Monday , July 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اوقافی جائیدادوں کا تحفظ اور آمدنی میں اضافہ اولین ترجیح

اوقافی جائیدادوں کا تحفظ اور آمدنی میں اضافہ اولین ترجیح

شاہنواز قاسم کا وقف انسپکٹرس کے ساتھ اجلاس، اضلاع میں درپیش مسائل کی سماعت
حیدرآباد ۔ 5 ۔اپریل (سیاست نیوز) ڈائرکٹر اقلیتی بہبود اور چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ شاہنواز قاسم آئی پی ایس نے اوقافی جائیدادوں کے تحفظ اور بورڈ کی آمدنی میں اضافہ کے سلسلہ میں وقف انسپکٹرس اور بورڈ کے عہدیداروں کے ساتھ اجلاس منعقد کیا ۔ شہر اور اضلاع سے تعلق رکھنے والے وقف انسپکٹرس نے جائزہ اجلاس میں شرکت کی اور اپنے اپنے ضلع میں اوقافی جائیدادوں کے موقف سے آگاہ کیا ۔ شاہنواز قاسم نے وقف انسپکٹرس کے مسائل کی سماعت کی اور کہا کہ وقف بورڈ انہیں تمام درکار سہولتیں فراہم کرے گا تاکہ اوقافی جائیدادوں کا تحفظ کیا جاسکے۔ انہوں نے کہا کہ جائیدادوں کے تحفظ کے علاوہ بورڈ کی آمدنی میں اضافہ ان کی ترجیحات میں شامل ہیں۔ وقف انسپکٹرس کی اہلیت اور دیگر محکمہ جات کی جانب سے نمائندگی کے طریقہ کار کے بارے میں شاہنواز قاسم نے تفصیلات حاصل کی ۔ اس موقع پر وقف انسپکٹرس نے شہر اور اضلاع میں درپیش مسائل سے واقف کرایا ۔ ان کا کہنا تھا کہ وقف انسپکٹرس کے لئے اضلاع میں سہولتوں کی کمی ہے۔ ہر ضلع کے لئے ایک انسپکٹر کافی نہیں۔ انسپکٹر کے تحت مختلف کام ہوتے ہیں، جن میں بعض تحقیقاتی رپورٹس کی تیاری شامل ہیں۔ ایسے میں وقف انسپکٹر کے لئے علحدہ آفس اور گاڑی کی ضرورت ہے۔ شاہنواز قاسم نے تمام مسائل کی سماعت کی اور تیقن دیا کہ وہ جلد از جلد حل تلاش کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ بعض شکایات جائز ہیں، جن پر فوری توجہ دی جائے گی۔ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے سلسلہ میں وقف انسپکٹرس کا اہم رول ہے، انہیں ہیڈ آفس سے بھی مکمل تعاون ملنا چاہئے ۔ شاہنواز قاسم نے بتایا کہ ہر ماہ وقف انسپکٹرس کا اجلاس طلب کیا جائے گا اور پروگریس رپورٹ تیار کی جائے گی ۔ وقف انسپکٹرس کو ایکشن پلان حوالے کیا جائے گا اور ان پر عمل آوری کی وقتاً فوقتاً جانچ کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ریاست بھر میں اوقافی جائیدادوں کی آمدنی میں اضافہ کیلئے اقدامات کئے جائیں گے ۔ اس سلسلہ میں وقف انسپکٹرس اور عہدیداروں سے تجاویز حاصل کی گئی ہے۔ عوامی مسائل کی سماعت کے سلسلہ میں ہر پیر کے دن وقف اور دیگر اداروں کے سلسلہ میں عوامی مسائل کی سماعت کی جائے گی ۔ انہوں نے کہا کہ شخصی طور پر مسائل کی سماعت کریں گے یا پھر کسی عہدیدار کو مقرر کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ عوام سے بہتر رابطے کیلئے انہوں نے عوامی سماعت کا فیصلہ کیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT