یہ ہندوستان میں فرنیچر کا سب سے بڑا مال ہے جہاں صارفین کو ایک ہی چھت تلے 400 سے زائد اقسام کے صوفہ سیٹ ، 200 سے زائد اقسام کے ڈائننگ سٹ ، کافی ٹیبلس ، بیڈ روم سیٹس ، جھولے ، آئینے ، دست کاری کے لاجواب نمونے ، کارپٹس ( قالینیں ) ، لائٹس ، آوٹ ڈور فرنیچر اور آفس فرنیچر دستیاب ہوتا ہے ۔ بنجارہ ہلز میں محکمہ پولیس کی کھلی اراضی کے مقابل مین روڈ نمبر 12 اور ہوٹل پیالیس اسٹیشن روڈ نامپلی کے مقابل واقع انٹریئر پارک فرنیچر مال میں ہمیشہ معزز گاہکوں کا ہجوم رہتا ہے ۔ اس مال میں آپ کے لیے ایسے فرنیچر دستیاب ہیں جنہیں دیکھنے والے دیکھتے رہ جاتے ہیں ۔ نظروں کو خیرہ کردینے والے ان فرنیچر کے بارے میں انٹرئیر پارک کے مالک مسٹر دیپک نے بتایا کہ ان کے فرنیچرس ساری دنیا میں سربراہ کیے جاتے ہیں ۔ حیدرآباد چونکہ نوابوں کا شہر ہے یہاں کے لوگ فرنیچر کا اعلیٰ ذوق رکھتے ہیں ۔ ان کا نظر انتخاب بھی بلند پایہ کا ہوتا ہے ۔ ان کے ذوق کو مدنظر رکھتے ہوئے ہی اندرون و بیرون ملک کا فرنیچر فراہم کیا جاتا ہے ۔ مزید تفصیلات کے لیے 040-66680004 ۔ 66785577 نامپلی اور 65506677 ۔ 9299651545 پر ربط کیا جاسکتا ہے ۔۔

Top Stories

مولانا آزاد کی برسی پر تقریب کا انعقاد دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی‘ صدر جمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی اور نائب صدر جمہوریہ نے اپنا پیغام بھیجا نئی دہلی۔آزادہندو ستا ن کے پہلے وزیر اتعلیم مولانا آزاد کے ساٹھ ویں یوم وفات کے موقع پر آج ان کے مزار واقع مینابازار میں ایک تقریب کا انعقاد ائی سی سی آر کی جانب سے کیاگیا۔افسوس کی بات یہ رہی کہ اس مرتبہ بھی مولانا آزاد کی وفات کے موقع پر دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے کسی بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی۔ چونکہ جامع مسجد پر کناڈہ کے وزیراعظم کو آناتھا اس لئے تقریب کو بہت مختصر کردیا گیاتھا۔ اس دوران صدرجمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی کی گئی او رنائب صدر جمہوریہ ہند نے اپنا پیغام بھیجا۔ ائی سی سی آر کے ڈائریکٹر نے مولانا آزاد کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ جہاں تک مولانا آزاد کا تعلق ہے اور انہوں نے جو خدمات انجام دیں انہیں فراموش نہیں کیاجاسکتا۔ ہندو مسلم میں اتحاد قائم کیااس کی مثال ملنا مشکل ہے انہوں نے بھائی چارہ کوفروغ دیا۔ انٹر فیتھ ہارمنی فاونڈیشن آف انڈیاکے چیرمن خواجہ افتخار احمد نے کہاکہ مولانا آزاد نے لڑکیوں کی تعلیم پر بہت زیادہ توجہ دی۔ جب حکومت قائم ہونے کے بعد قلمدان کی تقسیم ہونے لگے تو مولانا آزاد نے تعلیم کا قلمدان لیاتاکہ لڑکیو ں کی تعلیم پر خاص دھیان دیاجاسکے۔ خاص طور سے مسلم لڑکیو ں کی تعلیم پر زیادہ دھیان دیاجائے۔کیونکہ مسلم لڑکیو ں کو پڑھنے کے زیادہ مواقع نہیں مل پاتے ۔ معروف سماجی کارکن فیروز بخت احمد مولانا سے منسوب ایک پروگرام میں پونے گئے ہوئے تھے۔ انہوں نے نمائندہ کو فون پر بتایا کہ مولانا آزاد کی تعلیمات کو قوم نے بھلادیا ہے۔ آج تک ان جیسا لیڈر پیدا نہیں ہوسکا اور افسوس کی بات ہے کہ مولانا آزاد کی برسی یا یوم پیدائش کے موقع پر دہلی یامرکزی حکومت کی جانب سے کوئی بڑا لیڈر شریک نہیں ہوتا۔ ایسا معلوم ہوتا کہ حکومت نے مولانا آزاد کو بھلادیا ہے۔ اس دوران سی سی ائی آر کی ایک کمار مولانا ابولکلام آزاد فاونڈیشن کے چیرمن عمران خان سمیت کافی لوگ موجود تھے۔
TOPPOPULARRECENT