Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / اوقافی جائیدادوں کا غیر مجاز رجسٹریشن منسوخ کیا جائے گا

اوقافی جائیدادوں کا غیر مجاز رجسٹریشن منسوخ کیا جائے گا

وقف جائیدادیں بورڈ کے حوالے کرنے کا عزم ، ڈپٹی چیف منسٹر محمد محمود علی کی ہدایت
حیدرآباد۔11 اگست (سیاست نیوز) ڈپٹی چیف منسٹر و وزیر مال محمد محمود علی نے اعلان کیا کہ جہاں کہیں بھی اوقافی جائیدادوں کا غیر مجاز رجسٹریشن کیا گیا ہے، انہیں منسوخ کردیا جائے گا اور یہ جائیدادیں وقف بورڈ کے حوالے کردی جائیں گی۔ چیف منسٹر کے چندر شیکھر رائو نے اوقافی جائیدادوں کو وقف بورڈ کے حوالے کرنے کا تیقن دیا ہے اور اس سلسلہ میں محکمہ مال نے حالیہ عرصہ میں تین اوقافی جائیدادوں کے غیر قانونی رجسٹریشن کو منسوخ کردیا ہے۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے وقف بورڈ کو ہدایت دی کہ وہ اوقافی جائیدادوں کے غیر قانونی رجسٹریشن کی تفصیلات کے ساتھ ان سے رجوع ہوں تاکہ محکمہ اسٹامپ اینڈ رجسٹریشن کے حکام کو ہدایت دی جاسکے۔ میڈیا کے نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ بہت جلد حیدرآباد و رنگاریڈی کے ضلع کلکٹرس اور دیگر عہدیداروں کے ساتھ اجلاس طلب کیا جائے گا جس میں اوقافی جائیدادوں اور ان پر غیر مجاز قبضوں کی نشاندہی کی جائے گی۔ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کے سلسلہ میں وقف بورڈ کی مساعی کو مستحکم کرنے کے لیے ڈپٹی چیف منسٹر نے محکمہ مال سے مکمل تعاون کا یقین دلایا۔ انہوں نے وقف بورڈ کو ہدایت دی کہ وہ حیدرآباد و رنگاریڈی میں موجود اوقافی جائیدادوں اور اراضیات کی فہرست تیار کریں جس میں غیر مجاز قبضوں کی بھی وضاحت کی جائے۔ انہوں نے کہا کہ دونوں اضلاع کے ضلع کلکٹرس کو یہ تفصیلات پیش کرتے ہوئے ان کے تحفظ کی خواہش کی جائے گی۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ حیدرآباد و رنگاریڈی میں وقف اراضیات کے تنازعات زیادہ ہیں لہٰذا وقف بورڈ کو اپنے ریکارڈ کے ساتھ اجلاس میں شرکت کرنی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ جہاں کہیں بھی غیر مجاز قبضے ثابت ہوں گے انہیں برخاست کیا جائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ چیف منسٹر ریاست بھر میں اراضیات کے سروے کے سلسلہ میں سنجیدہ ہیں اور تمام اضلاع میں محکمہ مال کی جانب سے سروے کا آغاز کیا جارہا ہے۔ 1930ء میں آخری مرتبہ سروے کیا گیا تھا، 57 سال بعد سروے کی ہدایت دی گئی جس میں اراضیات کی نشاندہی کی جائے گی۔ اس سروے میں بودھان وقف اور دیگر اراضیات کی بھی نشاندہی ہوسکتی ہے۔ یکم جنوری تک یہ سروے مکمل کرلیا جائے گا۔ انہوں نے محکمہ اقلیتی بہبود کو ہدایت دی کہ پہاڑی شریف کے قریب واقع 50 ایکڑ اراضی کو وقف بورڈ کے حق میں کرنے کے لیے کاغذی کارروائی کریں۔ راج شیکھر ریڈی حکومت نے ایرپورٹ کی تعمیر میں اوقافی اراضی کے استعمال کے بعد 50 ایکڑ اراضی فراہم کی تھی۔ لیکن آج تک وقف بورڈ کے نام پر اس کا میوٹیشن نہیں کرایا گیا جس سے اراضی پر ناجائز قبضے کا خطرہ منڈلا رہا ہے۔ سکریٹری اقلیتی بہبود نے میوٹیشن نہ ہونے کا اعتراف کیا اور کہا کہ اس سلسلہ میں جلد ہی کارروائی کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ انیس الغربا کے نئے ہمہ منزلہ کامپلکس کی تعمیر کے لیے سوائل ٹسٹنگ کا کام جاری ہے اور جلد ہی تعمیری کام شروع ہوجائے گا۔ ڈپٹی چیف منسٹر نے کہا کہ جس اراضی پر اسلامی سنٹرس کی تعمیر کا فیصلہ کیا گیا تھا، اس کا معاملہ عدالت میں زیر دوران ہے۔ عمر جلیل نے بتایا کہ مکہ مسجد کی چھت کی مرمت کے سلسلہ میں 8 کروڑ 48 لاکھ روپئے مختص کئے گئے تھے اور محکمہ آثار قدیمہ نے کام کے سلسلہ میں ٹینڈرس کو قطعیت دے دی ہے۔ بارش کے ساتھ ہی تعمیری کام کا آغاز ہوگا۔ جامعہ نظامیہ میں آڈیٹوریم کی تعمیر کے لیے 14 کروڑ 65 لاکھ روپئے مختص کئے گئے اور 3 کروڑ 24 لاکھ روپئے خرچ کئے جاچکے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT