Wednesday , May 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اوقافی اراضی کو غیر اوقافی قرار دینے کا اسکام

اوقافی اراضی کو غیر اوقافی قرار دینے کا اسکام

سی بی سی آئی ڈی کے ذریعہ جلد تحقیقات کا آغاز
چیف ایگزیکیٹیو آفیسر حکومت کو مکتوب روانہ کرینگے۔ چیف منسٹر کے دفتر نے رپورٹ طلب کی

حیدرآباد ۔ 14 ۔ مئی (سیاست نیوز) ملکاجگیری میں درگاہ حضرت میر محمود پہاڑی کی اوقافی اراضی کو غیر اوقافی قرار دینے کیلئے بھاری رشوت کے اسکام کی تحقیقات کا سی بی سی آئی ڈی جلد آغاز کرے گی۔ وقف بورڈ میں منظورہ قرار داد کے مطابق چیف اگزیکیٹیو آفیسر شاہنواز قاسم آئی پی ایس حکومت کو مکتوب روانہ کر رہے ہیں۔ حکومت سے خواہش کی جائے گی کہ معاملہ کی سنگینی کو دیکھتے ہوئے جلد تحقیقات کی تکمیل کو یقینی بنایا جائے ۔ باوثوق ذرائع نے بتایا کہ حکومت اس معاملہ میں سنجیدہ ہے اور چیف منسٹر کے دفتر کی جانب سے رپورٹ طلب کی گئی ہے۔ حکومت کے مشیر اے کے خاں نے چیف منسٹر آفس کو تفصیلات سے واقف کرایا اور وہ سی بی سی آئی ڈی تحقیقات کے سلسلہ میں پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں سے ربط میں ہیں ۔ بتایا جاتا ہے کہ عابڈ پولیس اسٹیشن میں جاری تحقیقات کی فائل سی بی سی آئی ڈی کے حوالے کردی جائے گی کیونکہ ایک ہی معاملہ میں پولیس کے دو ادارے متوازی تحقیقات نہیں کرسکتے۔ ذرائع کے مطابق صدرنشین وقف بورڈ کو مقامی افراد نے جو فائل حوالے کی ہے ، وہ بھی سی بی سی آئی ڈی کو پہنچادی جائے گی۔ تحقیقاتی ایجنسی سے خواہش کی جائے گی کہ وہ این او سی اور رشوت ستانی کے علاوہ اس سے مربوط دیگر تمام معاملات کو تحقیقات کے دائرہ میں شامل کریں۔ جن افراد نے صدرنشین وقف بورڈ کے روبرو رشوت کی ادائیگی کا اعتراف کیا تھا۔ ان کا پتہ چلاکر بیانات قلمبند کئے جائیں گے۔ ذرائع کے مطابق ان افراد کا پتہ چلانا کوئی مشکل کام نہیں ہے کیونکہ فائل پر ان کے نام اور ایڈریس درج ہے۔ تحقیقاتی ایجنسی صدرنشین وقف بورڈ کے علاوہ 4 وقف بورڈ ملازمین کے بیانات بھی ریکارڈ کرسکتے ہے جو مقامی افراد کی آمد کے گواہ ہیں۔ اس بات کی تحقیقات کی جائے گی کہ آیا نکا نرسنگ راؤ نامی شخص کا وجود ہے یا پھر فرضی نام سے این او سی حاصل کی گئی ۔ مئی 2017 ء میں این او سی جاری کی گئی تھی لیکن اس کا انکشاف نومبر میں ہوا جب روزنامہ سیاست نے 24 نومبر کو این او سی کی نقل کے ساتھ خبر شائع کی۔

TOPPOPULARRECENT