Saturday , August 18 2018
Home / شہر کی خبریں / انٹرمیڈیٹ و ڈگری امتحانات کیلئے کالجس کی عمارتیں فراہم نہ کرنے کا فیصلہ

انٹرمیڈیٹ و ڈگری امتحانات کیلئے کالجس کی عمارتیں فراہم نہ کرنے کا فیصلہ

ریاستی کے جی تا پی جی تعلیمی ادارہ جات کے انتظامیہ کے جے اے سی کا سخت گیر موقف
حیدرآباد 18 فروری (سیاست نیوز) ریاستی کے جی تا پی جی تعلیمی اداروں کے مینجمنٹ پر مشتمل جوائنٹ ایکشن کمیٹی نے الزام عائد کیاکہ ریاستی حکومت تلنگانہ خانگی تعلیمی اداروں کو درپیش مختلف مسائل پر توجہ نہیں دے رہی ہے اور حکومت کے اس رویہ کے خلاف بطور احتجاج انٹرمیڈیٹ و ڈگری امتحانات کے مراکز بنانے کے لئے اپنے کالج کی عمارتوں کو فراہم نہ کرنے کا فیصلہ کیا اور دیرینہ حل طلب مسائل کی یکسوئی تک حکومت کے ساتھ عدم تعاون (کالج عمارتوں کی فراہمی سے انکار) کا اعلان کیا۔ اس سلسلہ میں پرائیوٹ ایجوکیشنل انسٹی ٹیوشنس مینجمنٹس جوائنٹ ایکشن کمیٹی کا ایک اہم اجلاس منعقد ہوا۔ اجلاس میں کئے گئے فیصلوں سے واقف کرواتے ہوئے صدرنشین جوائنٹ ایکشن کمیٹی مسٹر رمنا ریڈی نے حکومت تلنگانہ کے اختیار کردہ رویہ کے خلاف بطور احتجاج کے جی تا پی جی ایجوکیشنل انسٹی ٹیوشنس کی متحدہ جدوجہد کے ایکشن پلان کا اعلان کیا اور اس ایکشن پلان کے ابتدائی اقدام کے تحت جاریہ ماہ 28 فروری سے منعقد ہونے والے انٹرمیڈیٹ امتحانات اور آئندہ ماہ 6 مارچ سے شروع ہونے والے ڈگری امتحانات کا بائیکاٹ کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ انھوں نے بتایا کہ گزشتہ چار سال سے دیرینہ حل طلب مسائل کی یکسوئی کے مطالبہ پر حکومت سے متعدد مرتبہ نمائندگی کی گئی لیکن کوئی ردعمل حکومت سے حاصل نہ ہونے کی وجہ سے ہی امتحانات کیلئے اپنے کالجس فراہم نہ کرکے مکمل بائیکاٹ کا فیصلہ کرنے پر مجبور ہونا پڑا۔ انھوں نے مزید بتایا کہ مسائل سے واقف کروانے کے لئے چیف منسٹر سے ملاقات کرنے کی کوشش کی گئی لیکن موقع فراہم نہیں کیا گیا اور چیف منسٹر کو غلط باور کرواکر گمراہ کیا گیا۔ انھوں نے مزید بتایا کہ حکومت تلنگانہ پرائیوٹ ایجوکیشنل انسٹی ٹیوشنس مینجمنٹس سے انتقامی رویہ اختیار کررہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT