Friday , February 23 2018
Home / کھیل کی خبریں / انڈر 17 ورلڈ کپ ٹکٹوں کی قیمت 100 روپئے سے بھی کم

انڈر 17 ورلڈ کپ ٹکٹوں کی قیمت 100 روپئے سے بھی کم

کولکتہ 23 فروری (سیاست ڈاٹ کام) فٹبال کے شائقین کے لئے ہندوستان میں پہلی مرتبہ ورلڈکپ کے مقابلوں کا میدان میں راست مشاہدہ کرنا اب مشکل نہیں کیوں کہ انڈر 17 فیفا ورلڈکپ کی ٹکٹوں کی قیمت 100 روپئے سے بھی کم رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ ٹورنمنٹ کے ڈائرکٹر جیویر سیپی نے میڈیا نمائندوں سے یہاں اظہار خیال کرتے ہوئے کہاکہ فٹبال شائقین کے لئے مجوزہ ورلڈکپ سستا اور کفایتی ہوگا اور یہ فلم کی ٹکٹوں سے بھی کم ہوگا جیسا کہ انتظامیہ نے فیصلہ کیا ہے کہ ٹکٹوں کی قیمت 100 روپئے سے بھی کم رہے گی۔ دریں اثناء انھوں نے یہ انکشاف نہیں کیاکہ ٹکٹوں کی اصل میں قیمت کیا ہوگی۔ انھوں نے مزید کہاکہ یہ ہمارے لئے پہلا ورلڈکپ ہے اور ہم اس کے کامیاب انعقاد کے ساتھ اپنی صلاحیت اور اہلیت کو ثابت کرنا چاہتے ہیں۔ جیویر کے بموجب ہندوستان ایک عرصہ سے اِس لمحہ کا انتظار کررہا تھا اور اسے ورلڈکپ کی میزبانی ملے اور اسے بہتر انداز میں منعقد کرے۔ ٹورنمنٹ کے ڈائرکٹر نے سالٹ لیک اسٹیڈیم کی تزئین نو شاندار انداز میں ہونے پر کافی متاثر نظر آئے اور انھوں نے کہاکہ مارچ کے آخری ہفتہ میں جب میدان کا حتمی جائزہ لیا جائے گا تب تک 90 فیصد تعمیراتی کام مکمل ہوجائے گا۔ جیویر نے کہاکہ ہم یہاں کی تیاریوں سے کافی مطمئن ہیں۔ جیویر نے اِن افواہوں کو بھی مسترد کردیا جس میں کہا گیا تھا کہ دیوالی کے بعد فضائی آلودگی کی وجہ سے ورلڈکپ کے مقابلے دہلی سے منتقل کردیئے جائیں گے جس پر انھوں نے کہاکہ دہلی کی میزبانی میں ردوبدل کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔ رواں برس دیوالی 19 اکٹوبر کو منائی جائے گی اور اِس کا دہلی کی میزبانی سے کوئی تعلق نہیں ہے۔

Top Stories

مولانا آزاد کی برسی پر تقریب کا انعقاد دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی‘ صدر جمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی اور نائب صدر جمہوریہ نے اپنا پیغام بھیجا نئی دہلی۔آزادہندو ستا ن کے پہلے وزیر اتعلیم مولانا آزاد کے ساٹھ ویں یوم وفات کے موقع پر آج ان کے مزار واقع مینابازار میں ایک تقریب کا انعقاد ائی سی سی آر کی جانب سے کیاگیا۔افسوس کی بات یہ رہی کہ اس مرتبہ بھی مولانا آزاد کی وفات کے موقع پر دہلی ومرکزی حکومت کی جانب سے کسی بڑے لیڈران نے شرکت نہیں کی۔ چونکہ جامع مسجد پر کناڈہ کے وزیراعظم کو آناتھا اس لئے تقریب کو بہت مختصر کردیا گیاتھا۔ اس دوران صدرجمہوریہ ہند کی جانب سے ان کی مزار پر گل پوشی کی گئی او رنائب صدر جمہوریہ ہند نے اپنا پیغام بھیجا۔ ائی سی سی آر کے ڈائریکٹر نے مولانا آزاد کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہاکہ جہاں تک مولانا آزاد کا تعلق ہے اور انہوں نے جو خدمات انجام دیں انہیں فراموش نہیں کیاجاسکتا۔ ہندو مسلم میں اتحاد قائم کیااس کی مثال ملنا مشکل ہے انہوں نے بھائی چارہ کوفروغ دیا۔ انٹر فیتھ ہارمنی فاونڈیشن آف انڈیاکے چیرمن خواجہ افتخار احمد نے کہاکہ مولانا آزاد نے لڑکیوں کی تعلیم پر بہت زیادہ توجہ دی۔ جب حکومت قائم ہونے کے بعد قلمدان کی تقسیم ہونے لگے تو مولانا آزاد نے تعلیم کا قلمدان لیاتاکہ لڑکیو ں کی تعلیم پر خاص دھیان دیاجاسکے۔ خاص طور سے مسلم لڑکیو ں کی تعلیم پر زیادہ دھیان دیاجائے۔کیونکہ مسلم لڑکیو ں کو پڑھنے کے زیادہ مواقع نہیں مل پاتے ۔ معروف سماجی کارکن فیروز بخت احمد مولانا سے منسوب ایک پروگرام میں پونے گئے ہوئے تھے۔ انہوں نے نمائندہ کو فون پر بتایا کہ مولانا آزاد کی تعلیمات کو قوم نے بھلادیا ہے۔ آج تک ان جیسا لیڈر پیدا نہیں ہوسکا اور افسوس کی بات ہے کہ مولانا آزاد کی برسی یا یوم پیدائش کے موقع پر دہلی یامرکزی حکومت کی جانب سے کوئی بڑا لیڈر شریک نہیں ہوتا۔ ایسا معلوم ہوتا کہ حکومت نے مولانا آزاد کو بھلادیا ہے۔ اس دوران سی سی ائی آر کی ایک کمار مولانا ابولکلام آزاد فاونڈیشن کے چیرمن عمران خان سمیت کافی لوگ موجود تھے۔
TOPPOPULARRECENT