Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / انٹرمیڈیٹ کالجس میں داخلہ کیلئے 21 مئی کو اعلامیہ کی اجرائی

انٹرمیڈیٹ کالجس میں داخلہ کیلئے 21 مئی کو اعلامیہ کی اجرائی

کئی کالجس میں بنیادی سہولتوں کا فقدان، اجازت ناموں کی منسوخی پر غوروخوض

حیدرآباد ۔ 12 مئی (سیاست نیوز) بورڈ آف انٹرمیڈیٹ کی جانب سے جاریہ نئے تعلیمی سال سے ریاست کے 434 جونیر کالجس میں داخلوں کی اجازت نہ دینے کا امکان ہے۔ 20 مئی تک بنیادی سہولتیں دوسرے امور پر ضروری دستاویزات داخل نہ کرنے والے کالجس کو داخلوں کی اجازت نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے۔ 21 مئی کو جونیر کالجس میں داخلوں کیلئے نوٹیفکیشن کی اجرائی عمل میں آئے گی۔ ریاست کے 434 جونیر کالجس میں جاریہ سال داخلوں کا امکان نہیں ہے۔ بنیادی سہولتوں کی عدم دستیابی کی وجہ سے بورڈ آف انٹرمیڈیٹ نے ابھی تک 61 جونیر کالجس کو منظوری دینے سے انکار کردیا ہے۔ ضروری دستاویزات داخل نہ کرنے والے مزید 373 جونیر کالجس کی اہلیت ختم کرنے کی تیاری کی جارہی ہے۔ بورڈ آف انٹرمیڈیٹ نے گذشتہ سال ڈسمبر سے تمام جونیر کالجس کو ضروری دستاویزات داخل کرنے کی ہدایت دی ہے۔ ریاست میں جملہ 1692 خانگی جونیر کالجس نے داخلوں کیلئے منظوری دینے کی بورڈ آف انٹرمیڈیٹ سے اجازت طلب کی تھی۔ ان میں 1057 جونیر کالجس کو بورڈ نے اجازت دے دی ہے۔ 61 جونیر کالجس میں بنیادی سہولتوں کے فقدان کی وجہ سے اجازت نہیں دی گئی مزید 373 کالجس نے ضروری دستاویزات پیش نہیں کئے ان میں 103 کالجس نے بورڈ آف انٹرمیڈیٹ سے اپنی درخواستیں واپس طلب کرلی ہیں۔ مزید 98 کالجس کے درخواستوں کی جانچ اضلاع ہیڈکوارٹرس کے آفسوں پر جاری ہے۔ سکریٹری بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اشوک نے کہا کہ ان کالجس کا پراسیس 20 مئی تک مکمل ہوجائے گا۔ 21 مئی کو جونیر کالجس میں داخلوں کیلئے نوٹیفکیشن جاری کرتے ہوئے منظورہ اور غیرمنظورہ کالجس کی فہرست ویب سائیٹ میں دستیاب رکھی جائے گی۔ سکریٹری بورڈ آف انٹرمیڈیٹ نے طلبہ اور ان کے سرپرستوں سے اپیل کی ہیکہ وہ ویب سائیٹ میں منظورہ کالجس کی فہرست کا جائزہ لینے کے بعد اپنے بچوں کا داخلہ کرائے۔ غیرمنظورہ کالجس میں داخلے لئے جاتے ہیں تو بورڈ آف انٹرمیڈیٹ اس کا ذمہ دار نہیں رہے گا۔ اشوک نے کہا کہ ریاست میں 500 جونیر کالجس کو ہاسٹلس کی سہولت ہے۔ تاہم صرف 13 کالجس نے منظوری کیلئے بورڈ آف انٹرمیڈیٹ میں درخواستیں داخل کی ہے۔ باقی کالجس درخواستیں داخل نہیں کی ہے۔ چند کالجس اس مسئلہ پر عدالت سے رجوع ہوئے ہیں۔ عدالت سے ابھی تک کوئی احکامات جاری نہیں ہوئے تاہم ہاسٹلس کی نگرانی کرنا بورڈ کی ذمہ داری ہے۔ ہاسٹلس کیلئے منظوری حاصل نہ کرنے پر کالجس کی اہلیت ختم کردینے کا انتباہ دیا۔

TOPPOPULARRECENT